’وہ خاتون جسے شوہر کی مرضی سے 3 ماہ تک روزانہ ریپ کا نشانہ بنایا جاتا رہا تاکہ۔۔۔‘

’وہ خاتون جسے شوہر کی مرضی سے 3 ماہ تک روزانہ ریپ کا نشانہ بنایا جاتا رہا ...
’وہ خاتون جسے شوہر کی مرضی سے 3 ماہ تک روزانہ ریپ کا نشانہ بنایا جاتا رہا تاکہ۔۔۔‘

  

دمشق(مانیٹرنگ ڈیسک) شام سے جان بچا کر مغربی ممالک کی طرف جانے والی خواتین کے ساتھ جنسی زیادتی کے ہزاروں واقعات رونما ہو چکے ہیں مگر گزشتہ روز ایک انسانیت سوز خبر سامنے آئی ہے جس کے مطابق ایک شامی شخص کے پاس اپنی فیملی کو یورپ لیجانے کے پیسے نہیں تھے جو وہ سمگلروں کو ادا کر سکتا، اور اس نے قیمت کے بدلے میں اپنی بیوی ان سمگلروں کو دے دی اور انہیں کہا کہ تین ماہ تک اسے جنسی زیادتی کا نشانہ بنا لو اور بدلے میں ہمیں یورپ پہنچا دو۔ سمگلر تین ماہ تک اس خاتون کے ساتھ زیادتی کرتے رہے۔ وہ ننگ آدمیت شوہر بھی ان سمگلروں کے ساتھ مل کر اپنی بیوی کو جنسی زیادتی کا نشانہ بناتا رہا۔

یہ شخص اپنی فیملی کے ہمراہ بلغاریہ پہنچ چکا تھا جہاں اس کے پاس رقم ختم ہو گئی اور اس نے یہ انتہائی گھٹیا حرکت کر ڈالی اور اپنی 30سالہ بیوی کو درندوں کے حوالے کر دیا۔ امریکی اخبار نیویارک ٹائمز کے مطابق خاتون جو کہ 4بچوں کی ماں بھی ہے اب جرمنی کے شہر برلن میں رہائش پذیر ہے۔جرمنی میں اس کے شوہر کا ظلم سے پردہ اٹھنے پر جرمن عدالت نے اسے اپنی بیوی سے دور رہنے کا حکم دیا ہے تاہم خاتون خوفزدہ ہے کہ اس کا خاوند اسے قتل کر دے گا۔ پناہ گزین خواتین کا علاج کرنے والی ماہرنفسیات سوزان ہونے کا کہنا ہے کہ متاثرہ خاتون شدید ذہنی دباﺅ کا شکار ہے۔ ایک لمحے کے لیے وہ بالکل صحت مند نظر آتی ہے اور اگلے ہی لمحے اس کی حالت پھر ویسی ہی ہو جاتی ہے۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -