انسان کی متوقع عمر معلوم کرنے کا طریقہ دریافت کر لیا گیا ، سائنسدانوں کا متنازعہ ترین

انسان کی متوقع عمر معلوم کرنے کا طریقہ دریافت کر لیا گیا ، سائنسدانوں کا ...
 انسان کی متوقع عمر معلوم کرنے کا طریقہ دریافت کر لیا گیا ، سائنسدانوں کا متنازعہ ترین

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

دعویٰ لندن(نیوزڈیسک)مغربی سائنسدان انسانی جسم میں موجو د ایسے بائیولوجیکل کلاک کا پتہ لگانے میں کامیاب ہو گئے ہیں جس کی مدد سے کسی فرد کی موت کے بارے میں بتایا جا سکتا ہے۔برطانیہ، امریکہ اور آسٹریلیا کی یونیورسٹیوں کے سائنسدانوں کی جانب سے کی گئی تحقیق میں سائنسدانوں نے ڈی این اے میں کیمیائی تبدیلیوں کا مطالعہ کیا اور بائیولوجیکل عمر کا اصل عمر سے موازنہ کیا اور یہ بات سامنے آئی کہ جن لوگوں کی بائیولوجیکل عمر ،ان کی اصل عمر سے زیادہ تھی ان کی موت ایسے افراد کے مقابلے میں جلد ہو سکتی تھی جن کی بائیولوجیکل عمر ان کی اصل عمر کے برابر تھی۔ان تجربات میں چار خود مختار تحقیقات کی گئیں جس میں 5000ادھیڑ عمر کے لوگوں کا 14سال تک مشاہدہ کیا گیا۔تجربے میں شامل ہر شخص کی بائیولوجیکل عمر اس کے خون کے نمونوں سے جانچی گئی اور یہ بھی دیکھا گیا کہ مذکورہ شخص کو ذیابیطس، دل اور دیگر کس طرح کی بیماریاں لاحق ہیں یا نہیں۔ تحقیق کاروں کو پتہ لگا کہ تیزی سے چلتے ہوئے بائیولوجیکل کلاک اور قبل از موت میں گہرا تعلق ہے۔یونیورسٹی آف ایڈینبرا کے پروفیسر آئن ڈیری کا کہنا تھا کہ تحقیق میں انہوں نے لوگوں کی بائیولوجیکل عمر کا اندازہ ڈی این اے میں کیمیائی تبدیلی کرکے کیا۔ اس تبدیلی کو methylationکا نام دیا گیا ہے جس میں مذکورہ شخص کے ڈی این اے کے تواتر کو تبدیل نہیں کیا گیا۔ایک اور تحقیق کار ڈاکٹر ریکارڈو ماری اونی کا کہنا تھا کہ چاروں تحقیق میں یہ بات سامنے آئی کہ بائیولوجیکل کلاک اور موت کا آپس میں گہرا تعلق ہے،گو کہ ابھی کچھ بھی کہنا قبل از وقت ہے لیکن مزید تحقیقات سے کافی بہتر نتائج مل سکتے ہیں۔یہ تحقیق Genome Biologyجرنل میں شائع ہو چکی ہے اور اس میں یونیورسٹی آف ایڈنبرا، یونیورسٹی آف کوئنز لینڈ، یونیورسٹی آف کیلی فورنیا لاس اینجلس، بوسٹن یونیورسٹی اور جان ہاپکنز یونیورسٹی کے تحقیق کاروں نے حصہ لیا۔

مزید :

صفحہ آخر -