پی ٹی آئی ارکان کی خالی نشستوں پر ضمنی  انتخابات 25ستمبر کوہوں گے، عمران خان کا قومی اسمبلی کے 9حلقوں سے خود ضمنی الیکشن لڑنے کا اعلان 

  پی ٹی آئی ارکان کی خالی نشستوں پر ضمنی  انتخابات 25ستمبر کوہوں گے، عمران خان ...

  

      اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ9 حلقوں سے خود ضمنی الیکشن لڑ ونگا،  آئندہ بھی جن سیٹوں پر انتخابات کرائے گئے پچھلی نشستیں چھوڑ کر انتخابات میں حصہ لوں گا، عام انتخابات 2022میں ہی ہوں گے، حکومت اس سال انتخابات پر تیار تھی، پنجاب کے ضمنی انتخابات کے بعد گھبرا گئی، فوج کے اندر سب سے بہتر افسر کو آرمی چیف لگانا چاہیے۔  صحافیوں  و اینکرپرسنزسے گفتگو کرتے ہوئے عمراان خان کا کہنا تھا کہ مجھے نااہل نہیں کیاجا سکتا، الیکشن کمیشن کو فیصلہ کہیں اور سے دیا گیا، فنڈ ریزنگ کی حوصلہ شکنی ہوگی تو لوگ مافیا سے فنڈ زلیں گے۔انہوں نے کہا  میرے لیے پنجاب حکومت نہیں الیکشن اہم ہیں، کتنا بڑا ظلم ہے کہ آرمی چیف کی تقرری پر ملک رکا ہوا ہے۔ فوج کے اندر سب سے بہتر افسر کو آرمی چیف لگانا چاہیے۔عمران خان نے کہا کہ نوازشریف واپس نہیں آئے گا کیونکہ اس کا پلان خراب ہوگیا ہے۔ ایک سوال پر  عمران خان نے کہا ہے کہ میرے دور اقتدار میں 2 بڑی غلطیاں ہوئی پہلی ابھی نہیں بتاؤں گا دوسری غلطی یہ تھی کہ سکندر سلطان کو چیف الیکشن کمشنر بنایا۔ عمران خان نے کہا کہ دلوں میں بسنے والے لیڈر کو ختم نہیں کر سکتے بھٹو کو پھانسی کے باوجود کوئی ختم نہیں کر سکا۔چیئرمین پی ٹی  آئی نے انکشاف کیا کہ ماضی میں 2 غیرملکی حکومتوں نے فنڈنگ کی پیشکش کی جو ٹھکرادی۔عمران خان نے 25 ستمبر کو قومی اسمبلی کے 9 حلقوں میں ہونے والے ضمنی انتخابات میں خود الیکشن لڑنے کا فیصلہ کرتے ہوئے کہا کہ الیکشن رواں سال ہوں گے یہ لوگ مجھے سنگل آؤٹ کرنا چاہتے ہیں اور سمجھتے ہیں مجھے نااہل کرالیں گے لیکن میں ان کے خواب کبھی پورے نہیں ہوں گے میں موجودہ حکمرانوں کا ہر میدان میں مقابلہ کروں گا۔ عمران خان سے پنجاب کے تاجروں نے اتوار کی چھٹی اور کاروبار کیلئے وقت کی پابندی ختم کرنے کی درخواست کردی۔ عمران خان سے تاجروں کے وفد نے بنی گالہ میں ملاقات ہوئی۔عمران خان نے تاجر برادری کے مسائل حل کرنے کی یقین دہانی کراتے ہوئے کہا کہ پنجاب حکومت صوبے میں تاجر برادری کی ہر ممکن مدد کو یقینی بنائے گی۔انہوں نے کہا کہ تاجر برادری کا ملکی معیشت میں اہم رول ہے، تحریک انصاف کی اولین ترجیح تاجر برادری کے مسائل حل کرنا ہے۔دوسری جانب ٹوئٹر بیان میں عمران خان نے کہا  ہے کہ بھارتی مظالم کے باوجود کشمیریوں کی جدو جہد آزادی مضبوط ہو چکی ہے اور ہر گزرتے دن کے ساتھ مستحکم ہوتی جا رہی ہے۔5 اگست 2019 کو مودی سرکار نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں اور بین الاقوامی قوانین کی خلاف ورزی کرتے ہوئے مقبوضہ کشمیر کا خصوصی درجہ ختم کر دیا، اس کے بعد مودی حکومت نے چوتھے جنیوا کنونشن کی خلاف ورزی کرتے ہوئے جنگی جرائم کا ارتکاب کیا اور مقبوضہ جموں کشمیر کی ڈیموگرافی تبدیل کر دی، انہوں نے سوچا کہ اس طرح کرنے سے کشمیریوں کی جدو جہد آزادی کے جذبے کو دبایا جا سکے گا۔

عمران خان

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) پاکستان تحریک انصاف نے اعلان کیا ہے کہ سابق وزیراعظم عمران خان قومی اسمبلی کے 9 حلقوں میں 25 ستمبر کو ہونے والے ضمنی انتخابات میں تمام حلقوں سے حصہ لیں گے۔سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر جاری اعلامیے میں کہا گیا کہ 25 ستمبر کو ہونے والے 9 قومی اسمبلی کے حلقوں کے ضمنی انتخابات میں تمام سیٹوں سے چئیرمین عمران خان خود الیکشن لڑیں گے۔قبل ازیں الیکشن کمیشن نے پی ٹی آئی کے مستعفی اراکین قومی اسمبلی کی خالی نشستوں پر 25 ستمبر کو ضمنی انتخابات کے لیے شیڈول جاری کردیا تھا۔الیکشن کمیشن کی جانب سے جاری شیڈول میں کہا گیا ہے کہ قومی اسمبلی کی خالی 9 نشستوں پر براہ راست ضمنی انتخابات 25 ستمبر کو ہوں گے۔شیڈول کے مطابق امیدواران کاغذات نامزدگی 10 اگست سے 13 اگست تک جمع کروا سکتے ہیں، کاغذات کی جانچ پڑتال 17 اگست کو کی جائے گی۔شیڈول کے مطابق نامزد امیدواروں کی فہرست 14 اگست کو جاری کی جائے گی اور 17 اگست کو اسکروٹنی ہوگی، ریٹرننگ افسر کے فیصلے کے خلاف اپیل 20 اگست تک جمع کرائی جاسکتی ہیں اور 25 اگست اپیلیٹ ٹربیونل میں فیصلہ ہوگا۔امیدواروں کی نظر ثانی فہرست 26 اگست کو جاری ہوگی جس کے بعد امیدوار اپنے کاغذات نامزدگی 27 اگست تک واپس لے سکتے ہیں۔امیدواروں کی حتمی فہرست 29 اگست تک جاری کی جائے گی اور انتخابی نشان بھی 29 اگست کو الاٹ کیے جائیں گے۔قبل ازیں الیکشن کمیشن نے قو می اسمبلی کے اسپیکر کی جانب سے پی ٹی آئی کے 11 اراکین کے استعفے منظور کرنے کے بعد جاری کیے گئے نوٹی فکیشن پر انہیں دی نوٹیفائی کردیا تھا۔الیکشن کمیشن کی جانب سے جاری نوٹی فکیشن میں کہا گیا تھا کہ قومی اسمبلی کے اسپیکر کی جانب سے استعفے منظور کرنے اور اس حوالے سے 28 جولائی کو جاری نوٹی فکیشن پر الیکشن کمیشن نے مذکورہ اراکین قومی اسمبلی کو ڈی نوٹیفائی کردیا ہے۔پی ٹی آئی کی جنرل نشست پر 9 اور خواتین کی 2 مخصوص نشستوں پر اراکین کو ڈی نوٹیفائی کیا گیا اور مجموعی طور پر 11 نشستوں کو خالی قرار دے دیا گیا ہے۔خیال رہے کہ قومی اسمبلی کے اسپیکر راجا پرویز اشرف نے اس سے ایک روز قبل پی ٹی آئی کے 11 اراکین کے استعفے منظور کرنے کے بعد نوٹی فکیشن الیکشن کمیشن کو ارسال کردیا تھا۔قومی اسمبلی کے ترجمان نے کہا تھا کہ اسپیکر قومی اسمبلی نے آئین پاکستان کی آرٹیکل 64 کی شق (1) کے تحت تفویص اختیارات کو بروئے کار لاتے ہوئے استعفے منظور کیے ہیں۔۔ضمنی انتخاب این اے 22 مردان 3، این اے24چارسدہ 2، این اے 31پشاور5، این اے 45کرم 1، این اے 108 فیصل آباد، این اے 118 ننکانہ صاحب 2، این اے 237 ملیر 2، این اے 239 کراچی 1 اور این اے 246 کراچی جنوبی 1 میں ہوگا۔ دوسری طرفپاکستان پیپلز پارٹی نے قومی اسمبلی کی نو نشستوں پر ضمنی انتخابات کے لیے درخواستیں طلب کرلی ہیں جو استعفوں کی وجہ سے خالی ہوئی تھیں اور جس کے لیے الیکشن کمیشن نے بدھ 10 اگست سے کاغذات نامزدگی داخل کرنے کی دعوت دی ہے۔۔پی پی پی پی کے سیکرٹری جنرل فرحت اللہ بابر نے کہا کہ پارٹی ٹکٹ کے خواہش مند امیدوار اپنی درخواستیں صدر پاکستان پیپلز پارٹی پارلیمنٹیرینز کے نام بھیجیں اور پی پی پی پی کے حق میں 40 ہزار روپے کا بنک ڈرافٹ جمع کرائیں جو پارٹی سیکرٹریٹ ہاو س 1، گلی 85، G-6/4، اسلام آباد پیر 8 اگست تک پہنچ جائیں۔

ضمنی الیکشن

مزید :

صفحہ اول -