نصیر الدین شاہ ایک بار پھر بھارت میں مذہبی منافرت پر پھٹ پڑے

نصیر الدین شاہ ایک بار پھر بھارت میں مذہبی منافرت پر پھٹ پڑے
نصیر الدین شاہ ایک بار پھر بھارت میں مذہبی منافرت پر پھٹ پڑے

  

ممبئی(ڈیلی پاکستان آن لائن )بالی وڈ اداکار نصیر الدین شاہ ایک بار پھر بھارت میں مذہبی منافرت کے بڑھتے رجحان پر پھٹ پڑے۔میڈ یا رپورٹس کے مطابق بالی ووڈ اداکار نے کہاہے کہ بھارت کے آئین میں واضح طور پر لکھا ہے کہ بھارت کے ہر ایک شہری کو سماجی، معاشی اور سیاسی انصاف مل سکے، سوچنے کی، بولنے کی ،کسی مذہب کو ماننے کی اور کسی بھی طرح عبادت کرنے کی آزادی ہو۔

انہوں نے کہا کہ ہر انسان کو برابر سمجھا جائے، ہر انسان کے جان و مال کی عزت کی جائے، ہمارے ملک میں جو لوگ غریبوں کے گھروں، زمینوں اور روزگار کو بچانے کی کوشش کرتے ہیں، ذمہ داریوں کے ساتھ ساتھ حقوق کی بات کرتے ہیں۔نصیرالدین شاہ کا کہنا تھا کہ اب حق کے لیے آواز اٹھانے والے جیلوں میں بند ہیں، فنکار ہوں، شاعر ہوں یا ادیب، سب کے کاموں پر روک ٹوک لگائی جا رہی ہے اور صحافیوں کو بھی خاموش کیا جا رہا ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ مذہب کے نام پر نفرتوں کی دیواریں کھڑی کی جارہی ہے، معصوموں کا قتل ہورہا ہے، پورے ملک میں نفرت اور ظلم کا بے خوف ناچ جاری ہے اور ان سب کے خلاف آواز اٹھانے والے دفتروں پر چھاپے مارے جا رہے ہیں۔

واضح رہے کہ اس سے قبل بھی نصیر الدین شاہ نے بھارتی سرکار کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا تھا کہ اس فضا میں مجھے اپنے بچوں کے مستقبل کے حوالے سے خوف ہے۔

مزید : تفریح