وزیر اعلیٰ کے پرنسپل سیکرٹری محمد خان بھٹی کی تعیناتی ہائیکورٹ میں چیلنج 

وزیر اعلیٰ کے پرنسپل سیکرٹری محمد خان بھٹی کی تعیناتی ہائیکورٹ میں چیلنج 

  

 لاہور(نامہ نگارخصوصی)وزیر اعلیٰ پنجاب کے پرنسپل سیکرٹری محمد خان بھٹی کی تعیناتی کولاہور ہائی کورٹ میں چیلنج کردیاگیا درخواست گزار وکیل میاں داؤد ایڈووکیٹ کی جانب سے موقف اختیارکیا گیاہے کہ پرنسپل سیکرٹری برائے وزیر اعلیٰ پنجاب کی تعیناتی آئین و قانون کے خلاف ہے پرنسپل سیکرٹری وزیر اعلیٰ کی تعیناتی میں بدنیتی کو بھی بنیاد بنایا گیا ہے، قانون کے مطابق ایک سروس کیڈر کا افسر دوسرے سروس کیڈر میں تعینات نہیں کیا جا سکتا، محمد خان بھٹی کی بطور پرنسپل سیکرٹری تعیناتی کے دو نوٹیفکیشن جاری کئے گئے، ٹرانسفر پوسٹنگ کا پہلا سادہ نوٹیفکیشن، دوسرا نوٹیفکیشن ڈیپوٹیشن پر تعیناتی کا کیا گیا، دونوں نوٹیفکیشن چودھری پرویز الہی کے بطور وزیر اعلی پنجاب حلف اٹھانے سے پہلے ہی جاری کئے گئے، قانون کے مطابق ڈیپوٹیشن پر بھی ایک سروس کیڈر بدل کر دوسرے سروس کیڈر میں تعیناتی پر پابندی ہے، پرنسپل سیکرٹری کی آسامی ایس اینڈ جی اے ڈی کا کیڈر ہے، پرنسپل سیکرٹری کی آسامی پر صرف سول سروس یا پی ایم ایس سروس کا افسر تعینات ہو سکتا ہے، ایک غیر تعلیم یافتہ شخص کو انتہائی پڑھے لکھے سرکاری افسران کا سربراہ لگا دیا گیا ہے،، ایوان وزیر اعلی کے دباؤ پر بیوروکریٹس کے تبادلے کروائے جا رہے ہیں، سپریم کورٹ ڈیپوٹیشن پر ایک کیڈر کے افسر کی دوسرے کیڈر میں تعیناتی کے غیرآئینی ہونے کا اصول طے کر چکی ہے، عدالت سے استدعاہے کہ پرنسپل سیکرٹری برائے وزیر اعلی پنجاب محمد خان بھٹی کی تعیناتی کوکالعدم قرار دیاجائے۔

چیلنج

مزید :

صفحہ آخر -