سینیٹ قائمہ کمیٹی داخلہ میں ٹرمپ کے خلاف مذمتی قراردادمنظور

سینیٹ قائمہ کمیٹی داخلہ میں ٹرمپ کے خلاف مذمتی قراردادمنظور

اسلام آباد(صباح نیوز)سینیٹ قائمہ کمیٹی برائے داخلہ نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کیپاکستان مخالف بیان کے خلاف مذمتی قراردادمنظورکرلی،ڈونلڈ ٹرمپ کے توہین آمیز الفاظ جھوٹ و دھوکے ؛پر مبنی ہیں ان کو رد اور سخت مذمت کرتے ہیں، ٹرمپ اپنے یہ نہایت توہین آمیز الفاظ واپس لیں، قائمہ کمیٹی نے کینیڈا میں پاکستانی سفیر کی طرف سے ڈونلڈ ٹرمپ کی ٹویٹ کو مبینہ طورپر سراہنے کو نوٹس لیتے ہوئے رپورٹ طلب کر لی کمیٹی نے سفارش کی ہے پاکستان کے سفیر نے ٹرمپ کی تعریف میں ایسا بیان دیا ہے تو بھرپور کاروائی کی جائے قائمہ کمیٹی نے اسلحہ لائسنسوں پر پابندی فی الفور ہٹانے کی سفارش کردی ہے ۔جمعہ کو چیئرمین کمیٹی سینیٹر عبدالرحمان ملک کی صدارت میں اجلاس پارلیمینٹ ہاؤس میں ہوا۔ پاکستان کو لاحق اندرونی خطرات کے بارے میں وزرداخلہ احسن اقبال نے ان کیمرہ بریفنگ کے ذریعے حقائق بتانے کی درخواست کردی ہے ۔ اجلاس میں پاکستان کے خلاف امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے بیان پر مذمتی قراردادمیں کہا گیا کہ کمیٹی امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی پاکستان مخالف بیان کی شدید الفاظ میں مذمت کرتی ہے۔ ڈونلڈ ٹرمپ کے توہین آمیز الفاظ جھوٹ و دھوکے کو رد کرتے اور مذمت کرتے ہیں۔سردار عظم خان موسی خیل کا فاٹا و بلوچستان میں یوریا کھاد پر عائد پابندی کا معاملہ زیر بحث آیا۔ کمیٹی نے فاٹا ، بلوچستان میں یوریا کھاد سپلائی فروخت پر پابندی فی الفور ختم کرنے کی ہدایت دیتے ہوئے کہا گیا کہ فرٹیلائزرز و یوریا پر پابندی کیوجہ سے غریب کسان کو نقصان پہنچ رہا ہے حکومت کی ذمہ داری ہے کہ فرٹیلائزر کی افغانستان میں سمگل ہونے سے روکے۔ضرب عضب اور آپریشن ردالفساد کے نتیجے میں دہشت گردی کی کمر توڑی گئی ہے۔ وزیر داخلہ نے کہا کہ نیشنل ایکشن پلان پر عمل کرنے کے لیے صوبوں کو نمائندگی دی ہے، مدرسہ ریفامز پر بہت کام ہو چکاہے، افغان مہاجرین کو کنٹرول کرنے کے لیے بھی اقدامات کررہے ہیں جب کہ فاٹا ریفارمز پر اتفاق رائے سے معاملات حل کرنے کی کوشش کررہے ہیں، نیشنل ایکشن پلان سے دہشت گردی میں نمایاں کمی آئی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کو اس وقت خارجی محاز پر غیر معمولی خطرات ہیں، ایسے عناصر سرگرم ہیں جو جمہوریت کے خلاف ہیں، سڑکوں پر سیاسی دھرنے اور تحریکیں ملک کو کمزور کرتی ہیں لہذا تمام جماعتوں کی سپورٹ چاہیے تاکہ داخلی و خارجی محاز پر مل کر لڑ سکیں۔سینیٹر جاوید عباسی نے کہا کہ افغان مہاجرین کی واپسی کی حتمی تاریخ کا فیصلہ کیا جائے ۔ سردار فتح حسنی نے کہا کہ ملک بھر سے غیر ملکیوں کو نکال کر ہی سلامتی کو یقینی بنایا جاسکتا ہے۔ چیئرمین کمیٹی نے کہا کہ فوری طور پر افغان مہاجری کو نکالا جائے۔ کمیٹی نے اسلحہ لائسنسوں پر پابندی فی الفور ہٹانے کی سفارش کی۔تاکہ ایوان میں بحث کی جاسکے ۔ سینیٹر محمد علی سیف نے کہا کہ ناکامیوں اور کمزوریوں پر توجہ دے کر جامع پالیسی بنائی جائے۔ سینیٹرکرنل ریٹائرڈ طاہر مشہدی نے کہا کہ سانحہ اے پی ایس کی جوڈیشنل انکوائری ابھی تک نہیں کروائی گئی۔

قائمہ کمیٹی

مزید : صفحہ اول