جیالوں کاخوف ،بھٹو کی سالگرہ کا کیک بند کمرے میں کاٹا گیا

جیالوں کاخوف ،بھٹو کی سالگرہ کا کیک بند کمرے میں کاٹا گیا

  

لاہور(شہزاد ملک) قائد عوام پیپلز پارٹی کے بانی چیرمین شہید زوالفقار علی بھٹو کی 88ویں سالگرہ کا کیک پہلی بار جیالوں کے خوف سے پنڈال میں کاٹنے کی بجائے ایک بند کمرے میں کاٹا گیا جس کی وجہ سے پیپلز پارٹی کے جیالے کارکنان نے بلاول ہاؤس لاہور میں وہاں پر موجود پیپلز پارٹی کی لیڈر شپ اور تقریب کی انتظامیہ کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا اور ان کے خلاف بھرپور نعرے بازی کرتے ہوئے کہا کہ ایسا پہلی مرتبہ ہوا ہے کہ جیالے اپنے محبوب قائد شہید زوالفقار علی بھٹو کی سالگرہ کا کیک کاٹنے اور کھانے سے محروم ہو گئے ہیں ہم تو یہاں پر اپنے قائد کی سالگرہ کا کیک کاٹنے کے لئے آئے تھے وڈیروں اور جاگیرداروں کی تقریریں سننے کے لئے نہیں ۔تفصیلات کے مطابق گذشتہ روز قائد عوام شہید زوالفقار علی بھٹو کی 88ویں سالگرہ کی مناسبت سے لاہور ‘جنوبی پنجاب اور سینٹرل پنجاب کی مشترکہ تقریب بلاول ہاؤس لاہور میں منعقد کی گئی تھی اور اس سلسلے میں بلاول ہاؤس میں ایک وسیع پنڈال بنایا گیا تھا لیکن اس کے لئے کوئی باقاعدہ سٹیج نہیں بنایا گیا تھا اور اس کی بجائے کرسیوں پر بھٹو شہید کی تصاویر رکھ کر ان کی صدارت کا ماحول بنایا گیا تھا اور پیپلز پارٹی کی لیڈر شپ عوام کی طرف آگے والی کرسیوں پر بیٹھی تھی جوں جوں تقریب اپنے اختتام کے قریب پہنچ رہی تو جیالے سٹیج کے ارد گرد جمع ہونا شروع ہو گئے تھے تاکہ کیک کاٹنے کی تقریب میں شرکت کر سکیں اس صورت حال کو دیکھتے ہوئے سٹیج سیکرٹری ان جیالوں کو بار بار پیچھے ہٹنے کے لئے کہتے رہے لیکن جیالوں نے سٹیج خالی نہ کیا جس کی وجہ سے سٹیج سیکرٹری کو پیپلز پارٹی کی لیڈر شپ کو جیالوں سے یہ کہہ کر پچھلے دروازے کی طرف سے ایک بند کمرے میں کیل کاٹنے کے لئے نکالنا شروع کردیا کہ ان قائدین کی گاڑیاں درمیان میں کھڑی ہیں یہ وہ ہٹانے کے لئے جا رہے ہیں لہذا آپ ان کے پیچھے نہ جائیں ادھر ہی رکیں کیک ادھر ہی آئے گا لیکن جیالوں نے ان کی ایک نہ سنی اور شامیانہ گراتے ہوئے اپنے لیڈروں کے پیچھے بھاگنا شروع کردیا لیکن ان کے ساتھ کمرے تک جانے میں کامیاب نہ ہو سکے جس کی وجہ سے ان جیالوں نے اپنی لیڈر شپ کے خلاف نعرے بازی شروع کردی اور احتجاج کرنا شروع کردیا تاہم اسی دوران کچھ جیالے چائے سموسے اور جلیبیوں پر بھی جھپٹ پڑے جن کو یہ چیزیں نہیں ملیں انہوں نے بھی خوب نعرے بازی کی اور کچھ جیالے کارکنان نے تو جہاں سے کھانے پینے کی اشیاء لائی جا رہی تھیں وہاں پر ہی ہلا بول دیا ۔

مزید :

صفحہ آخر -