ہائی کورٹ نے شوگر ملز کی ایک سے دوسرے علاقے میں منتقلی روک دی ،سرکاری نوٹیفکیشن معطل

ہائی کورٹ نے شوگر ملز کی ایک سے دوسرے علاقے میں منتقلی روک دی ،سرکاری ...
ہائی کورٹ نے شوگر ملز کی ایک سے دوسرے علاقے میں منتقلی روک دی ،سرکاری نوٹیفکیشن معطل

  

لاہور(نامہ نگارخصوصی )لاہورہائیکورٹ نے شوگرملزکو ایک علاقے سے دوسری جگہ منتقل کرنے کی اجازت دینے کا حکومتی نوٹیفکیشن معطل کردیا۔عدالت نے یہ عبوری حکم امتناعی جاری کرتے ہوئے وفاقی حکومت ، وزیراعلی پنجاب اورسیکرٹری انڈسٹریز سمیت دیگر فریقین سے 25جنوری تک جواب طلب کرلیاہے،جسٹس عائشہ اے ملک نے میاں محموداحمداوراشرف شوگرملز سمیت دیگرشوگرملزمالکان کی جانب سے دائر درخواست پرسماعت کی۔ درخواست گز اروں کے وکلائ نے موقف اختیارکیا کہ صوبائی حکومت نے گزشتہ کئی سالوں سے پنجاب میں نئی شوگر ملیں لگانے پرپابندی عائدکررکھی ہے لیکن اب وزیراعلی میاں شہباز شریف نے اپنے رشتہ داروں کونوازنے کے لئے 4دسمبر2015 کوشوگرز ملز کوایک جگہ سے دوسری جگہ منتقل کرنے کی اجازت دے دی ہے ، اس نوٹیفکیشن کافائدہ شریف فیملی کے رشتہ دار شوگرملز مالکان کوہوگا،جن میں اتفاق شوگر ملز اورعبداللہ شوگرملزسمیت دیگر ملزشامل ہیں۔وکلا کا مزیدکہناتھا کہ اس نوٹیفکیشن کی آڑمیں یہ مالکان نئی جگہ پر جاکر ازسرنوتعمیر اورپلانٹ نصب کرنے سمیت دیگرامورسرانجام دیں گے۔ درخواست گزاروں کے وکلا کا کہناتھاکہ وزیراعلی پنجاب کایہ اقدام اپنے من پسند رشتہ داروں کونوازنے اوردوسروں سے امتیازی سلوک کے زمرے میں آتا ہے۔ انہوں نے عدالت سے استدعا کی کہ پنجاب حکومت کی جانب سے شوگر ملزکی ایک جگہ سے دوسری جگہ منتقل کرنے کے نوٹیفکیشن کوآئین سے متصادم قراردے کرکالعدم قراردیاجائے۔ عدالت نے دلائل سننے کے بعدشوگرملز کوایک علاقے سے دوسری جگہ منتقل کرنے کے حکومتی نوٹیفکیشن کومعطل کرتے ہوئے تاحکم ثانی شوگرز ملز کو ایک جگہ سے دوسری جگہ منتقل کرنے سے روک دیا جبکہ وفاقی حکومت ، وزیراعلی پنجاب میاں شہبازشریف اورسیکرٹری انڈسٹریز سمیت دیگرفریقین سے 25 جنوری کوجواب طلب کرلیاہے۔

مزید :

لاہور -