چین، کران مزید 65افراد کو نگل گیا، نئے مریضوں کی تعداد میں کمی

  چین، کران مزید 65افراد کو نگل گیا، نئے مریضوں کی تعداد میں کمی

  

اسلام آباد،بیجنگ(مانیٹرنگ ڈیسک،نیوز ایجنسیاں)چین میں نوول کرونا وائرس کے باعث مزید 65افراد ہلاک ہوگئے اور3887نئے مریضوں کی تصدیق ہوئی ہے جس کے بعد مجموعی ہلاکتوں کی تعداد 490 جبکہ متاثرہ افراد کی تعداد24ہزار324ہوگئی ہے جن میں سے 3219کی حالت تشویشناک ہے۔ چینی محکمہ صحت کا کہنا ہے کہ 31صوبائی سطح کے علاقوں اور "سنکیانگ کے پیدواری اور تعمیراتی کورپس" میں مجموعی طور پر نوول کرونا وائرس کے 3887 مریضوں کی تصدیق ہوئی ہے جبکہ بدھ تک اس وائرس سے مزید 65افرا د ہلاک ہوئے ہیں۔چین کے صحت کمیشن کے مطابق مرنے والے تمام افراد کا تعلق صوبہ ہوبے سے ہے۔چین میں نوول کورونا وائرس کے مشتبہ نئے مریضوں کی تعداد میں لگاتار دوسرے دن بھی کمی دیکھنے میں آئی ہے، یہ بات قومی صحت کمیشن کی جانب سے جاری کردہ اعداد وشمار سے ظاہر ہوئی ہے۔کمیشن نے بدھ کے روز کہا ہے کہ 31 صوبائی سطح کے علاقوں اور سنکیانگ پیداواری اورتعمیراتی کورپس سے کورونا وائرس کے 3971نئے مریضوں کی اطلاعات موصول ہوئیں جبکہ اس کی نسبت پیر کے روز یہ تعداد 5072 اور اتوار کو 5173 تھی۔کورونا وائرس پر قابو پانے کے لئے ووہان اپنے موجودہ مقامات کوہسپتالوں میں تبدیل کررہا ہے تاکہ وہاں اس مرض میں مبتلا مریضوں کے علاج کیا جاسکے،پیر کو تین مقامات کوہسپتالوں میں تبدیل کئے جانے کے بعد شہر نے مزید 8مقامات کو ہسپتالوں میں بدلنے کا منصوبہ بنایا ہے۔یہ مقامات شہر کے مختلف اضلاع میں واقع ہیں جہاں پر کورونا وائرس کی وجہ سے معمولی بیمار مریضوں کو رکھا جائے گا۔ان عارضی ہسپتالوں کو 10 ہزارسے زائد بستر فراہم کئے جائیں گے۔وزارت قومی صحت نے چین سے فضائی آپریشن معطل کیے جانے کی خبروں کی تردید کردی، ترجمان کے مطابق چین سے پروازیں معمول کے مطابق چلتی رہیں گی۔ ترجمان وزارت صحت کے مطابق چین سے پروازوں کی پابندی کا تاحال کوئی فیصلہ نہیں ہوا۔ترجمان کا کہنا ہے کہ چین سے پروازیں معمول کے مطابق چلتی رہیں گی۔خیال رہے کہ چند روز قبل چین سے فلائٹ آپریشن عارضی طور پر معطل کردیا گیا تھا جو 3 فروری کو بحال کردیا گیا، جس کے بعد ارومچی سے سدرن چائنا ایئر کی پرواز سی زیڈ 6007 اسلام آباد پہنچی۔مذکورہ پرواز کے ذریعے 61 پاکستانی وطن واپس پہنچے، ایئرپورٹ پر معاون خصوصی ڈاکٹر ظفر مرزا بھی موجود تھے جنہوں نے اسکریننگ کی نگرانی کی۔دوپہر 12 بجے چین سے ایک اور پرواز سی زیڈ 5241 اسلام آباد ایئرپورٹ پر پہنچی جس میں 82 مسافر سوار تھے، چین سے پہنچنے والے تمام مسافروں کی سخت اسکریننگ کی گئی۔عالمی ادارہ صحت کے سربراہ نے بین الاقوامی کمیونٹی سے بڑے پیمانے پر اظہار ہمدردی کی اور خطرناک کورونا وائرس کے حوالے سے ڈیٹا شیئر نہ کرنے والی حکومتوں کو تنقید کا نشانہ بھی بنایاہے۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق عالمی ادارہ صحت کے سربراہ نے جاری کئے گئے ایک بیان میں کہاکہ چین کے علاوہ جن ممالک میں کورونا وائرس پایا گیا وہاں سے صرف 38 فیصدڈیٹا موصول ہوا۔

کرونا

مزید :

صفحہ اول -