صوبائی وزیر ہاؤسنگ 6 کروڑ 8 لاکھ روپے فراڈ کرکے ہضم کر گئے،مدعی کا الزام

صوبائی وزیر ہاؤسنگ 6 کروڑ 8 لاکھ روپے فراڈ کرکے ہضم کر گئے،مدعی کا الزام
صوبائی وزیر ہاؤسنگ 6 کروڑ 8 لاکھ روپے فراڈ کرکے ہضم کر گئے،مدعی کا الزام

  

 لاہور(کرائم رپورٹر)پنجاب حکومت کے وزیر ہاوئسنگ 6کروڑ8لاکھ روپے فراڈ کرکے ہضم کرگئے ہیں انصاف فراہم کرنے والی پولیس کے افسر ایس ایس پی انو سٹی گیشن مدعی کے سامنے رکاوٹ بن گئے ہیں اور نہوں نے صو با ئی وزیر ہا ؤسنگ انکے والد اور بھا ئیوں کے خلاف 6کروڑ8لاکھ روپے ما لیت کا چیک ڈس آنر کا مقد مہ درج کروانے پر تفتیشی افسر کو ملز ما ن کی گر فتا ری سے نہ صر ف روک دیا ہے ۔بلکہ اس مقد مے میں ذاتی دلچسپی لیتے ہو ئے صو با ئی وزیر ہا ؤسنگ تنویر اسلم ، انکے والد محمد اسلم اور بھائی طاہر اسلم کو مقدمہ سے بے گناہ کردیا ہے جب کہ بچ جانے والے واحد ملزم کامران اسلم کو گرفتار کرنے سے مقامی پولیس کو روک دیاہے ،مد عی مقد مہ نے اس پولیس گردی کے خلاف چیف جسٹس سپریم کورٹ سے از خود نوٹس لینے کا مطا لبہ کرتے ہوئے ملز م کی گر فتار ی اور اپنے تحفظ کی اپیل کی ہے۔جب کہ آئی جی پولیس سے ایس ایس پی انو سٹی گیشن لاہور کی یکطرفہ کاروائی کے خلاف محکمانہ کاروائی کرنے کا مطالبہ کیاہے واضح رہے کہ 42 لارنس روڈ کے رہا ئشی میپل لیف سیمنٹ فیکٹر ی لمیٹڈ کے سیل مینجر محمد وسیم کی درخواست پر تھا نہ ریس کورس پولیس نے عدالت عالیہ کے حکم پر دو ما ہ بعد صو با ئی وزیر ہا وسنگ انکے والد اور بھا ئیوں کے خلاف 6کروڑ8لاکھ ما لیت کا چیک ڈس آنر کا مقد مہ درج کیا ہے۔ صو با ئی وزیر ہا وسنگ انکے والد اوربھائی میپل لیف سیمنٹ فیکٹر ی لمیٹڈ کے ڈسٹر ی بیوٹر تھے اور انھو ں نے اس کمپنی کی ادا ئیگی کے سلسلے میں انھیں یہ چیک دے رکھا تھا۔پو لیس کی جا نب سے یہ مقدمہ درج نہ کر نے پر مد عی پا رٹی نے عدا لت عا لیہ سے رجوع کر کے یہ مقد مہ تو درج کروا لیا ہے۔ مد عی کے مطا بق پو لیس ملز م کو گرفتار کرکے رقم دلوانے کی بجا ئے ملز م کو بچا نے کی کوششو ں میں مصروف ہے اوراس مقد مے کے سلسلے میں ایس ایس پی انو سٹی گیشن حسن مشتاق سکھیرا نے انھیں ملز م پا ر ٹی کی حما یت کر تے ہوئے ڈی ایس پی اچھر ہ را نا زاہد کو اپنے دفتر بلوا کر حکم دیا تھاکہ اگر مدعی پا ر ٹی مز ید کا رروائی سے با ز نہیں آتی تو آپ بھی ان کے خلا ف مقد مہ درج کر کے انھیں سبق سکھائیں۔جو کہ ان کے سا تھ سخت ناانصافی ہے۔اور پولیس حکمران پارٹی کے وز یر ان کے والد اور بھائیو ں کی وکا لت کر کے ان کی رقم ہڑ پ کر نا چا ہتی ہے۔ مدعی مقدمہ نے روزنامہ پاکستان سے گفتگوکرتے ہوئے بتایا ہے کہ آج کے جدید دور میں ناانصافی افسوس ناک ہے کسی شخص کاحکمران جماعت سے اگر کوئی مسئلہ ہے تو اسے انصاف ملنا ناممکن دکھائی دیتاہے وزیراعلیٰ پنجاب انصاف اور میرٹ کی بات کرتے تھکتے نہیں ہیں لیکن یہ ساراکچھ عام آدمی کے لئے نہیں ہے اگر کسی کا تعلق حکمران جماعت سے ہو تو پھر اسے ہی انصاف ملنا ممکن ہے اگرکسی نے حکمران جماعت کے من پسند شخص سے کچھ لینا ہو اور وہ بھی وہ حکومت کا وزیر بھی ہو تو ایسے شخص کے خلاف آواز اٹھانے والا خود جیل تو جا سکتاہے مگر اسے انصاف ملنا ممکن نہیں مدعی کے مطابق وہ ایک ایسی فیکڑی میں ملازم ہیں جو کہ عوام کی پراپرٹی ہے جس وزیر نے ہمارے ساتھ کروڑوں روپے کا فراڈ کیاہے شاید وہ یہ بھول گئے ہیں آج ان کی دولت اسی فیکڑی کی بدولت ہے ایک وقت ایسا بھی تھا جب اس وزیر کے والد اس فیکڑی میں بطور مینجر کام کرتے تھے بعد ازاں یہ مینجر اس فیکڑی کے ڈسٹری بیوٹر بن گئے اور اسے کروڑوں روپے کا چونا لگاگئے ہیں ہم کس سے انصاف طلب کریں ۔اس حوالے سے ایس ایس پی انو سٹی گیشن نے موقف اختیار کیاہے کہ وہ کسی کے ساتھ زیادتی نہیں کررہے میرٹ پر فیصلہ کیاجائے گاجن ملزمان کو اس مقدمہ سے بے گناہ کیاگیاہے وہ قانون کی زد میں نہیں آتے مدعی کی جانب سے ہراساں کرنے والی بات درست نہیں ۔

مزید :

علاقائی -