پاکستان سمیت دنیا بھر میں کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کیلئے جلسے، جلوس، ریلیاں، بھارت مقبوضہ وادی میں ظلم کر کے آگ سے کھیل رہا ہے: عارف علوی 

      پاکستان سمیت دنیا بھر میں کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کیلئے جلسے، جلوس، ...

  

   اسلام آباد،کراچی،لاہور،مظفرآ باد (جنرل رپورٹر،سٹاف رپورٹرز،نیوز ایجنسیاں) پاکستان میں کشمیر میں بھارتی بدترین مظالم کو دنیا کے سامنے اجاگر کرنے کیلئے یوم یکجہتی کشمیر جوش و جذبے سے منایا گیا۔ جمعہ کو یوم یکجہتی کشمیر کے موقع پر حکومت پاکستان کی جانب سے عام تعطیل کا اعلان کیا گیا ، ملک بھر میں یوم یکجہتی کشمیر کی مناسبت سے تقاریب کا انعقاد کیا گیا،مظفرآباد میں یکجہتی کشمیر کی مرکزی تقریب کوہالہ پل پر ہوئی جس میں طلبہ و طالبات، سیاسی جماعتوں اور سول سوسائٹی کے نمائندگان نے انسانی ہاتھوں کی زنجیر بنا کر کشمیر کی آزادی کے لئے جدوجہد جاری رکھنے کے عزم کا اظہار کیا، اس موقع پر چاروں صوبوں سمیت گلگت بلتستان کے وزرا نے خصوصی شرکت کی۔ ملک بھر میں صبح 10 بجے ایک منٹ کی خاموشی بھی اختیار کی گئی، اسلام آباد، مظفرآباد سمیت چاروں صوبائی دارالحکومتوں میں سیمینارز اور جلسے جلوسوں کا اہتمام کیا  گیا ۔ شہرِ قائد میں عوام کی بڑی تعداد نے اس موقع پر کشمیری بھائیوں کو یاد رکھا اور اپنے جذبات کا اظہار کیا۔ کسی نے اپنی نیک تمناوں کا اظہار کیا تو کسی نے بھارتی مظالم کو بزدلی قرار دیا، شہرقائد کے باسیوں   نے کہا کہ  بھارت کشمیر پر اپنا قبضہ برقرار نہیں رکھ سکتا، اسے آج یا کل کشمیر سے خوار ہو کرنکلنا پڑے گا۔ شہریوں کا کہنا تھا  کہ وہ دن دور نہیں جب جنت سا کشمیر پاکستان بن کر سرخرو ہو گا۔ لاہور عجائب گھر میں کشمیری ہنرمندوں کے بنائے ہوئے فن پاروں کی نمائش کا انعقاد کیا گیا صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی  نے کہا  ہے کہ بھارت آگ کے ساتھ کھیل رہا ہے، اس نے اپنی تباہی کے بٹن دبا دیے ہیں، کشمیری اپنے ساتھ ہونیوالے مظالم کبھی نہیں بھول سکتے، مقبوضہ وادی میں آبادی کا تناسب بدلنے کے بھارتی اقدامات خطرناک ہیں،   مقبوضہ کشمیر کے عوام مسلسل قربانیاں دیرہے ہیں،  پاکستان  نے کشمیریوں کیساتھ بھارت میں بسنے والے مسلمانوں کیلئے بھی آوازاٹھائی ہے،بھارت مقبوضہ کشمیرمیں انٹرنیٹ سمیت پابندیوں سے ظلم وستم کوچھپانہیں سکتا، بھارت کی تقسیم کے وقت کشمیرکے معاملے پرڈوگرا راج نے سازش کی، ریڈکلف ایوارڈپاکستان کیخلاف تھا، اگرسیزفائرنہ ہوتاتو ہم لوگ چندروزمیں کشمیر آزاد کرا لیتے، آزادی کی جدوجہد کرنیوالوں کوخراج تحسین پیش کرتے ہیں، 2018کی اقوام متحدہ رپورٹ میں مقبوضہ کشمیرمیں بھارتی مظالم کواجاگرکیاگیا، اقوام عالم مقبوضہ کشمیرمیں بھارتی مظالم سے بخوبی آگاہ ہیں۔ جمعہ کو آزاد جموں و کشمیر کی قانون ساز اسمبلی سے خطاب کرتے ہوئے صدر مملکت نے کہا  کہ آج پاکستان کی حکومت اور عوام مقبوضہ جموں و کشمیر کی مجبور عوام کے ساتھ یوم یکجہتی کشمیر منارہے ہیں، ہم ہرسال اس دن کو مناتے ہیں اور خراج تحسین پیش کرتے ہیں ان لوگوں کو جو اس سلسلے میں مسلسل قربانیوں دے رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کشمیر کی عوام 1947 سے بھارت کے غاصبانہ، جابرانہ قبضے میں ہے، اس سے قبل بھی برطانوی سامراج سے قبل ڈوگرا حکومت اور جس انداز سے کشمیر کو بیچا گیا یہ ایک مسلسل لمبی کہانی ہے۔ صدر مملکت کا کہنا تھا کہ جب یہاں آتا ہوں تو بہت سے لوگ ایسے ملتے ہیں جن کے آبا اجداد اس جدوجہد میں شامل تھے جن میں سے 13 افراد اس اسمبلی میں موجود ہیں جن کے والدین نے اس تاریخ میں بہت بڑا کردار ادا کیا۔ ان کا کہنا تھا کہ سردار ابراہیم نے 24 اکتوبر 1947 کو قرار داد پیش کی، بھارت کے قبضے کا سلسلہ وہاں سے بھی شروع ہوتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مجھے عزیز ہے کہ ان سارے معاملات میں پاکستان کے سیاستدانوں نے مسلسل یکجہتی کا اظہار کیا ہے اور اگر کوئی کوتاہی ہوتی ہے تو دنیا کے پلیٹ فارم پر اس کے اثرات اچھے نہیں ہوتے  وفاقی وزیر ہوا بازی غلام سرور خان نے کہا ہے کہ عالمی برادری کے ضمیر مردہ ہوچکے ہیں 1949 کی قرار داد پر آج تک عملد رآمد نہ ہوسکا،پی ڈی ایم کی تحریک آخری سانسیں لے رہی ہے،انکے قول و فعل میں تضاد ہے،پہلے استعفوں سے انحراف، ضمنی الیکشن میں حصہ لے لینا، پھر سینیٹ الیکشن لڑنے کا فیصلہ،26مارچ جب پاکستان عالمی سازشوں کا شکارہوا پی ڈی ایم نے اس دن لانگ مارچ کا اعلان کیا، پی ڈی ایم ملک دشمن ایجنڈے پر کاربند ہے،کوئی کسی غلط فہمی میں نہ رہے پاکستان کی قیادت مضبوط ہاتھوں میں ہے،کشمیر بنے گا پاکستان کا خواب ضرور شرمندہ تعبیر ہوگا، ان خیالات کا اظہار انھوں نے مقامی ہوٹل میں   یوم یکجہتی کشمیر کے سلسلے میں منعقدہ تقریب سے بحیثیت مہمان خصوصی خطاب کے دوران کیا،وزیر اطلاعات سینیٹر شبلی فراز نے کہا ہے کہ 5فروری دنیا بھر کے کشمیریوں کے ساتھ یکجہتی کا ثبوت ہے، وزیراعظم نے عالمی سطح پر کشمیریوں کے لیے موثر طور پر آواز اٹھائی ہے،کشمیر سے متعلق اقوام متحدہ کی قراردادوں پر عملدرآمد کرایا جائے۔لوک ورثہ میں یوم یکجہتی کشمیر کے حوالے سے منعقدہ تصویری نمائش کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اطلاعات سینیٹر شبلی فراز نے کہا کہ پانچ فروری کے حوالے سے تصویری نمائش میں شرکت کو قابل فخر سمجھتا ہوں،5فروری شہید کشمیریوں اور ان کی قربانیوں کی یاد میں منایا جاتا ہیچیئرمین پارلیمانی کمیٹی برائے کشمیر شہریار خان آفریدی نے عالمی برادری، نومنتخب امریکی صدر جو بائیڈن اور اقوام متحدہ سے مطالبہ کیا کہ وہ بھارت پر زیر حراست کشمیری سیاسی قیدیوں کو فوری رہا کرنے کیلئے دباؤ ڈالیں،بھارت نے کشمیریوں کو اپنے ہی گھروں میں قید رکھ کر کشمیر کو دنیا کی سب سے بڑی جیل بنا دیا ہے،بھارت نے کشمیر میں غیر ملکی مداخلت کے بیانیہ پر عالمی اعتماد کھو دیا ہے۔