وزیراعظم یوتھ لون سکیم خطرے میں پڑگئی

وزیراعظم یوتھ لون سکیم خطرے میں پڑگئی
وزیراعظم یوتھ لون سکیم خطرے میں پڑگئی

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) وفاقی حکومت اور تجارتی بینکوں کی عدم دلچسپی کے باعث وزیراعظم یوتھ بزنس لون سکیم خطرے میں پڑ گئی ہے اور غیراعلانیہ بندش کا امکان ہے ۔
ذرائع کے مطابق ن لیگ کی حکومت نے مذکورہ اسکیم کے تحت ابتدائی طور پر 100 ارب روپے کے قرضے جاری کرنے کا فیصلہ کیا تھا لیکن 13 جنوری 2015 تک سکیم کے تحت صرف5 ارب روپے مالیت کے قرضوں کا اجرا ممکن ہوسکا،سکیم سے سیاسی فائدہ اٹھانے کی غرض سے وزیراعظم نوازشریف نے ابتدائی طور پر فیصلہ کیا تھا کہ وہ درخواستوں کی ہرقرعہ اندازی بذات خود کریں گے جنہوں نے گزشتہ 2 سال میں صرف دومرتبہ قرعہ اندازی کی لیکن کئی ماہ گزرنے کے باوجود سکیم کی تیسری قرعہ اندازی وزیراعظم کی مصروفیات کی وجہ سے زیرالتوا ہے۔
ذرائع نے بتایا کہ ن لیگ کی حکومت نے ابتدائی طور پرسکیم کے تحت ہر سال 1 لاکھ بے روزگار نوجوانوں کو قرضوں کے اجرا کا ہدف مقرر کیا تھا اور طے شدہ معیار پر پورا اترنے والے نوجوانوں کی درخواستوں کی قرعہ اندازی ماہانہ بنیادوں پر کرنے کا فیصلہ کیا تھا لیکن سکیم کے تحت قرضوں کے لیے منظوری کی جانے والی تقریباً 10 ہزار 500 درخواستیں صرف قرعہ اندازی نہ ہونے کی وجہ سے زیرالتوا ہیں۔
ایکسپریس نیوز کے ذرائع کے مطابق مذکورہ سکیم کے تحت تاحال 59 ہزار 608 بے روزگار نوجوانوں کی جانب سے قرضوں کے حصول کے لیے درخواستیں جمع کرائی گئی ہیں جن میں سے صرف 10 ہزار400 درخواست گزاروں کو قرضوں کی منظوری کے خطوط جاری کیے گئے۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ قومی نوعیت کی مذکورہ اسکیم سے تاحال مطلوبہ بہتری کے نتائج برا?مد نہیں ہوسکے اور اسکیم کی سخت شرائط کی وجہ سے بیروزگار نوجوانوں کی بڑی تعداد اسکیم سے استفادہ نہیں کرپائی۔

مزید :

بزنس -