گورنر گلگت بلتستان کے بیٹوں کی درخواست ضمانت خارج، پولیس کے گرفتاری کیلئے چھاپے لیکن ان کا جرم کیا ہے؟ جان کر آپ کی بھی حیرت کی انتہاء نہیں رہے گی کیونکہ ۔ ۔ ۔

گورنر گلگت بلتستان کے بیٹوں کی درخواست ضمانت خارج، پولیس کے گرفتاری کیلئے ...
گورنر گلگت بلتستان کے بیٹوں کی درخواست ضمانت خارج، پولیس کے گرفتاری کیلئے چھاپے لیکن ان کا جرم کیا ہے؟ جان کر آپ کی بھی حیرت کی انتہاء نہیں رہے گی کیونکہ ۔ ۔ ۔

  

اسلام آباد ، گلگت(ویب ڈیسک) گورنر گلگت بلتستان کا ایف سکس میں واقع کروڑوں روپے مالیت کا گھر گفٹ کرنے کے جعلی کاغذات تیار کرنے کے مقدمہ میں ملوث ان کے حقیقی بیٹوں کی درخواست ضمانت عدم پیروی پر خارج کردی گئی، پولیس نے ملزمان کی گرفتاری کیلئے وارنٹ گرفتاری حاصل کرکے چھاپے مارنے شروع کردئیے جبکہ گورنر نے بیان میں بہو سمیت مزید تین افراد کو نامزد کردیا۔

روزنامہ دنیا کے مطابق گورنر گلگت بلتستان غضنفر علی خان نے اپنے حقیقی بیٹوں پرنس سلیم خان ممبر قانون ساز اسمبلی اور شہریار خان کے خلاف تھانہ کوہسار میں مقدمہ درج کروایا تھا کہ ان کے بیٹوں نے ان کے کروڑوں روپے مالیت کے گھر واقع سیکٹر ایف سکس ون ہاﺅس نمبر 82 مین مارگلہ روڈ کے جعلی کاغذات بنائے کہ میں نے انہیں یہ گھر گفت دیا ہے، پولیس نے مقدمہ درج کرکے تفتیش شروع کی، دونوں بیٹوں شہریار خان اور پرنس سلیم خان نے گرفتاری کے خلاف سے اسلام آباد کی ماتحت عدالت سے عبوری ضمانت کروالی لیکن مقدمہ میں شامل تفتیش نہ ہوئے۔

بعد ازاں یہ ضمانت عدالت میں عدم پیروی کی وجہ سے خارج ہوگئی جس پر کوہسار پولیس نے گورنر غضنفر علی خان سے ان کے مقدمہ کے حوالے سے رابطہ کیا تو گورنر نے پولیس کو بتایا کہ ان کا راضی نامہ نہیں ہوا، گورنر نے اپنے بیان میں مزید تین افراد کو نامزد کردیا، ان میں خوش دل خان ولد شاہ سلطان جبکہ سعدیہ دختر امجد حسین کے بارے میں پولیس کا کہنا ہے کہ سعدیہ ان کی بہو ہے اس کے علاوہ ایک نوکر شامل ہے جو مکان کے جعلی گفٹ کے کاغذات میں گواہ تھا۔ ایس ای چاو تھانہ کوہسار نے رابطہ پر بتایا کہ ملزمان کی گرفتاری کیلئے وارنٹ گرفتاری حاصل کرلئے ہیں، گرفتاری کے لئے کارروائی کررہے ہیں، ملزمان کو جلد گرفتار کرلیا جائے گا۔

مزید : علاقائی /اسلام آباد /گلگت بلتستان /گلگت