ٹیچنگ ہسپتالوں میں امراض قلب اور نیورو سرجری کے شعبہ جات غیر فعال بنا دیئے گئے

ٹیچنگ ہسپتالوں میں امراض قلب اور نیورو سرجری کے شعبہ جات غیر فعال بنا دیئے ...

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

                                             لاہور( جاوید اقبال)صوبائی دارالحکومت کے ٹیچنگ ہسپتالوں میں امراض قلب اور نیورو سرجری کے شعبہ جات غیر فعال بنا دیئے گئے ہیں جس کے باعث لاہور جنرل ہسپتال میں نیورو سرجری اور پنجاب انسٹیٹیوٹ آف کارڈیالوجی میں امراض قلب کے مریضوں کی آمد میں 100فیصد اضافے ہو گیا ہے جس سے مریضوں کے لئے بیڈز ختم ہو گئے ہیںبتایا گیا ہے کہ شہر لاہور کے ٹیچنگ ہسپتالوں میں امراض قلب اور نیورو سرجری کے شعبہ جات موجود ہیں اور سینئر ڈاکٹرز بھی موجود ہیں مگر مشینری ناکارہ اور ان شعبہ جات میں سینئر ڈاکٹروں کی لاپرواہی اور عدم توجہی کے یہ شعبہ جات مریضوں کے پوسٹ آفس بن چکے ہیں ٹیچنگ ہسپتالوں میں قائم ان شعبہ جات کے سربراہان ایمرجنسی وارڈوں میں متعلقہ شعبہ جات کے ڈاکٹرز میں تعینات نہیں کر رکھے اور نہ ہی ماہانہ ڈیوٹی روسٹرز میں ایمرجنسی میں ڈاکٹروں کی ڈیوٹیاں لگائی جاتی ہیں صرف آﺅٹ ڈورز میں ”اکا دکا“ مریض دیکھے جاتے ہیں یونہی امراض قلب یا نیورو سرجری کے مریض ایمرجنسی میں آتے ہی وہاں موجود دیگر شعبہ جات کے ڈاکٹرز اگر مریض امراض قلب کا ہو تو اسے پی آئی سی میں ریفر کر دیتے ہیں اگر نیورو سرجری کا ہو تو اس کو ہاتھ تک نہیں لگاتے اور پہلی فرصت میں اسے لاہور جنرل ہسپتال ریفر کر کے بری الزمہ ہو جاتے ہیں جس کے باعث مذکورہ دونوں ہسپتالوں کے ایمرجنسی وارڈ میں 24گھنٹے ہاﺅس فل کا بورڈ آویزاں ہوتے ہیں اور اس صورتحال کے باعث دونوں امراض کے نازک حال مریضوں کی شرح اموات میں سو فیصد اضافہ ہو چکا ہے دونوں ہسپتالوں کے امراض ایمرجنسی وارڈوں میں ہر چوتھے منٹ بعد مریضوں کی اموات ہو رہی ہیں بتایا گیا ہے کہ شہر کے میوہسپتال، گنگارام ہسپتال، سروسز ہسپتال ، جناح ہسپتال میں امراض قلب اور نیورو سرجری کے شعبہ جات بھی موجود ہیں اور ان کو چلانے کے لئے سینئر ڈاکٹرز بھی موجود ہیں مگر ستم بالا کے ستم یہ کہ مذکورہ ہسپتالوں میں نیو رو سرجری اور کارڈیک ایمرجنسی مریض لینے کا رواج ختم ہو چکا ہے شعبہ جات ہونے کے باوجود ایمرجنسی میں ڈاکٹروں کی ڈیوٹایں لگانے کے لئے مذکورہ شعبہ جات کے پروفیسرز ایمرجنسی ڈیوٹی روسٹرز میں جاری نہیں کے لئے جس کے باعث نازک حال ایسے مریض جن کو ایمرجنسی درکار ہوتی ہے ان کو جب ٹیچنگ ہسپتالوں میں لایا جاتا ہے تو ٹیچنگ ہسپتالوں میں لایا جاتا ہے تو ٹیچنگ ہسپتالوں کی ایمرجنسی میں انہیں ہاتھ تک نہیں لگایا جاتا اور جیسے آتے ہی ویسے ہی اسے لاہور جنرل ہسپتال اور پی آئی سی میں ریفر کر کے ٹیچنگ ہسپتالوں کے ڈاکٹرز بری الذمہ ہو جاتے ہیں اس صورتحال کے باعث پی ائٓی سی میں کارڈیک ایمرجنسی اور لاہور جنرل ہسپتال میں نیورو سرجری ایمرجنسی میں مریضوں کا رش اس قدر بڑھ چکا ہے کہ مریضوں کے لئے بیڈز ختم ہو چکے ہیں ڈاکٹرز مجبور ایسے مریضوں کی زندگی بچانے کے لئے انہیں زمین پر لٹا کر طبی سہولیات فراہم کرنے میں اس حوالے سے مشیر صحت خواجہ سلیمان رفیق سے بات کی گئی تو انہوں نے کہا کہ تمام ٹیچنگ ہسپتالوں کے نیورو سرجری اور امراض قلب کے یونٹ فعال بنوائیں گے تمام پرنسپل اور ایم ایس کو پابند بنایا جائے گا کہ وہ کارڈیک اور نیورو سرجری کی ایمرجنسی کے مریض داخل کریں اس سلسلے میں باقاعدہ ڈیوٹی روسٹر جاری کرایا جائے گا ایسا نہ کرنے والے ایم ایس کے خلاف کارروائی ہو گی۔