صوبائی حکومت نے 100دنوں میں 50کروڑ 12لاکھ محصولات کی مد میں جمع کئے ، ڈاکٹر امجدعلی

صوبائی حکومت نے 100دنوں میں 50کروڑ 12لاکھ محصولات کی مد میں جمع کئے ، ڈاکٹر ...

  

پشاور( سٹی رپورٹر)خیبرپختونخوا کے وزیر معدنیات ڈاکٹر امجد علی نے کہا ہے کہ صوبائی محکمہ معدنیات نے سو دنوں میں 50 کروڑ12 لاکھ روپے محصولات کی مد میں جمع کیے ہیں جس میں پچھلے سال کے نسبت پانچ کروڑ 60لاکھ روپے سے زیادہ ہے ،ایکسائز ڈیوٹی کی مد میں 4 کروڑ 64 روپے جمع کیے گئے ہیں،صوبہ بھر میں زیر زمین مائنز کے لئے 451 معائنہ کرائے گئے ہیں اور724 مائنز کو رجسٹرڈ کیا چکا ہے، سو دنوں میں83 مائنز ورکرز کو تربیت دی گئی ہے، منرل ڈائریکٹریٹ میں شکایات سل میں ابھی تک 16 شکایات موصول ہوئی ہیں جس میں چھ پر عمل درآمد ہوچکا ہے ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روز پشاور پریس کلب میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا۔ صوبائی وزیر معدنیات کا کہناتھا کہ وزیراعظم عمران خان کے کی ہدایات پرملک بھر میں سو روزہ پلان پر عملدآمد ہونے کے بعد کافی کامیابی حاصل کی ہے اسی سلسلے میں خیبر پختونخوا کے معدنیات میں بھی کافی بہتری دیکھنے کو ملی ہیں اور تاریخ میں پہلی بار پچھلے سالوں کے نسبت رواں سال معدنیات سے پانچ کروڑسے زائداضافی رقم ریونیو کی مد میں جمع کئے گئے ہیں اسی طرح ایکسائز ڈیوٹی کی مد میں 4 کروڑ 64 روپے جمع کیے گئے ہیں جبکہ 2018-19میں 11کروڑ50لاکھ روپے ٹارگٹ ہے انہوں نے کہا کہ معدنیات میں کرپشن کی روک تھام کیلئے عملی اقدامات اٹھائے جارہے ہیں منرل ڈائریکٹریٹ میں شکایات سل میں ابھی تک 16 شکایات موصول ہوئی ہیں جس میں چھ پر عمل درآمد ہوچکا ہے اور باقی ماندہ متعلقہ آفسران کو ضروری چھان بین کیلئے فارورڈ کئے گئے ہیں کرپشن اور دیگر معاملات میں گیارہ انکوائریاں کرائی جاچکی ہے انہوں نے کہا کہ مینجمنٹ انفارمیشن سسٹم کو کامیابی کے ساتھ متعارف کردیا گیا ہے جس سے غیر قانونی کان کنی کی حوصلہ شکنی ہوگی اور اس پر کھڑی نظر رکھنے کیلئے معاون ثابت ہوگی اور ساتھ ہی ریونیو میں اضافہ کا سبب بھی ہوگا انہوں نے کہا کہ صوبہ بھر میں کان کنو کو مفت علاج کی سہولیات مختلف ڈسپنسری میں دی جاچکی ہے اور کان کنو کے بچوں کو تعلیمی وظائف دینے کیلئے اشتہارات دیے گئے ہیں اسی طرح خصوصی بچوں کے تعلیمی وظائف کے لئے بھی اشتہارات دیا گیا ہے انہوں نے کہا کہ صوبہ بھر میں معدنیات کی ذخائر معلوم کرنے کیلئے جیولوجکل سروئے شروع کی ہے جس میں صوبہ بھر میں بہت سے مقامات پر معدنیات کی نشاندہی کرائی گئی ہے ساتھ ہی زیر زمین مائنز کے لئے 451 معائنہ کرائے گئے ہیں اور 724 مائنز کو رجسٹرڈ کیا چکا ہے انہوں نے کہا کہ سو دنوں میں83 مائنز ورکرز کو تربیت دی گئی ہے جبکہ ایک ریسکیو آپریشن کیا گیا ہے اسی طرح مائن سیفٹی سے متعلق قانون کابینہ کو ارسال کیا گیا ہے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -