لیسکو اہلکاروں کے خلاف انکوائری کمیٹی کی رپورٹ پر ایکشن‘ترجمان لیسکو

لیسکو اہلکاروں کے خلاف انکوائری کمیٹی کی رپورٹ پر ایکشن‘ترجمان لیسکو

لاہور (کامرس رپورٹر)لاہور الیکٹرک سپلائی کمپنی(لیسکو)کے چیف ایگزیکٹو سید واجد علی کاظمی کی ہدایت پرسیفٹی رولز کی خلاف ورزی کرنے والے اہلکاروں کے خلاف انکوائری کمیٹی کی رپورٹ پر ایکشن لیتے ہوئے ان اہلکارو ں کو ہیڈ آفس اٹیچ کر دیا گیا ہے۔ اور متعلقہ ایس ایز اور ایکسئینز کو ہدایت جاری کی گئی ہیں کہ 15دن کے اندر ان اہلکاروں کے خلاف ڈسپلنری کیس کو مکمل کیا جائے اور ذمہ داران کو سخت سے سخت سزا دی جائے۔لیسکو کے مختلف سرکلز میں ہونے والے 9حادثات کی انکوائری کرنے والی ایچ ایس ای کمیٹی نے اپنی رپورٹ میں11ایسے اہلکاروں کو حادثات کا ذمہ دار ٹھہرایا تھا جن کی کوتاہی کے سبب لائن پر کام کرنے والے اہلکار مہلک حادثات کا شکار ہو کر زخمی یا انتقال کر گئے۔ان اہلکاروں میں1 ایس ایس اے ،2ایس ایس اوI-،1ایل ایس ،5ایل ایسI-اور 2ایل ایس II-شامل ہیں۔

لیسکو کے ترجمان کی جانب سے جاری ہونے والے اعلامیے کے مطابق لیسکوکے چیف ایگزیکٹو نے یہ واضح کر دیا کہ سیفٹی کے اصولوں کی خلاف ورزی قطعاً برداشت نہیں کی جائے گی چیف ایگزیکٹو سید واجد علی کاظمی کا کہنا ہے کہ ہم نے مالی سال 2017-18کو حفاظت کے وعدے کے سال کے طور پر شروع کیا تھااور یہ واضح کر دیا گیا تھا کہ لیسکو میں حادثات کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔

تاہم رواں سال چند حادثات پھر بھی پیش آئے۔باوجود اس کے کہ اس سال کے حادثات کی تعدادگزشتہ سال کے مقابلے میں بہت کم ہے مگرمیں بطور چیف ایگزیکٹو لیسکو کو زیرو ایکسیڈنٹ کمپنی بنانے کا عزم رکھتا ہوں جس کے لیئے سخت سے سخت اقدامات سے بھی گریز نہیں کیا جائے گا۔ چیف ایگزیکٹو نے ہدایت جاری کی کہ سیفٹی سے متعلق لائن مینوں اور افسران کی ٹریننگ کے چلے آرہے سلسلے کو مزید منظم اور مربوط طریقے سے جاری رکھا جائے اور اس بات کو بھی یقینی بنایا جائے کہ اگر کوئی بھی افسر یا اہلکار سیفٹی اصولوں کی خلاف ورزی کرتے ہوئے پایا گیا تو ان کے خلاف بلا تفریق سخت سے سخت تادیبی کارروائی کی جائے ۔ چیف ایگزیکٹو لیسکو نے اس عزم کا اظہار کیا کہ لیسکو کو حادثات سے مبرا کمپنی بنا کر دم لیں گے۔

مزید : کامرس