وزیر اعظم عمران خان کے ساتھ کوٹلی کیلئے روانگی سے قبل یوم یکجہتی کشمیر کے حوالے سے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے چیئرمین پارلیمانی کمیٹی برائے کشمیرشہریار آفریدی نے کہا کہ سید علی گیلانی، مسرت عالم بھٹ، میر واعظ عمر فاروق، سید شبیر شاہ، یاسین ملک، اشرف صحرائی، آسیہ اندرابی، ناہیدہ نسرین، فہمیدہ صوفی اور دیگر رہنما جو ہندوستان سے آزادی کی جنگ لڑ رہے ہیں ان تمام سیاسی قیدیوں کو فوری طور پر رہا کیا جانا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ 5 اگست 2019 کو بھارت نے آرٹیکل 370 اور 35-A کا خاتمہ کرکے اقوام متحدہ کے بین الاقوامی انسانی حقوق کے قوانین اور چارٹر کی خلاف ورزی کی جس پر مودی کی ہندتوا حکومت کو قانون کے تحت سزا دینا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ یوم یکجہتی کشمیر کے موقع پر بھارت کی قابض حکومت نے جنوبی کشمیر میں انٹرنیٹ اور مواصلاتی ناکہ بندی نافذ کی. انہوں نے اس ناکہ بندی کو فوری طور پر اٹھانے کا بھی مطالبہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ ہندوتوا حکومت کی جانب سے لگائے گئے اس بلیک آٹ کا مقصد معلومات کو روکنا اور کشمیری عوام کو باقی دنیا سے مواصلاتی طور پر تنہا رکھنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان کی غیر قانونی قابض حکومت نے کشمیریوں کو ان کے اپنے ہی گھروں میں قید رکھ کر کشمیر کو دنیا کی سب سے بڑی جیل بنا دیا ہے۔ انہوں نے بائیڈن انتظامیہ پر زور دیا کہ وہ ہندوتوا منصوبے کے تحت جاری کشمیریوں کی نسل کشی اور ان کے مکانات اور املاک کو تباہ کرنے میں بھارتی فورسز کی جانب سے آر ڈی ایکس کے استعمال پر فوری طور پر پابندی لگا ئے جو بین الاقوامی قوانین کی خلاف ورزی ہے۔ انہوں نے امریکی انتظامیہ پر زور دیا کہ انٹرنیٹ کرفیو اور مواصلاتی بلیک آٹ کو فوری طور پر ختم کروائے اور سیاسی رہنماں کی رہائی اور بھارتی مقبوضہ کشمیر میں ہندوستان کی غیر قانونی و یکطرفہ کارروائیوں کا خاتمہ یقینی بنائے۔ بھارتی مقبوضہ کشمیر میں بھارت کو انسانیت کے خلاف اپنے جرائم کا جوابدہ بنانے کے لئے مزید فعال پارلیمنٹرینز کے کردار پر زور دیتے ہوئے شہریار آفریدی نے کہا کہ مسئلہ کشمیر کا فوری حل اقوام متحدہ کے تمام ممبر ممالک کی اجتماعی ذمہ داری ہے۔

یوم اظہا ر یکجہتی

مزید :

صفحہ اول -