21 کسٹم کلیئرنگ ایجنٹس کی درخواست ضمانت منظور

21 کسٹم کلیئرنگ ایجنٹس کی درخواست ضمانت منظور

  

پشاور(نیوز رپورٹر)عدالت عالیہ کے جسٹس اعجاز انور نے طورخم کسٹمز سٹیشن پرمبینہ طور پرجعلی سرٹیفیکیٹس کے ذریعے پھلوں کی سپلائی کیلئے کلیئرنس دینے اور ڈیوٹی اور ٹیکس کی مد میں قومی خزانے کو کروڑوں روپے کا نقصان پہنچانے کے الزام میں گرفتار21کسٹم کلیئرنگ ایجنٹس کی درخواست ضمانت منظور کرلی فاضل جسٹس نے مجیب اللہ ودیگر 20درخواست گزاروں کی رٹ پر سماعت کی کسٹم کورٹ پشاور نے ان ملزمان کی ضمانت قبل ازگرفتاری منسوخ کردی تھی جسکے بعد انہیں گرفتار کیا گیاافغانستان سے سیب کی درآمد مبینہ طورپرجعلی سرٹیفیکیٹس کے ذریعے ہونے پر کلکٹوریٹ آف کسٹمزپشاور نے 21کسٹم کلیئرنگ ایجنٹس اور چھ امپورٹرز کے خلاف سیکشن 32Aآف دی کسٹم ایکٹ کے تحت مقدمہ درج کیا اورالزام لگایا گیا کہ ان ایجنٹس کیوجہ سے طورخم کسٹم سٹیشن پر تین ماہ کے دوران ڈیوٹی اور ٹیکسز میں رعایت دینے پرکروڑوں کا نقصان پہنچایاگیا ملزمان پر الزام ہے کہ بڑی مقدار میں تازہ پھلوں کی سپلائی کیلئے طورخم پر پیش کیے گئے سرٹیفکیٹس کی تصدیق نہ ہوسکی افغانستان کیساتھ تجارت کو فروغ دینے کیلئے بعض اشیاء پرکسٹم ڈیوٹی میں رعایت دی گئی اور تازہ پھلوں کی درآمدکیلئے کسٹم کو سرٹیفیکیٹ آف اوریجن پیش کیاجاتا ہے جو افغان چیمبرآف کامرس ایکسپورٹ پروموشن ڈیپارٹمنٹ جاری کرتا ہے تاہم سات نومبر 2019کو کسٹم حکام نے جولائی 2018سے اب تک جاری ان سرٹیفیکیٹس کی تصدیق کا حکم دیااورتصدیق کا مرحلہ مکمل کرنے پر رپورٹ افغان کسٹم کو بھجوائی گئی افغان حکام نے قراردیا کہ ان میں سے 361سرٹیفیکیٹس انہو ں نے جاری نہیں کیے جس پر کسٹم حکام نے اس معاملے کو ایف بی آربھی رپورٹ کیا سنگل رکنی بنچ نے درخواست پر دلائل مکمل ہونے کے بعد ملزمان کو ضمانت پر رہا کرنے کا حکم دے دیا۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -