سی بریز پلازہ گرانے سے متعلق کیس ،سپریم کورٹ نے کراچی کنٹونمنٹ بورڈ کو جواب جمع کرانے کا حکم دیدیا

سی بریز پلازہ گرانے سے متعلق کیس ،سپریم کورٹ نے کراچی کنٹونمنٹ بورڈ کو جواب ...
سی بریز پلازہ گرانے سے متعلق کیس ،سپریم کورٹ نے کراچی کنٹونمنٹ بورڈ کو جواب جمع کرانے کا حکم دیدیا

  

کراچی (ڈیلی پاکستان آن لائن)سی بریز پلازہ گرانے سے متعلق کیس میں سپریم کورٹ رجسٹری نے نیسپاک اور پاکستان انجینئرنگ کونسل کی رپورٹ کا جائزہ لے کر کراچی کنٹونمنٹ بورڈ کو جواب جمع کرانے کا حکم دیدیا،عدالت نے کہاکہ کراچی کنٹونمنٹ بورڈ رپورٹ کا جائزہ لے اور جامع جواب جمع کرایا جائے،عدالت نے کہاکہ واضح طور پر بتایا جائے کہ عمارت گرائی جائے یا نہیں، عدالت نے کراچی کنٹونمنٹ بورڈ کو 2 ہفتوں میں جواب جمع کرانے کا حکم دیدیا۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ کراچی رجسٹری میں سی بریز پلازہ گرانے کے معاملے پر سماعت ہوئی،چیف جسٹس گلزاراحمد کی سربراہی میں بنچ نے سماعت کی،سی بریز پلازہ کے ناقص ہونے سے متعلق نیسپاک کی رپورٹ عدالت میں پیش کردی گئی،چیف جسٹس گلزاراحمد نے کہاکہ سی بریز عمارت 40 سال سے خالی پڑی ہے،میئرصاحب، آپ کو سی بریز پلازہ پر تشویش ہونی چاہیے، میئرکراچی وسیم اخترنے کہاکہ مجھے تشویش ہے پتہ نہیں ایسی کتنی عمارتیں ہیں۔

چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ رپورٹ دیکھ لی اب عمارت کو قائم رکھنے کا حکم نہیں دے سکتے، عمارت گر گئی تو الزام سپریم کورٹ پر آئے گا، چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ 40سال سے عمارت خالی رکھنے کی کیا وجہ ہے، سی بریز پلازہ کی رہائشی خواتین نے موقف اختیار کیا کہ یہ رہائشی نہیں ہسپتال کی زمین تھی،چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ پھر ہسپتال کیسے بند ہوگیا، اس کی وجہ بھی تو بتائیں، افسوس ہے کہ ایسے معاملات بھی ہمارے سامنے آرہے ہیں، چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ ایم اے جناح روڈ پر ایسی عمارت کا ہونا کیا خطرناک نہیں؟ ۔مالکان سی بریزنے کہا کہ سی بریز پلازہ کی عمارت ٹیڑھی نہیں ہے۔

عدالت نے نیسپاک اور پاکستان انجینئرنگ کونسل کی رپورٹ کا جائزہ لے کر کراچی کنٹونمنٹ بورڈ کو جواب جمع کرانے کا حکم دیدیا،عدالت نے کہاکہ کراچی کنٹونمنٹ بورڈ رپورٹ کا جائزہ لے اور جامع جواب جمع کرایا جائے،عدالت نے کہاکہ واضح طور پر بتایا جائے کہ عمارت گرائی جائے یا نہیں، عدالت نے کراچی کنٹونمنٹ بورڈ کو 2 ہفتوں میں جواب جمع کرانے کا حکم دیدیا۔

مزید :

قومی -علاقائی -سندھ -کراچی -