پاکستان اور سری لنکا کے درمیان دہشتگردوں کی مالی امداد روکنے اور دفاعی تعاون سمیت 8معاہدوں پر دستخط

پاکستان اور سری لنکا کے درمیان دہشتگردوں کی مالی امداد روکنے اور دفاعی ...

  

 کولمبو(اے این این، ما نیٹرنگ ڈیسک ) پاکستان اور سری لنکا کے درمیان دفاع ،انسداد دہشتگردی اور سیکیورٹی سمیت8معاہدوں پر دستخط،سالانہ تجارتی حجم ایک ارب ڈالر تک لے جانے کا عزم۔منگل کو سری لنکا کے دارالحکومت کولمبو میں وزیر اعظم نواز شریف نے سری لنکا کے صدر متھری پالا سری سینا سے ملاقات کی۔اس موقع پر دونوں ملکوں کے درمیان وفود کی سطح پر مذاکرات بھی ہوئے جن میں وزیر اعظم نواز شریف کی معاونت وزیر تجارت خرم دستگیر ، دفاعی پیداوار کے وزیر رانا تنویر حسین ، خارجہ امور کے بارے میں وزیراعظم کے معاون خصوصی طارق فاطمی اور قومی سلامتی کے مشیر ناصرخان جنجوعہ نے کی۔اس موقع پر دونوں ملکوں کے درمیان 8معاہدوں اور باہمی مفاہت کی یادداشتوں پر دستخط کئے گئے ۔دونوں ملکوں کے درمیان دفاع،سلامتی،انسداد دہشتگردی،تجارت،تعلیم ،صحت ، سائنس و ٹیکنالوجی اور جیولری سمیت 8معاہدوں پر دستخط کئے گئے۔ان معاہدوں میں دہشتگردوں کی مالی معاونت روکنے کا معاہدہ بھی شامل ہے۔ملاقات میں پاکستان اور سری لنکا کے درمیان باہمی تجارت کو فروغ دینے اور باہمی تجارتی حجم کو ایک ارب ڈالر تک لے جانے کا بھی فیصلہ کیا گیا ہے ۔اس موقع پر وزیر اعظم نواز شریف نے اپنے خطاب میں کہا کہ پاکستان اور سری لنکا کے درمیان تجارت کے فروغ کے وسیع مواقع موجود ہیں ۔ہماری حکومت دوطرفہ تجارتی حجم کوایک ارب ڈالر سالانہ تک لے جانے کے لئے پر عزم ہے۔انھوں نے کہا کہ پاکستان دفاعی شعبے میں بھی سری لنکا کے ساتھ تعاون کر رہا ہے دونوں ملک مل کر دہشتگردوں کی مالی معاونت روکنے کے لئے مل کر اقدامات کریں گے۔انھوں نے کہا کہ پاکستان اور سری لنکا باہمی تعلقات کو فروغ دینے کیلئے پر عزم ہیں اہم عالمی اور علاقائی امور پر دونوں ملکوں کا نقطہ نظر یکساں ہے۔انھوں نے کہا کہ میرے دورہ سے دونوں ملکوں کے دوستانہ تعلقات کو مزید فروغ ملے گا۔انھوں نے کہا کہ پاکستان سری لنکا کو تجارت کے شعبے میں پسندیدہ ترین قوم کا درجہ دینے کے لئے تیار ہے۔نواز شریف نے سری لنکن صدر کو پاکستان کا دورہ کرنے کی بھی دعوت دے دی ۔ نوازشریف کاکہنا تھاکہ دونوں ملکوں کے درمیان معاہدوں سے منی لانڈرنگ اور ٹیرر فنانسنگ کی روک تھام میں بھی مدد ملے گی۔ سری لنکا کے ساتھ دفاع کے شعبے میں تعاون کررہے ہیں ، دہشت گردی کے خاتمے کے لیے دونوں ملک کردار ادا کریں گے ۔وقت کا تقاضہ ہے کہ دونوں ملک دہشت گردوں کی مالی معاونت روکنے کے اقدام میں مل کر کام کریں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان اورسری لنکا برادردوست ملک ہیں اور دورہ سری لنکا مضبوط تعلقات کا مظہر ہے جبکہ دونوں ملکوں کے تعلقات باہمی اعتماد پر مبنی ہے،دونوں ممالک مشترکہ مشقوں کے انعقاد پر تعاون کریں گے، سائنس، ٹیکنالوجی، زراعت کے شعبوں میں بھی تعاون کو فروغ دیں گے۔اس موقع پر سری لنکا کے صدرمتھری پالا سری سینا نے کہا کہ ان کا ملک پاکستان کے ساتھ تعلقات کو خصوصی اہمیت دیتا ہے۔ہمارے پاکستان کے ساتھ گہرے اور دیرینہ مراسم ہیں جن پر ہمیں فخر ہے۔پاکستان خطے کا اہم ملک ہے ہم دوطرفہ تعلقات کو تما م شعبوں میں مزید فروغ دینے کے لئے پرعزم ہیں۔انھوں نے کہا کہ سری لنکاکی حکومت اور عوام باہمی تعلقات کو فروغ دینے میں نواز شریف کے کردار کو قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں ۔ نواز شریف نے اپنے ملک کے اندر سیاسی استحکام کو فروغ دیا ہے۔اس سے پہلے کولمبو میں وزیراعظم نواز شریف اور سری لنک صدر کی ملاقات بھی ہوئی جس میں دو طرفہ تعلقات پر بات چیت کی گئی ، ایوان صدر آمد پر وزیراعظم نواز شریف کے اعزاز میں استقبالیہ تقریب منعقد کی گئی ، توپوں کی سلامی دی گئی اور گارڈ آف آنر بھی پیش کیا گیا ۔ جبکہ وزیراعظم نواز شریف نے کولمبو میں ’’ایک ملک‘‘کے نام سے پاکستانی مصنوعات کی نمائش کا افتتاح کرتے ہوئے کہا ہے کہ ٹڈاپ کی نمائش کا انعقاد مضبوط تعلقات کا آئینہ دار ہے ، نجی شعبے کے اشتراک سے باہمی تجارت کو فروغ ملے گا،نمائش میں 100 سے زائد پاکستانی کمپنیاں شریک ہوں گی،ٹیکسٹائل کے علاوہ آلات جراحی ودیگراشیا کی بھی نمائش ہوگی،نمائش کا مقصد دو طرفہ تعلقات میں خوشحالی کے نئے باب کااضافہ کرنا ہے ۔ نواز شریف نے کہا کہ ہم پاکستان اور سری لنکا کے تعلقات میں اہم پیش رفت کرنے جارہے ہیں ،دونوں ملکوں کا باہمی تجارت کا ہدف ایک ارب ڈالر ہے، دونوں ملکوں کے درمیان سمجھوتوں سے دو طرفہ تعاون کو فروغ ملے گا۔ نوازشریف نے کہا کہ ٹڈاپ کولمبو میں 15سے 17جنوری تک پاکستانی مصنوعات کی نمائش کر رہا ہے، ٹڈاپ کی نمائش کا انعقاد مضبوط تعلقات کا آئینہ دار ہے ، نجی شعبے کے اشتراک سے باہمی تجارت کو فروغ ملے گا اورنمائش میں 100 سے زائد پاکستانی کمپنیاں شریک ہوں گی،ٹیکسٹائل کے علاوہ آلات جراحی اوردیگراشیا کی بھی نمائش ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ نمائش کا مقصد دو طرفہ تعلقات میں خوشحالی کے نئے باب کااضافہ کرنا ہے۔انہوں نے کہا کہ سری لنکا بھی پاکستان میں ایسی نمائش کا اہتمام کرے، آزاد تجارت کے معاہدے میں خدمات اور سرمایہ کاری کے شعبے کو شامل کرنے پر اتفاق کیا ہے، دونوں ملکوں کے درمیان سمجھوتوں سے دو طرفہ تعاون کو فروغ ملے گا۔ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے سری لنکا کے وزیراعظم رنیل وکرما سنگھے نے کہا کہ پاکستان کی طرف سے نمائش کا انعقاد خوش آئند ہے،نمائش کے انعقاد سے باہمی تجارت کو فروغ ملے گا، تجارت کے فروغ میں نجی شعبے کا کردار کلیدی ہے،پاکستان اور سری لنکا کو تجارتی مواقع سے فائدہ اٹھانا چاہیے، پاکستان تجارت کیلئے ایک بڑی منڈی ہے، پاکستان کے ذریعے وسط ایشیائی ملکوں تک تجارت کی جا سکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعظم نواز شریف کا دورہ سری لنکا انتہائی اہمیت کا حامل ہے، دونوں ملکوں میں طے پانے والے سمجھوتوں پر تیزی سے عمل کرنا ہو گا۔'دزیراعظم نواز شریف نے انسیٹیوٹ آف انٹر نیشنل ریلیشنز اینڈ اسٹرٹیجک اسٹڈیز میں خطاب کرتے ہوئے کہا پاکستان اور سری لنکا کے درمیان گہرے دوستانہ تعلقات ہیں۔ دہشت گردی ، توانائی سمیت مختلف چیلنجز کا مقابلہ کر رہے ہیں۔ ان کا مزید کہنا تھا 30 سال سے دہشت گردی کیخلاف نبرد آزما ہیں۔ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں بڑی کامیابیاں حاصل کیں اور دہشت گردوں کی پناہ گاہیں تباہ کر دی ہیں۔ دہشت گردوں کے خلاف بلا امتیاز کارروائی کی جا رہی ہے۔ توانائی بحران سمیت مختلف چیلنجز کا مقابلہ کر رہے ہیں۔ وزیراعظم نواز شریف نے اپنے خطاب میں کہا رواں سال اقتصادی شرح نمو 5 فیصد تک پہنچ گئی ہے اور بجٹ خسارے کو کم کر کے 6 فیصد پر لے آئے ہیں۔ عالمی ادارے پاکستان کی معیشت کی بحالی کا اعتراف کر رہے ہیں۔ اقتصادی راہداری منصوبہ خطے کے لیے گیم چینجر ثابت ہو گا۔ بھارت سے خوشگوار تعلقات کے لیے نئی دلی کا دورہ کیا تھا کیونکہ تصادم نہیں امن ہی واحد راستہ ہے۔ بھارت کو بتایا کہ ہمیں غربت، جہالت اور بیروزگاری سے لڑنا ہے۔ وزیراعظم نواز شریف نے سری لنکا کے تاجروں کو پاکستان میں سرمایہ کاری کی دعوت دیتے ہوئے کہا پاکستان سرمایہ کاری کیلئے پْرکشش ملک ہے

مزید :

صفحہ اول -