ماسٹر ویئر بل کی بنیاد پر ڈیوٹی کا تخمینہ لگانے سے روکتے ہوئے ایف بی آر اور کسٹم حکام سے جواب طلب

ماسٹر ویئر بل کی بنیاد پر ڈیوٹی کا تخمینہ لگانے سے روکتے ہوئے ایف بی آر اور ...

 لاہور(نامہ نگارخصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے کلکٹر کسٹم لاہور کو درآمد اشیاء پر ماسٹر ویئر بل کی بنیاد پر ڈیوٹی کا تخمینہ لگانے سے روکتے ہوئے فیڈرل بورڈ آف ریونیو اور کسٹم حکام سے 13 فروری تک جواب طلب کر لیا۔مسٹر جسٹس شاہد وحید نے کاسمیٹکس کی اشیاء درآمد کرنے والی نجی کمپنی زین انٹرپرائز ز کی درخواست پر سماعت کی، درخواست گزار کے وکیل شیراز ذکاء نے موقف اختیار کیا کہ ملک بھر میں جتنے بھی درآمد کنندگان ہیں ان کی درآمد شدہ اشیا پر ہاؤس ویئر بل کی بنیاد پر کسٹم ڈیوٹی کا تخمینہ لگایا جا تا ہے مگر کسٹم کلکٹر لاہور نے اپنے ہی اصول بنا رکھے ہیں اور فیڈرل بورڈ آف ریونیو کی منظوری کے بغیر ہی لاہور میں درآمد ہونے والی اشیاء پر ماسٹر ویئر بل کی بنیاد پر کسٹم ڈیوٹی کا تخمینہ لگایا جا رہا ہے، انہوں نے الزام عائد کیا کہ کسٹم کلکٹر لاہور کمیشن نہ دینے والوں درآمد شدہ اشیاء پر ماسٹر ویئر بل کی بنیاد پر ڈیوٹی کا تخمینہ لگاتے ہیں اور کمیشن دینے والوں کی ڈیوٹی کا تخمینہ ہاؤس ویئر بل کی بنیاد پر لگاتے ہیں جو غیرقانونی ہے ، ابتدائی سماعت کے بعد عدالت نے کلکٹر کسٹم لاہور کو درآمد اشیاء پر ماسٹر ویئر بل کی بنیاد پر ڈیوٹی کا تخمینہ لگانے سے روکتے ہوئے فیڈرل بورڈ آف ریونیو اور کسٹم حکام سے 13فروری تک جواب طلب کر لیا۔

مزید : صفحہ آخر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...