معیشت میں بہتری کا حکومتی دعویٰ مذاق،حکومت کی الٹی گنتی شروع ہو چکی،حکمران جلد اپنے انجام کو پہنچنے والے ہیں:مولانا فضل الرحمان

معیشت میں بہتری کا حکومتی دعویٰ مذاق،حکومت کی الٹی گنتی شروع ہو چکی،حکمران ...
معیشت میں بہتری کا حکومتی دعویٰ مذاق،حکومت کی الٹی گنتی شروع ہو چکی،حکمران جلد اپنے انجام کو پہنچنے والے ہیں:مولانا فضل الرحمان

  



سکھر(این این آئی)جمعیت علماء اسلام ف کے قائدمولانا فضل الرحمان نے موجودہ حکومت کی پندرہ ماہ کی کارکردگی کو بد ترین، معیشت کی بہتری کے حکومتی دعوؤں کو اس صدی کا سب سے بڑا جھوٹ اور عمران خان کو جھوٹوں کا ماسٹر قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ یہ دعویٰ عوام کیساتھ مذاق کے سواء کچھ بھی نہیں ہے، حکومت کو مزید مہلت نہیں دی جاسکتی،آزادی مارچ کے بعد حکومت کی الٹی گنتی شروع ہو چکی،حکمران اپنے جلد انجام کو پہنچنے والے ہیں۔

جے یو آئی کے مرکزی نائب امیر مولانا عبدالقیوم ہالیجوی، مولانا عبید اللہ بھٹو ابن آزاد، سندھ کونسل کے ممبر مولانا عبدالحق مہر کیساتھ ٹیلی فون پر خصوصی گفتگو کرتے ہوئےمولانا فضل الرحمان نےکہا کہ جعلی مینڈیٹ سے بنائی گئی حکومت کو روز اول سے جھوٹے وعدوں اور بے بنیاد دعوؤں کے ذریعے چلانے کی ناکام کوشش کی جا رہی ہے، حقیقت اس کے بر عکس ہے کہ معشیت روز بگڑتی جا رہی ہے مہنگائی، بے روزگار بے پناہ بڑھ چکی ہے جس کی وجہ سے لوگوں کا جینا دوبھر ہو گیا ہے، کاروبار مکمل طور پر تباہ ہیں، انڈسٹریز بند پڑی ہیں، معشیت کی بہتری کا دعویٰ لوگوں کو منہ چڑانے والی بات ہے۔مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ اگر معشیت بہتر ہو رہی ہے تو عوام تک اس کے فوائد کیو ں نہیں پہنچ رہے ؟ مہنگائی و بے روزگاری اور بحران کم ہونے کے بجائے کیوں بڑھ رہے ہیں؟ جھوٹ پر کار بند حکومت یو ٹرن سرکار نے اپنے دعوے کے برعکس ملکی تاریخ میں سب سے زیادہ قرضے لیکر بھی عوام کو اگر کوئی ریلیف نہیں دے سکتی تو اس سے بڑی ناکامی اور کیا ہوگی؟ فرعون صفت حکمران خزانے پر سانپ بن کر بیٹھے ہوئے ہیں ،یہ مدینہ کی نہیں بلکہ فرعون کی حکمرانی ہے،کپتان کی حکومت نے پندرہ ماہ میں جو گند کیا ہے 70سال میں اسکی مثال نہیں ملتی، حکمران پانچ سال تو کیا پچاس سال میں بھی اسکا ازالہ نہیں کرسکتے۔

مولانا فضل الرحمان کا مزید کہنا تھا کہ حکومتی ترجمانوں اور وزراء بھی جھوٹ بولنے کی پی ایچ ڈی کئے ہوئے ہیں، وہ بھی اپنے کپتان کے جھوٹ کو سچ بنانے کیلئے طوفان بدتمیزی برپا کئے ہوئے ہیں مگر اس طرح حقائق کو بدلہ نہیں جاسکتا۔ انہوں نےکہا  کہ آزادی مارچ کے بعد حکومت کی الٹی گنتی شروع ہو چکی،حکمران اپنے جلد انجام کو پہنچنے والے ہیں، ہمارے آزادی مارچ نہ ہونے کی جھوٹی پیشنگوئی کرنے والے عاقبت نا اندیش وزراء اب کس منہ سے اسکی ناکام اور حکومت کے نا جانے کی باتیں کر رہے ہیں؟۔انہوں نے کہا کہ ڈوبتا ہوا اقتدار دیکھ اب حکمرانوں کو پارلیمنٹ کی اہمیت اور توقیر کا احساس ہو گیا ہے، موجودہ حکومت کی نااہلی کی وجہ سے سنگین سیاسی، معاشی و اقتصادی بحران کے بعد اب ملک میں آئینی بحران کا خطرہ پیدا ہو گیا ہے ،اب اس حکومت کو مزید مہلت نہیں دی جا سکتی۔

مزید : قومی