پنجاب اسمبلی اپوزیشن نے ناروا سلوک کا الزام لگا کر ڈپٹی سپیکر کو ’’فرعون ‘‘قرار دیدیا

پنجاب اسمبلی اپوزیشن نے ناروا سلوک کا الزام لگا کر ڈپٹی سپیکر کو ’’فرعون ...

  

لاہور (نمائندہ خصوصی) پنجاب اسمبلی میں اپوزیشن نے نارواسلوک کا الزام لگا کر ڈپٹی سپیکر کوفرعون قراردیدیا،کسانوں کے مسائل پر حکومت اور اپوزیشن یک زبان ہوگئی،حکومت نے دانش سکول کو سفید ہاتھی قرار دیتے ہوئے انہیں بندنہ کرنے کی پالیسی بھی واضح کردی۔ تفصیلات کے مطابق پنجاب اسمبلی کا اجلاس ایک گھنٹہ 40 منٹ کی تاخیر سے ڈپٹی سپیکر سردار دوست محمدمزاری کے زیر صدارت شروع ہوا ۔اجلاس کے آغاز پرمسلم لیگ( ن) کے پیر اشرف رسول نے نکتہ اعتراض پر بولنا چاہا تو ڈپٹی سپیکر نے انہیں اجازت دینے سے انکار کر دیا جس پر دونوں میں تلخ کلامی ہو گئی۔مسلم لیگ نے ڈپٹی سپیکر کے سخت لہجہ پر برہم ہو گئی اورپیر اشرف رسول نے دوست محمد مزاری کو فرعون کہہ دیا اور پھر مسلم لیگ(ن) کے طاہر جمیل اور ڈپٹی سپیکر میں بھی گرما گرمی ہو گئی،مسلم لیگ(ن) نے ڈپٹی سپیکر کے رویے پر شدید احتجاج کیا ۔حکومتی رکن سعید اکبر نوانی نے میاں طاہر کے موقف کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ سوال کرنا ہر رکن کا حق اور جواب دینا حکومت پر لازم ہے۔وقفہ سوالات کے دوران صوبائی وزیر تعلیم مرادراس نے حکومتی رکن عظمی کاردارکے سوال کے جواب میں کہا کہ شہبازشریف کے شروع کئے گئے دانش سکول سفید ہاتھی ہیں مگر ان سکولوں کو ہم بندنہیں کر سکتے کیونکہ بچوں کو دانش سکول میں بورڈنگ ملی ہوئی ہے اسے چلانا ہی پڑے گا۔بعدازاں اجلاس میں خوراک اور زراعت پر بحث کاآغاز کیا گیا ، بحث میں حصہ لیتے ہوئے مسلم لیگ ن کے رکن اویس لغاری ،ملک احمد خان، مناظر حسین رانجھااور مخدوم عثمان نے حکومتی پالیسیوں کو سخت تنقید کانشانہ بناتے ہوئے کہاکہ کسانوں کی تمام نمائندہ تنظیمیں سراپااحتجاج ہیں، کھاد کی سستی فراہمی پر مسلم لیگ ن لیگ کی طرح سواارب روپے کاپیکیج دیاجائے۔ انہوں نے کہاکہ کسانوں کیلئے زرعی ایڈوائزری کمیشن بنانا ضروری ہے۔اپوزیشن ارکان نے کہا کہ حکومت بتائے شوگر ملوں کو کب چلائیں گے کیونکہ کماد کے کاشتکارپریشان ہیں وہ اپنا مال بھٹوں پر جلائیں گے یا کوئی خریدار بھی آئیگا۔صوبائی وزیر چودھری ظہیر الدین نے کہاکہ گزشتہ10سال میں کسان کش پالیسیوں پر عمل کیاگیا،گنے کی قیمت کے مسائل پرانے ہیں مل والا یا تاجرسی پی آر کی جگہ چیک دیاجائے اگروہ ایک سال بعدڈس آنر ہوجاتاہے تو مل مالکان کے خلاف مقدمات درج کروائے جائیں۔چودھری اقبال گجر نے نکتہ اعتراض پر گفتگو کرتے ہوے کہاکہ چودھری ظہیر الدین وزیر ہیں وہ ایوان میں کسانوں کیلئے تجاویز نہ دیں بلکہ خود مسائل حل کریں۔صوبائی وزیر سردار حسنین دریشک نے کہاکہ سب گنے کا رونا رور ہے ہیں دراصل گنا ہمارے ملک کی فصل ہی نہیں کیونکہ گنے کی فصل کو بہت زیادہ پانی درکار ہوتاہے جبکہ پانی ہمارے ملک میں پہلے بہت کم ہے۔ڈپٹی سپیکرنے ایجنڈا مکمل ہونے پر اجلاس آج صبح ساڑھے گیارہ بجے تک ملتوی کردیا، اجلاس میں خوراک و زراعت پر عام بحث آج بھی جاری رہے گی۔

مزید :

صفحہ آخر -