سرائیکی وسیب مسائل سے دوچار، حکومتی ادارے ارکان اسمبلی کہاں ہیں، ظہوردھریجہ

    سرائیکی وسیب مسائل سے دوچار، حکومتی ادارے ارکان اسمبلی کہاں ہیں، ...

  

ملتان (سٹی رپورٹر)کراچی میں صفائی کے مسئلے پر مختلف ادارے طلب کئے جا سکتے ہیں تو سرائیکی صوبے کے مسئلے پر ہنگامی اقدامات کیوں نہیں ہو سکتے؟ ان خیالات کا اظہار سرائیکستان قومی کونسل کے صدر ظہور دھریجہ نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ تقریب کا اہتمام سرائیکستان یوتھ کونسل اور دھریجہ ادبی اکیڈمی نے شمع بناسپتی اور WIZواش بنانے والے(بقیہ نمبر1صفحہ6پر)

 ادارے حفیظ گھی اینڈ جنرل ملز کی طرف سے کیا۔ مہمان خصوصی ممبر صوبائی اسمبلی میاں شفیق محمد تھے۔ صدارت معروف سرائیکی شاعر صوفی نجیب اللہ نازش اور امان اللہ ارشد نے کی۔ تقریب میں سرائیکی فلمسٹار اکرم نظامی، تاج گل خان، معروف سنگر اجمل ساجد سمیت سینکڑوں افراد نے شرکت کی۔شمع بناسپتی کے چیف ایگزیکٹو شیخ احسن رشید نے اپنے پیغام میں کہا کہ ہمارا ادارہ ادبی، ثقافتی اور تفریحی سرگرمیوں کے فروغ کیلئے تعاون کرتا رہے گا۔ ظہور دھریجہ نے اپنے خطاب میں کہا کہ کراچی شہر کی صفائی کا مسئلہ درپیش ہوا تو فوج طلب کر لی گئی اور میڈیا بھی دن رات اس مسئلے کو اجاگر کرنے میں لگا ہوا ہے جبکہ سرائیکی وسیب میں لوگ مر رہے ہیں،پورا سرائیکی وسیب فلتھ ڈپو بنا ہوا ہے،سڑکیں کھنڈرات بن چکی ہیں،بے روزگاری سے لوگ خودکشیاں کر رہے ہیں،حکومت کو کوئی پرواہ نہیں، انہوں نے کہا کہ پورے شہر کھلے ہیں، کشمیر کی ریلیاں بھی نکل رہی ہیں، پولیس حرکت میں نہیں آتی مگر سرائیکی وسیب کے حوالے سے کوئی تقریب ہو تو فوری قانون یاد آجاتا ہے اور وہ بلا جواز طور پر منتظمین کو تنگ کرتی ہے۔ حکام بالا کو اس کا نوٹس لینا چاہئے اور دو نہیں ایک قانون کا نفاذ ہونا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ سرائیکی وسیب کے لوگ عرصہ پچاس سال سے صوبہ سرائیکستان کیلئے جدوجہد کر رہے ہیں،وعدے کے باوجود صوبہ نہیں بنایا جارہا،لولی پاپ دئیے جا رہے ہیں،وسیب میں تفریق پیدا کی جارہی ہے،لوگوں کو ایک دوسرے سے لڑانے کی سازشیں ہو رہی ہیں،،مگر ہم ان تمام سازشوں کامقابلہ کریں گے اور اپنا حق صوبہ سرائیکستان لیں گے۔ تقریب میں سرائیکی فلم ڈائریکٹر احسن فریدی، عالمی شہرت یافتہ سرائیکی فلمسٹار اکرم نظامی،تاج گل خان،اجمل ساجد،شفیق تبسم،اکبر بدلی،شیرمحمد سامٹیہ،خالد خان گورگیج،احمدیارخان کورائی،محمد ارشدودیگر مہمانوں نے کہا کہ سرائیکی زبان و ادب کے فروغ اور صوبے کے قیام کیلئے شاعروں،ادیبوں اور فنکاروں کی خدمات کو فراموش نہیں کیا جاسکتا، دھریجہ نگر سرائیکستان کا مضبوط قلعہ ہے،یہاں کا ہر نوجوان سوشل میڈیا کے ذریعے وسیب کے حقوق کی جنگ لڑ رہا ہے،تقریب میں وسیب کے معروف شعراء خادم حسین مخفی،خلیل فریدی،عبدالرزاق واجد،ارشاد ناصر،فیض احمدآسیر،عبدالستار زائر،رفیق احمد رفیق،حکیم ایم ایچ پاندھی،خلیل بے رنگ،شبیر بے رنگ،تنویر شاد،شبیر طاہرحمایتی،جوہر لنجوانی،کلیم احمد کلیم،عمر فاروق،فیصل فیضی،رفیق ساحل،اصغر بھٹی،دلبر بلوچ،رمضان رامز،کامران اسلم،خالد نجیب ودیگر شعراء نے اپنا کلام سنایا۔سرائیکی گلوکارلطافت حسین،قمر نواز چھینہ،اظہار عباس،خالد بھٹی،میڈیم صباء،رفیق ساحل،اظہار عباس،منصور نیازی ودیگر گلوکاروں نے اپنے فن کا مظاہرہ کیا۔ اس موقع پر ڈیرہ غازیخان کی حنیف خان گبول سرائیکی جھمر پارٹی نے اپنے رنگ بکھیرے۔  نظامت کے فرائض آصف دھریجہ اور شاہد دھریجہ نے سرانجام دئیے۔تقریب میں سٹیج کی دنیا کے فلمسٹار صوفی نجیب اللہ نازش، میر اسلم حیات،یٰسین سانول،حنیف خان گبول،مظہر سعید گوپانگ، ممتازبلوچ،واحدبخش گبول،ڈاکٹر شفیق احمد،ماسٹر صادق حسین،ماسٹر رضوان،خواجہ عبدالسمیع،خواجہ عبدالوسیع،قاضی راحت سمیت سینکڑوں افراد نے شرکت کی۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -