کاشتکاروں کو پہنچے والے نقصان کا ازالہ کیا جائے،سردار رحیم

کاشتکاروں کو پہنچے والے نقصان کا ازالہ کیا جائے،سردار رحیم

کراچی(اسٹاف رپورٹر)فنکشنل لیگ نے سندھ میں تمام مسائل کی جڑ حکمران جماعت پیپلزپارٹی کو قرار دیتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ شوگر ملز نہ چلانے سے کاشتکاروں کو پہنچے والے نقصان کا معاوضہ ادا کیا جائے اور گنا مقرر کردہ نرخوں پر خرید کر شوگر ملیں چلائی جائیں تمام سرکاری اداروں میں کنٹریکٹ نظام اور لوکل باڈی ایکٹ کا خاتمہ کرکے میئرز کو ان کے اختیارات سونپے جائیں۔ان خیالات کا اظہار فنکشنل لیگ کے رہنماؤں سردار رحیم، عبدالکریم شیخ، نند کمار اور نصرت سحر عباسی نے جمعہ کو کراچی پریس کلب میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔سردار عبدالرحیم نے کہا کہ کراچی کی زبوں حالی پر ترس کھایا جائے ،کراچی کچرا کنڈی بن چکا ہے میئر کو اس کے اختیارات دیئے جائیں۔سندھ لوکل باڈیز ایکٹ ختم کیا جائے تمام کنٹریکٹ ملازمین کو مستقل کیا جائے اس کنٹریکٹ کا مذاق اب بند کیا جانا چاہئے۔انہوں نے کہا کہ صوبے میں کرشنگ کا آغاز اکتوبر میں کیا جانا چاہئے تھا تاہم جنوری کے مہینے تک کرشنگ شروع نہ ہونا آبادکاروں کے ساتھ ظلم کے مترادف ہے آبادگاروں کو ناقابل تلافی نقصان ہو چکا ہے آئندہ فصل تاخیر کا شکار ہے جبکہ گنے کی فصل تباہ ہوچکی ہے لہذا حکومت آبادگاروں کو ہونے والے نقصان کا ازالہ کرے۔انہوں نے کہا کہ پریس کلب کے سامنے کئی روز سے سراپا احتجاج اساتذہ کے جائز مطالبات پورے کئے جائیں اپنے مطالبات کے لئے اساتذہ کو سندھ سرکار کی لاٹھیاں، تشدد اور آنسو گیس کی شیلنگ تک برداشت کرنا پڑی ہے، جس کی ہم شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہیں بانی پاکستان کے پیدائش کے روز جس طرح سندھ سرکار کی ایما پر اساتذہ پر تشدد کیا گیا وہ سراسر زیادتی ہے۔انہوں نے کہا کہ آدم شماری اور نئی حلقہ بندیوں کے تحت پیپلز پارٹی الیکشن میں دھاندلی کرے گی تاہم ہم ایسا ہرگز نہیں ہونے دیں گے۔نصرت سحر عباسی نے کہا کہ سندھ میں زراعت کو تباہ کیا جارہا ہے ہمیں اسمبلی میں بولنے نہیں دیا جاتا ہماری زبان بند کرنے کی کوشش کی جاتی ہے سندھ میں حکمرانوں کی نااہلی کی وجہ سے تمام ادارے تباہی کے دہانے پر ہیں کرپشن کا بازار گرم ہے ہر چیز کی بولی لگ رہی ہے لیڈی ہیلتھ ورکر ز سے لیکر اساتذہ، کاشتکار، طلبا، ڈاکٹرز ، تاجر، کسان، غرض ہر طبقے کے افراد مشکلات کا شکار ہیں وہ موجودہ حکومت سے چھٹکارا چاہتے ہیں۔ کراچی میں بنا پروٹول سڑکوں پر چلنے والے مراد علی شاہ نجانے کب اساتذہ اور کسانوں کے پاس جائیں گے۔ بعدازاں فنکشنل لیگ کے رہنماؤں نے پریس کلب کے باہر پرامن احتجاج پر بیٹھے اساتذہ سے ملاقات کی اور ان کے مطالبات کی منظوری تک جدوجہد جاری رکھنے کی یقین دہانی کرائی۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر