این اے157،پی ٹی آئی میں پھوٹ پڑنے کا امکان

این اے157،پی ٹی آئی میں پھوٹ پڑنے کا امکان

  

ملتان (خصوصی رپورٹر) پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما علی موسی گیلانی نے کہا کہ عمران خان موروثی سیاست کے خلاف نعرے لگاتے تھے لیکن پی پی 217 اور این اے 157 میں موروثی سیاست کو ہی پروان چڑھا رہے ہیں، شاہ محمود قریشی کی صاحبزادی کو ٹکٹ دینے کا مقصد کارکنوں کی حوصلہ شکنی ہے،تحریک انصاف کسی بیانیہ پر نہیں بلکہ پروپیگنڈا کر رہی ہے، (بقیہ نمبر28صفحہ6پر)

ہم نے اپنے جیالوں کو ہدایت جاری کی ہے کوئی مہر بانو کے بارے میں سوشل میڈیا غلط باتیں نہ کرے، ہم ذاتیات کی سیاست نہیں کرتے ہم چاہتے ہیں خواتین کو بھی آگے آنا چاہیے، ان خیالات کا اظہار انہوں نے الیکشن کمیشن آفس کے باہر کی میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا اس موقع پر رکن صوبائی اسمبلی علی حیدر گیلانی، رانا سجاد، مسلم لیگ ن کے رہنما رانا شاہد سمیت دیگر عہدیداران موجود تھے، پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما و امیدوار این اے 157 علی موسی گیلانی ریلی کی صورت میں کاغذات نامزدگی جمع کروانے پہنچنے، اس موقع پر کارکنان کی بڑی تعداد موجود تھی، کارکنان کی جانب سے نعرے بازی اور گل پاشی بھی کی گئی، کاغذات نامزدگی جمع کروانے کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے مزید کہا کہ پیپلز پارٹی کی طر ف کاغذات جمع کروائے اس پہلے بھی الیکشن لڑ چکا ہوں یہ میرا چوتھا الیکشن ہے 2018 کے عام انتخابات میں عملی طور پر اس حلقہ سے کامیاب ہو چکا ہے لیکن مجھے دھندلی کے ذریعے کروایا گیا تھا اور رات کے اندھیرے میں ہرایا گیا، 11ستمبر کو ضمنی الیکشن میں چوری کا بدلہ لیں گے پی ڈی ایم کی جانب سے مجھے الیکشن لڑنے کا کہا گیا ہے بہت جلد آفیشل طور پر بھی اس کا اعلان ہو جائے گا، پی ڈی ایم کی تمام جماعتیں میرے ساتھ ہیں، انہوں نے مزید کہا کہ یہ 17جولائی کو بھی پی ڈی ایم کی جیت ہوئی تھی، 17کو تحریک انصاف نے اپنی بیس میں سے 15سیٹیں دوبارہ جیتی لیکن پی ڈی ایم نے پانچ سیٹیں جیت کر یہ ثابت کیا کہ پی ڈی ایم کی مقبولیت میں اضافہ ہو رہا ہے، انہوں نے مزید کہا کہ تحریک انصاف مورثی سیاست کی بات کرتی ہے لیکن شاہ محمود نے پہلے ہی پی 217 میں اپنے بیٹے زین قریشی کو الیکشن لڑوایا جبکہ اب اب بیٹی مہر بانو قریشی کو لڑا رہے ہیں، تحریک انصاف اپنے ہی بیانیہ سے بدل رہی ہے اور موروثی سیاست کو فروغ دی رہی ہے، پی ٹی آئی ایک پروپگنڈا کے تحت آگے بڑھ رہی تھی، انڈیا سے فنانس پروپیگنڈا ہے الیکشن کمیشن نے حقائق بیان کیا، نواز شریف کو بیٹے سے اکامہ پر نااہل کیا، عمران خان کو بھی نااہل کرنا چاہیے، عمران خان کو کرسی کی بھوک ہے اور اسی درد کی وجہ سے وزیراعلی کی کرسی پر بیٹھ جاتے ہیں، سمجھ سے بالاتر ہے ایک طرف اسمبلی سے استعفی دیئے جا رہے ہیں جبکہ دوسری جانب قومی اسمبلی کی سیٹ پر الیکشن بھی لڑ رہے ہیں، جب یہ اسمبلی میں ہی نہیں تو ضمنی الیکشن کیوں کو لڑرہے ہیں۔  این اے 157 ضمنی الیکشن میں پاکستان تحریک انصاف میں دراڑیں پڑنے لگیں، موروثی سیاست کے خلاف الیکشن کمیشن آفس کے باہر پی ٹی آئی کے ہمراہ انجینئر وسیم عباس نے کارکنان کے ہمراہ کاغذات نامزدگی کے موقع پر وائس چیئرمین شاہ محمود قریشی کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا، مظاہرین نے موروثیت کے خلاف شدید نعرے بازی کی، احتجاجی کارکنوں نے کہا شاہ محمود قریشی اپنی بیٹی مہر بانو قریشی کو امیدوار کھڑا کر کے موروثی سیاست کو فروغ دے رہے ہیں,  پی ٹی آئی رہنما انجینئر وسیم نے ساتھیوں کے ہمراہ الیکشن کمیشن آفس کے باہر وائس چیئرمین پی ٹی آئی شاہ محمود قریشی کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا اور کہا کہ این اے 157 میں شاہ محمود قریشی اپنی بیٹی مہر بانو قریشی کو امیدوار کھڑا کر کے موروثی سیاست کو فروغ دے رہے ہیں، پی ٹی آئی رہنما انجینئر وسیم نے کہا کہ نظریاتی کارکنوں کو پیچھے دیکھیلا جا رہا ہے، ہم موروثی سیاست کے خلاف نکلے ہیں، موروثی سیاست کو ختم نہ کیا گیا تو ہم بنی گالا کے سامنے دھرنہ دیں گے، گزشتہ 15 سالوں سے پاکستان تحریک انصاف میں پارٹی کا حصہ ہوں، پارٹی کے لیے بے حد کام کیا ہے، آج شاہ محمود قریشی اپنی بیٹی کو ٹکٹ دلوا کر موروثی سیاست کو مزید ہوا دے رہے ہیں، انجینئر وسیم نے مزید کہا میں خود پاکستان تحریک انصاف کے پلیٹ فارم سے این اے 157 سے کاغزات نامزدگی جمع کرانے آیا ہوں جبکہ دوسری جانب انجینئر وسیم انجینئر وسیم عباس نے این اے 157 کے لیے کاغذات نامزدگی الیکشن کمیشن کو جمع کرا دیئے ہیں 

مزید :

ملتان صفحہ آخر -