ایم ایم اے نے اپنے دور حکومت میں اسلامی قانون سازی نہیں کی:اسد قیصر

ایم ایم اے نے اپنے دور حکومت میں اسلامی قانون سازی نہیں کی:اسد قیصر

صوابی (بیورورپورٹ) سپیکر خیبر پختونخوااسمبلی اسد قیصر نے کہا ہے کہ سیاست عوام کی حقیقی خدمت کے لئے کرتا ہوں ،کمیشن اور کرپشن کی سیاست پر لعنت بھیجتا ہوں ۔انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کو ووٹ دینا ترقی کی راہ پر گامزن ہو نا جبکہ دیگر پارٹیوں کوووٹ دینا محرومیت کا شکار ہونے کے مترادف ہے ۔ گذشتہ ساٹھ سالوں سے منتخب ہونے والے نمائندوں اور میرے ساڑھے چارسالہ ترقیاتی کاموں کا موازنہ کیاجائے تو میرے دور کے کاموں کا پلڑا نتہائی بھاری ہے ۔الیکشن کے تمام وعدے پورے کر دکھائے ہیں ۔ایم ایم اے نے اپنے دور حکومت میں اسلامی قانون سازی کرنے کی بجائے صرف زبانی جمع خرچ سے کام لیا جبکہ اے این پی باچا خان کے فلسفے کو بھلاکر اپنے ذاتی مفادات کی تکمیل کیلئے سیاست کر رہی ہے ۔عوام اب مزید ایزی لوڈ کی سیاست کی اجازت نہیں دیں گے ۔انہوں نے ان خیالات کا اظہارضلع صوابی کے موضع چھوٹا لاہورموضع کو سوئی گیس کی فراہمی کا افتتاح کرنے کے بعدتقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔تقریب سے تحصیل ناظم سہیل خان اور ڈاکٹر فضل الٰہی ودیگر مقررین نے بھی خطاب کیا ۔ انہوں نے کہا کہ ایک سروے کے مطابق خیبر پختونخوا کے 75فیصد عوام پی ٹی آئی کو پسند کرتے ہیں اور پی ٹی آئی صوبہ میں مقبول ترین پارٹی ہے ۔انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت نے ایم ایم اے کی حکومت کی نسبت کہیں زیادہ اسلامی قوانین پاس کرکے اسلام پسندی کا ثبوت دیا ۔ صوبائی حکومت نے سکولوں اور ہسپتالوں میں ریفارمز کئے جسے عوام نے پذیرائی بخشی ۔سود کے خلاف قانون سازی کی گئی اور اس غیر اسلامی کاروبار سے منسلک افراد کیلئے کڑی سزائیں تفویض کیں اب پشتو فلموں سے بے حیائی کے خاتمے کیلئے قانون پاس کرنے کیلئے مشاورت کی جارہی ہے ۔انہوں نے کہا کہ صوابی میں میڈیکل کالج ،خواتین یونیورسٹی کے علاوہ ٹیکنیکل یونیورسٹی ،بام خیل میں جدید سپورٹس کمپلیکس ،پی ایف کیڈٹ کالج وہسپتال اوردیگر میگاپراجیکٹس کا قیام عمل میں لایا جارہا ہے جس سے صوابی میں خوشحالی اور ترقی کا نیادورشروع ہوگا ۔انہوں نے کہا کہ سی پیک کے حوالے سے خیبر پختونخوا کیلئے جن میگا پراجیکٹس کا مطالبہ پشاور ہائی کورٹ کے توسط سے مرکزی حکومت سے کیا تھا ۔ہائی کورٹ سے ہمارے حق میں فیصلہ آگیا ہے جو خیبر پختونخوا کے عوام کی جیت ہے مرکزی حکومت سی پیک کے تحت مذکورہ پراجیکٹس پر جلد کا م شروع کرے گی ۔جن میں رشکئی انٹر چینج کے قریب اکنامک زون تعمیر کرنا بھی شامل ہے ۔جس کے باعث تقریباً20لاکھ روزگار کے مواقع پیدا ہوں گے ۔اور بے روز گا ر ی میں کمی کے امکانات پیدا ہوں گے ۔انہوں نے کہا کہ این ٹی ایس کے تحت بھر تی شدہ اساتذہ کو رواں ماہ دسمبر میں منتقل کر نے کی خوشخبری دی جائے گی ۔مسجدوں کو سولر سسٹم پر منتقل کرنے کے ساتھ ساتھ جلد ہی مسجدوں کے اماموں کیلئے تنخواہ مقرر کی جائے گی ۔انہوں نے عوام سے کہا کہ پی ٹی آئی کوووٹ دینے کا ثمریہ ملاکہ صوابی کی محرومیت کا خاتمہ ہوا اور صوابی ترقی کی راہ پر گامزن ہوا ،جبکہ پی ٹی آئی کے علاوہ دیگر پارٹیوں کو ووٹ دینے کا مطلب ہوگا کہ صوابی کو دوبارہ سے محرومیت کا شکار بنایا جائے ۔لہٰذ ا عوا م سوچ لیں کہ وہ ترقی کے خیرخواہ ہیں یا محرومیت کے اندھیرے دوبارہ مسلط کرنا چاہتے ہیں ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر