کرپٹ حکمرانوں سے نجات کیلئے شفاف پلیٹ فارم موجود ہے،مشتاق احمد خان

کرپٹ حکمرانوں سے نجات کیلئے شفاف پلیٹ فارم موجود ہے،مشتاق احمد خان

  

باجوڑایجنسی (نمائندہ خصوصی) جماعت اسلامی خیبر پختونخواہ کے امیر مشتاق احمد خان نے کہا ہے کہ تمام مسائل کا واحد حل ملک میں اسلامی نظام کا نفاذ ہے جس کے نفاذ کیلئے عوام جماعت اسلامی کا ساتھ دیں اورعوام کو کرپٹ حکمرانوں سے نجات کیلئے جماعت اسلامی کا شفاف پلیٹ فارم موجود ہے۔ ا ن خیالات کااظہار انہوں نے المرکز اسلامی عنایت کلے باجوڑ میں پیغام سیرت ﷺکانفرنس کے موقع پرخطاب کرتے ہوئے کیا ۔ اس موقع پر جماعت اسلامی فاٹا کے آمیر صاحبزادہ ہارون الرشید ، نائب امیر حاجی سردار خان ، آمیر جماعت اسلامی باجوڑ مولانا عبدالمجید ، مولانا وحید گل ، شعبہ تعلقا ت عامہ کے صدر عبدالحمید صوفی اور دیگر مقررین نے بھی خطاب کیا ۔ پیغام سیرت ﷺ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے صوبائی امیر جماعت اسلامی مشتاق احمد خان نے کہا کہ ملک میں اسلامی نظام کے نفاذ کے لیے اپنی جدوجہد جاری رکھی گیں کیونکہ پاکستان اسلام کے نام پرقائم ہوا ہے ۔ انھوں نے کہاکہ حکمرانوں کی جانب سے ملک کو سیکولر ریاست بنانے کا نعرہ جہالت پر مبنی ہے ۔ملک میں تمام مسائل کا واحد حل اسلامی نظام کا نفاذ ہے اور اس کیلئے جماعت اسلامی کی کوششیں جاری ہیں ۔ مشتاق احمد خان نے کہا کہ ملک میں وسائل کی کوئی کمی نہیں بلکہ ایک دیانت دارلیڈر کی ضرورت ہے۔جماعت اسلامی پر کوئی کرپشن کا داغ نہیں ہے۔ملک کے دیگر سیاسی پارٹیاں سرمایہ داروں اور جاگیر داروں کے کلب ہیں ان میں جمہوریت کا نام ونشان نہیں ہے ۔انہوں نے کہا کہ ملک میں پانی سے ہزاروں میگاواٹ بجلی بنائی جاسکتی ہے جس سے نہ صرف پاکستان بلکہ پورا ایشیاء مستفید ہوسکتاہے لیکن ملک پر نااہل حکمران قابض ہیں جس کیوجہ سے عوام کے مسائل میں روزبروز اضافہ ہوتاجارہاہے ۔انہوں نے کہا کہ وقت آگیاہے کہ ہم سب ملکر اسلامی اور خوشحال پاکستان کیلئے عملی جدوجہد شروع کریں اور حضور ﷺ کے بتائے ہوئے طریقوں پر اپنی زندگی گزاریں ۔ پیغا م سیرت ﷺکے موقع پر جماعت اسلامی باجوڑ شعبہ تعلقات عامہ کے صدر عبدالحمید صوفی نے قراردادیں پیش کرتے ہوئے حکومت سے مطالبہ کیا کہ فاٹا سے ایف سی آر کا خاتمہ کرکے شرعی نظام کا نفاذ ، آرٹیکل 247کا خاتمہ ، سپریم وہائی کورٹ کے دائرہ کار فاٹا تک بڑھانے ، 22ویں آئینی ترمیم کے مکمل حمایت کا اعلان ، فاٹا میں بلدیاتی الیکشن کا انعقاد ، سروے سے محروم زلزلہ متاثرین کا دوبارہ سروے کرنے ، بجلی لوڈشیڈنگ کا خاتمہ ، گریڈ اسٹیشن کی اپ گریڈیشن ، موٹرسائیکل پر عائد پابندی ختم کرنے ، تاجر برادر ی کے مشکلات ختم کرنے ، علاقائی پہرہ سسٹم ختم کرنے ، این سی پی گاڑیوں کے رجسٹریشن پر عائد پابندی اُٹھانے ، عنایت کلے بازار اور گردونواح کے گلی کوچہ جات پختہ کرنے اور جمعہ کے خطبہ کے دوران لوڈاسپیکرکے استعمال پر عائد پابندی اُٹھانے کے مطالبات شامل تھے ۔

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -