سندھ حکومت نے وعدے کے باوجود کراچی کو آج تک ایک روپیہ بھی نہیں دیا:وسیم اختر

سندھ حکومت نے وعدے کے باوجود کراچی کو آج تک ایک روپیہ بھی نہیں دیا:وسیم اختر
سندھ حکومت نے وعدے کے باوجود کراچی کو آج تک ایک روپیہ بھی نہیں دیا:وسیم اختر

  

کراچی(ڈیلی پاکستان آن لائن)میئر کراچی وسیم اختر نے کہا ہے کہ سندھ حکومت نے سپریم کورٹ میں بتایا ہے کہ چارج پارکنگ کے ایم سی کے پاس ہے، تو میں پوچھتا ہوں کہ کیا چارج پارکنگ سے کراچی چلے گا؟سندھ حکومت نے وعدے کے باوجود کراچی کو آج تک ایک روپیہ بھی نہیں دیا ہے۔

میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے میئر کراچی وسیم اختر نے کہا کہ عدالت نے وزیراعلی سندھ سید مراد علی شاہ کو پابند کیا ہے کہ شہر کے مسئلے جلد حل کیے جائیں، چیف جسٹس نے سوال کیا کہ کے ایم سی کیسے چلے گی؟ کراچی کے 60 فیصد وسائل پر وفاق، 30فیصد پر صوبائی حکومت کا قبضہ ہے،سندھ حکومت نے کہا تھا کہ کراچی سے جتنا ٹیکس جمع ہوگا اس سے شہر کو اس کا حصہ دیا جائے گا لیکن صوبائی حکومت نے آج تک ایک روپیہ بھی نہیں دیا،شہر قائد میں بڑے ترقیاتی منصوبے شروع کرنے کےلیےمیرے پاس فنڈزنہیں ہیں۔انہوں نےکہاکہ میں چارسال سےآوازبلندکر رہا ہوں مگر مجھے اختیارات نہیں دیئے جارہے ہیں،میرے پاس کراچی کے لوگوں کا مینڈیٹ ہے اس لیے اب تک مئیر کے عہدے پر قائم ہوں،بلدیاتی ادارے ہی اصل جمہوریت ہیں۔

مئیر کراچی نے کہا کہ کسی نے بھی یہ نہیں پڑھا کہ میرے پاس کتنے اختیارات ہیں؟وزیر اعلی سندھ ایک میٹنگ بلا لیں جس میں انہیں بتاؤں گا کہ کہاں سے ریونیو پیدا کروں گا، کراچی کے چھ اضلاع میں کراچی میٹروپولیٹن کارپوریشن نے کام کیا ہے،70 سے 80 لاکھ سکوائر فٹ پر ہم نے سڑکیں تعمیر کی ہیں۔

مزید :

علاقائی -سندھ -کراچی -