پنجاب میں 10لاکھ سے زائد ٹیوب ویلز موجود ‘ واصف خورشید

پنجاب میں 10لاکھ سے زائد ٹیوب ویلز موجود ‘ واصف خورشید

  



لاہور(نیوز رپورٹر) سیکرٹری زراعت پنجاب واصف خورشیدنے کہا ہے کہ توانائی کے غیر ضروری ضیاع کو روکنے کیلئے صوبہ بھرمیں ٹیوب ویلزکا انرجی آڈٹ جاری ہے .زرعی ٹیوب ویل کے انرجی آڈٹ کے سلسلہ میں دئیے گئے اہداف کے حصول کو یقینی بنایا جائیگا کیونکہ توانائی کا غیر ضروری ضیاع نہ صرف کسان کا انفرادی نقصان ہے بلکہ قومی خزانے پر بھی بہت بڑا بوجھ ہے۔ان کا کہنا تھا کہ پنجاب میں ٹیوب ویلز کی تعداد ایک ملین سے زیادہ ہے جس میں سے 1لاکھ 20ہزار کے قریب بجلی سے چلنے والے ٹیوب ویلز ہیں چونکہ فصلوں کی مطلوبہ ضرورت کے پیش نظر دستیاب نہری پانی بہت کم ہے اس کمی کو پورا کرنے کے لئے بارش کے علاوہ بڑا ذریعہ زیر زمین قدرتی پانی ہے جسے ٹیوب ویلوں کی مدد سے نکالاجاتا ہے۔ دستیاب آبپاشی وسائل یعنی نہری نظام، بارشیں اور ٹیوب ویل آپریشن کے باوجود کاشتکاری کیلئے تقریباً 30 فیصد پانی کی قلت کا سامنا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ توانائی کے غیر ضروری ضیاع کو کم کرنے کیلئے شعبہ زرعی انجینئرنگ کو ٹیوب ویلز کے انرجی آڈٹ کا ٹاسک سونپا گیا ہے جس کے تحت اسسٹنٹ ایگریکلچر انجینئر (ویل ڈرلنگ) کی سرپرستی میں ماہانہ ہر ضلع میں کم سے کم 15 عدد ٹیوب ویلز کا معائنہ اور انرجی آڈٹ بلا معاوضہ کیا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایک سروے کے مطابق اس وقت 30فیصد توانائی ٹیوب ویل چلانے میں ضائع ہورہی ہے۔اب تک1261 ٹیوب ویلوں کا انرجی آڈٹ سروے کیا جا چکا ہے۔اس کے علاوہ محکمہ زراعت پنجاب نے اب تک9 ہزار483 ایکڑرقبے کو بلڈوزرز کی مدد سے ہموار کیا گیا اور اس رقبے کو قابلِ کاشت بنایا گیا ہے۔

سیکرٹری زراعت پنجاب نے مزید کہا کہ توانائی کے غیر ضروری ضیاع کو کم کرنے کیلئے انرجی آڈٹ سروے اسلئے بھی ضروری ہے کہ کسان کی لاعلمی کی وجہ سے یہ ایک بہت بڑا قومی نقصان ہے جس کا تدارک وقت کی اہم ضرورت ہے۔ جدید ٹیکنیکل آلات سے ٹیوب ویل کا معائنہ اور انجینئرز کی ماہرانہ رائے کے ذریعے اس قومی نقصان میں خاطر خواہ کمی لائی جارہی ہے۔

مزید : کامرس


loading...