شرح سود میں اضافہ سے مہنگائی کی نئی لہر پیدا ہو گی: صفدر علی بٹ

شرح سود میں اضافہ سے مہنگائی کی نئی لہر پیدا ہو گی: صفدر علی بٹ

  

          لاہور(سٹی رپورٹر))صدر لبرٹی مارکیٹس بورڈ صفدر علی بٹ نے کہا ہے کہسٹیٹ بینک کی جانب سے شرح سود میں 1.50 فیصداضافہ سے معیشت مزید سست روی کا شکار ہو جائے گی جو پہلے ہی مہنگائی کا شکار ہے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے تاجروں کے وفد سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ  نومبر میں مہنگائی کی شرح بڑھ کر 11.5 تک پہنچ گئی ہے جو گزشتہ 20 ماہ میں سب سے بلند ترین سطح پر ہے لہذا یہ صورتحال پالیسی سازوں کیلئے لمحہ فکریہ ہونی چاہیے کیونکہ بڑھتی ہوئی مہنگائی عوام کی قوت خرید میں بہت کمی کرے گی جس کے کاروباری اور معاشی سرگرمیوں پر منفی اثرات مرتب ہوں گے۔  انہوں نے حکومت سے پرزور مطالبہ کیا کہ بڑھتی ہوئی مہنگائی پر قابو پانے کے لیے ہنگامی بنیادوں پر اقدامات کیے جائیں تاکہ عوام اور کاروباری شعبے کو مزیدمشکلات سے بچایا جا سکے۔انہوں نے کہا کہ تیل کی قیمتوں میں غیرمعمولی اضافہ، پالیسی شرح سود میں بے تحاشہ اضافہ، بجلی اور گیس کے نرخوں میں مسلسل اضافہ، روپے کی مسلسل گرتی ہوئی قدر اور ٹیکسوں کے زیادہ ریٹس وہ اہم عوامل ہیں جنہوں نے مہنگائی میں بہت اضافہ کیا ہے۔نہوں نے اس بات پر زور دیا کہ حکومت تمام اسٹیک ہولڈرز کی مشاورت سے پرائس کنٹرول کا ایک جامع طریقہ کار وضع کرے تا کہ معیشت کو مزید نقصان سے بچایا جا سکے۔انہوں نے بتایا کہ مہنگائی کی وجہ سے صارفین کی سکڑتی قوت خرید سے کاروباری سرگرمیاں ماند پڑ رہی ہیں اور کاروباری طبقے کی مشکلات بڑھ رہی ہیں جس سے بے روزگاری میں اضافہ ہوگا۔ انہوں نے زور دیا کہ اسٹیٹ بینک شرح سود میں مناسب کمی کرنے پر غور کرے کیونکہ سخت مانیٹری پالیسی اشیائے خوردونوش کی بڑھتی ہوئی قیمتوں کو کنٹرول کرنے میں ناکام رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ بڑھتی ہوئی مہنگائی معیشت کے لیے سنگین خطرہ بن سکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس طرح کے سخت اقدامات سے عام آدمی شدید مہنگائی تلے دب جائے گا اور کاروباری سرگرمیاں زوال پذید ہوں گی لہذا حکومت اس مشکل وقت میں ایسے سخت فیصلے کرنے سے گریز کرے۔

مزید :

کامرس -