علی پور ‘ گاؤں بدر ہونیوالا جوڑا لاوارث ‘ سرپنچ کی لڑکے کو دھمکیاں

علی پور ‘ گاؤں بدر ہونیوالا جوڑا لاوارث ‘ سرپنچ کی لڑکے کو دھمکیاں

  



علی پور(نمائندہ پاکستان)علی پورونی کیس: پنچایت کے حکم پر گاؤں بدرہونے والا جوڑا دربدر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور، سرپنج محمدحسن جانگلہ کی لرکے کے خاندان پر آج بھی بربریت جاری،موضع غوث پور کے عاصم نے شبانہ سے پسند کی شادی کی تھی جس محمدحسن جانگلہ،سرپنج عبدالکریم،الطاف بوہڑ،عبدالمالک،غلام عباس جکھڑ نے پنچایت کی اور عاصم کی بہن نجمہ بی بی کوونی کرنے ،ایک بیگھہ زمین(بقیہ نمبر46صفحہ12پر )

دینے کا حکم دیا تھا،رخصتی سے قبل صحافیوں نے ایس ایچ او صدر علی پور زاہدلغاری کو حالات سے آگاہ کیا،جس پر ریڈ کرکے نکاح خواں،مولوی شبیر،یوسف،سعید احمد اوردلہاشہباز کو گرفتار کرکے نکاح رجسٹرقبضہ میں کرلیا تھااور ملزمان کے خلاف مقدمہ نمبری 500/18درج کرلیا تھا جبکہ بااثر ملزمان سرپنج صاف بچ گئے ۔معصوم بچی ونی ہونے سے بچ گئی لیکن علاقہ کے سرپنج عبدالکریم جکھڑ نے متاثرہ خاندان عاصم کے والد غلام حسن ،والدہ نذیر مائی ،بھائی ہاشم اور ونی ہونے والی نجمہ کو اپنے ڈیرے پر قید کرلیاتھا اورعدالت وتھانہ میں متاثرہ خاندان سے من مرضی کے بیان حلفی حاصل کرلئے تھے لیکن معزز عدالت کے جج مسٹرمرید حسین بلوچ نے اخبارات کی کوریج پر ملزامن کی ضمانتیں خارج کردیں تھیں جس پر دوبارہ پنچایت ہوئی اور متاثرہ خاندان سے عدالت میں 164کے بیان زبردستی حاصل کرلئے گئے تھے اور متاثرہ خاندان کو کہا گیا تھا کہ ہم ونی نہیں لیں گے۔حسن جانگلہ نے مسجد میں حلف دیا اب معاملہ تھنڈا ہونے پر سرپنج عبدالکریم اورحسن جانگلہ نے اپنی بے عزت کابدلہ لینے کیلئے دوبارہ متاثرہ خاندان پر عرصہ حیات تنگ کرنا شروع کردیاہے متاثرہ جوڑے محمدعاصم اورشبانہ بی بی نے صحافیوں سے رابطہ پر کہا کہ ہم آج بھی اپنے گھر واپس نہیں آسکتے۔ حسن جانگلہ ،عبدالکریم جکھڑ ،عباس جکھڑ کی طرف سے ہمیں جان سے ماردینے کی دھمکیاں ملی رہی ہیں ۔ہمیں ہمارے خاندان کو ذلیل کیاجارہاہے اوراب دوبارہ ونی کا حکم اورزمین دینے کی ضد کی جارہی ہے۔ محمدعاصم نے بتلایا کہ سرپنج حسن جانگلہ نے مجھے فون پر دھمکی دی ہے کہ اگر تم نے لرکی واپس نہ کی تو انجام اچھا نہیں ہوگا۔ انہوں نے وزیراعلیٰ پنجاب ،آر پی او ڈیرہ، ڈی پی او مظفرگڑھ سے تحفظ کی اپیل کرتے ہوئے ملزمان کے خلاف کاروائی کا مطالبہ کیا ہے ۔رابطہ پر حسن جانگلہ نے کہا کہ یہ پنچایت کا فیصلہ ہے کہ عاصم بستی میں نہیں آئے گا۔ تاہم اس کا بدلہ میں اس کی بہن جائے گی یا پھر دس لاکھ معاوضہ دیں ورنہ فیصلہ تبدیل نہیں ہوگا۔

دھمکیاں

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...