ٹریفک نظام کی بہتری کیلئے پنجاب بھر میں وارڈن سسٹم نافذ کرنے کا فیصلہ

ٹریفک نظام کی بہتری کیلئے پنجاب بھر میں وارڈن سسٹم نافذ کرنے کا فیصلہ

  

 لاہور(وقائع نگار خصوصی ) صوبے بھر میں ٹریفک مینجمنٹ کے نظام میں بہتری کے لئے وارڈن سسٹم کے نفاذ ، پولیس یونیفارم کے رنگ میں تبدیلی اور ڈالفن فور س کا جائزہ لینے کے لئے ایک اعلیٰ سطحی اجلاس انسپکٹر جنرل پولیس پنجاب مشتاق احمدسکھیرا کی زیر صدارت سنٹرل پولیس آفس لاہور میں منعقد ہوا ۔اجلاس میں ایڈیشنل آئی جی آپریشنز/انویسٹی گیشنزکیپٹن (ر) عارف نواز، ایڈیشنل آئی جی ویلفےئر اینڈ فنانس سہیل خان، ایڈیشنل آئی جی ٹریفک رائے الطاف حسین، سی سی پی او لاہور کیپٹن (ر) امین وینس، ڈی آئی جی ہیڈ کوارٹرزفاروق مظہر، ڈی آئی جی ویلفےئر جان محمد،ڈی آئی جی آپریشنز لاہورڈاکٹر حیدر اشرف، اے آئی جی آپریشنز وقار عباسی، اے آئی جی فنانس حسین حبیب امتیازاور اے آئی جی لاجسٹکس ہمایوں بشیر تارڑ کے علاوہ سی پی او کے دیگر سینےئر افسران نے شرکت کی۔اس موقع پر ایڈیشنل آئی جی ٹریفک رائے الطاف حسین نے آئی جی پنجاب کو بتایا کہ 6اضلاع لاہور ، ملتان، فیصل آباد، گوجرانوالہ ،راولپنڈی اور سیالکوٹ میں ٹریفک وارڈن سسٹم شروع کر دیا گیا ہے جو انتہائی کامیابی سے جاری ہے اور حکمت عملی کے مطابق موجودہ ٹریفک پولیس کے 4ہزار 7سو 87اہلکاروں کو ٹریفک وارڈنز کا درجہ دے دیا گیا ہے جبکہ ایک ہزار نئے وارڈنز کی بھرتی کے لئے سمری حکومت پنجاب کو بھیج دی گئی ہے جس کی منظوری کے بعد پنجاب میں وارڈنز کی کل نفری 5ہزار 7سو 87ہو جائے گی اور انہیں باقی 30اضلاع میں بھی تعینات کر دیا جائے گا مگر وارڈنز کا یونیفارم اور سروس سٹرکچر وہی رہے گا۔اجلاس میں پولیس یونیفارم کے رنگ میں تبدیلی کے لئے دو رنگوں کو شارٹ لسٹ کیا گیا اور یہ فیصلہ کیا گیا کہ ان کے Paternتیار کرنے کے بعد حتمی فیصلہ کیا جائے گا جبکہ یونیفارم کے تقدس اور اتھارٹی کو قائم رکھنے اور اس کے غیر مجاز استعمال کی روک تھام کے لئے اسے باقاعدہ رجسٹر کروانے کا فیصلہ بھی کیا گیا۔ڈالفن فورس کے لئے جاری ٹریننگ کے بارے میں بریفنگ دیتے ہوئے ڈی آئی جی آپریشنز، لاہور ڈاکٹر حیدر اشرف نے آئی جی کو بتایا کہ یہ فروری کے وسط تک مکمل کر لی جائے گی جبکہ ڈالفن فورس کے لئے خریدی گئی موٹر سائیکلوں کی انسپکشن کا مرحلہ مکمل کر لیا گیا ہے ۔ جبکہ ڈالفن فورس کے لئے نئے دفاتر کی تعمیر کا کام جاری ہے۔اجلاس میں5بڑے شہروں لاہور، گوجرانوالہ، فیصل آباد، راولپنڈی اور ملتان کے 141تھانوں میں پہلے مرحلے میں فرنٹ ڈیسک کے قیام کی رفتار کا جائزہ بھی لیا گیا اور اس سلسلے میں اے آئی جی فنانس حسین حبیب امتیاز نے آئی جی کو بتایا کہ ان دفاتر کی عمارتوں کی شکل ایک جیسی تعمیر کی جائے گی اور اس سلسلے میں تمام اضلاع کو ہدایات جاری کر دی گئی ہیں جبکہ ان سنٹر ز میں بھرتی NTSکے ذریعے کرنے کا فیصلہ بھی کیا گیا اور بھرتی کے وقت ماہر نفسیات کی خدمات بھی لینے کا فیصلہ کیاگیا۔

مزید :

علاقائی -