ہمارے ہاں اسلامی ریاست جیسا انصاف کا ادارہ میسر نہیں ،تعلیم اور صحت کو کاروبار مت بنائیں : چیف جسٹس

ہمارے ہاں اسلامی ریاست جیسا انصاف کا ادارہ میسر نہیں ،تعلیم اور صحت کو ...

لاہور(نامہ نگار خصوصی ،آئی این پی ) چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے کہا ہے کہ بنیادی انسانی حقوق کے تحفظ کے لیے عدلیہ کا کردار سب سے اہم ہے، ہمارے ہاں اسلامی ریاست جیسا انصاف کا ادارہ میسر نہیں، ہمیں انگریز نے جو قانون دیا، وہ ہمارے کلچر، مذہب اور معاشرتی ضروریات کے ساتھ ہم آہنگ نہیں، اگر اس قانون کو ہم آہنگ کرنا ہے تو اسے اپ ڈیٹ کرنا لازمی ہے، حقوق کی آزادی کے بغیر زندگی کچھ نہیں، ہماری زندگی کا اصل اور حقیقی مقصد مخلوق خدا کی خدمت ہونا چاہیے اور ہمیں یہ سوچنا چاہیے کہ باعزت قومیں اور معاشرے کس طرح تشکیل پاتی ہیں، عالمی برادری میں باوقار قوم اور معاشرہ بننے کے لیے اخلاص کی ضرورت ہے، چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کا کہنا تھا کہ اگر عدلیہ کا ادارہ ناکام رہا تو معاشرہ کبھی ترقی نہیں کر سکتا، انہوں نے کہا کہ بہت سے مواقع پر میں بات کرتا ہوں کہ قوم کیسے ترقی کرتی ہے، میں 3 بنیادی چیزیں دیکھتا ہوں جو قوم بناتی ہیں، جس میں پہلی تعلیم، دوسری بہترین لیڈرشپ اور تیسری چیز انصاف کی فراہمی ہے کسی بھی قوم کی ترقی کی بنیاد تعلیم ہے، تعلیم کے بغیر کوئی معاشرہ اور قوم ترقی حاصل نہیں کرسکتی، بدقسمتی سے ہمارے ملک میں تعلیم کا شعبہ سب سے زیادہ نظر انداز کیا گیا، بلوچستان کے پسماندہ علاقوں میں تعلیمی درسگاہیں سرے سے ہیں ہی نہیں، تعلیمی اداروں میں وڈیروں کی گائے بھینسیں کھڑی ہیں، تعلیم اور صحت کو پیسہ کمانے یا کاروبار کا ذریعہ مت بنائیں۔لاہور انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ سائنسز میں ایک تقریب سے خطاب میں چیف جسٹس نے کہا کہ سوچتا رہتا ہوں کہ قومیں کیسی بنتی ہیں، کیسے ترقی یافتہ معاشرے بنتے ہیں، تعلیم کے شعبے پر توجہ نہیں دی گئی، بلوچستان کے کچھ علاقوں میں سکول ہی نہیں ہیں، تعلیم کے بغیر کوئی معاشرہ آگے نہیں بڑھ سکتا، کسی بھی قوم کی ترقی کی بنیاد تعلیم ہے، پاکستان کے ذریعے اقوام ترقی کرتی ہیں، ہماری زندگی کااصل اور حقیقی مقصد مخلوق خدا کی خدمت ہونا چاہیے، قیادت ہی کسی ملک کو اوپر لے جاتی ہے، انسانیت کی خدمت ہی سب سے بڑا کام ہے، عالمی برادری میں باوقار قوم بننے کیلئے اخلاص کی ضرورت ہے۔ چیف جسٹس نے کہا کہ بلوچستان کے پسماندہ علاقوں میں تعلیمی درس گاہیں سرے سے ہی نہیں ہیں، بدقسمتی سے ہمارے ملک میں تعلیم کا شعبہ سب سے زیادہ نظرانداز کیا گیا ہے،جو درسگاہیں ہیں وہاں ٹوائلٹ اور پینے کے صاف پانی تک کی سہولت میسر نہیں ہے، بلوچستان کے دور دراز علاقوں میں بنیادی ضروریات زندگی ہی موجود نہیں ہیں، درس گاہیں وڈیروں کے مال مویشی رکھنے کے کام آتی ہیں، ہمیں سوچنا چاہیے کہ باعزت قومیں اور معاشرے کس طرح تشکیل پاتے ہیں، زندگی صرف زندہ رہنے کا نام نہیں ہے، اس کے کئی پہلو ہیں، انسانوں ہی نہیں بلکہ جانورں، کپڑے مکوڑوں اور نباتات کے بھی حقوق ہیں، انسان کے دو بنیادی حقوق ہیں، عدلیہ ہی انسان کے بنیادی حقوق کو تحفظ فراہم کرتی ہے، حقوق کی آزادی کے بغیر زندگی کچھ نہیں ہے۔ انہوں نے کہاکہ بڑے دکھ سے کہہ رہا ہوں کہ ہمارے ہاں اسلامی ریاست جیسا انصاف کا ادارہ میسر نہیں ہے، رب کو کسی نے نہیں دیکھا مگر سب مانتے ہیں، یہ ہمارے اسلام کا حصہ ہے، ہمارے پیارے نبی ؐ نے کہا تھا کہ یہ تمہارا رب ہے اور میں اس کا پیغمبر ہوں،یہ اس کی کتاب ہے اور یہ اس کا پیغام ہے، انسانیت کی خدمت سے بڑا کوئی کام نہیں ہے، معاشرے کی ترقی کیلئے ایماندار لیڈر ہو تو وہ ملک کو ترقی کی راہ میں آگے لے جاتا ہے۔

چیف جسٹس

لاہور (نامہ نگار خصوصی ،آئی این پی ) چیف جسٹس ثاقب نثار نے سرکاری اراضی کی لیزپرتعمیرات سے متعلق کیس میں ڈی سی لاہور،محکمہ ریونیوافسران کوطلب کر تے ہوئے ریمارکس دیئے کہ ایسے افسران کیلئے لعنت ہے،جوقومی خزانے کیلئے نقصان کاباعث بنتے ہیں،یہاں کوئی بدمعاشی نہیں چلے گی،ہم سرکاری اراضی کے نگراں ہیں، آئندہ لیزنیلامی کے ذریعے دی جائیگی تاکہ شفافیت ہو، وہ وقت گزرگیابڑاآدمی درخواست دیتا تھااورڈی سی زمین دیدیتاتھا۔تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں چیف جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں سرکاری اراضی کی لیزپرتعمیرات سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی۔چیف جسٹس نے کہا ہم سرکاری اراضی کے نگراں ہیں، آئندہ لیزنیلامی کے ذریعے دی جائیگی تاکہ شفافیت ہو، وہ وقت گزرگیابڑاآدمی درخواست دیتا تھااورڈی سی زمین دیدیتاتھا۔چیف جسٹس نے ریمارکس دیے ایل ڈی اے کے بھی تمام پٹرول پمپس کی ری لیزنگ کی، جس پٹرول پمپ کی15ہزار لیز تھی، اسے ڈیڑھ کروڑ میں لیز پر دیاگیا۔جسٹس ثاقب نثار کرپٹ افسران پر برس پڑے اور کہا ا ایسے افسران کیلئے لعنت ہے جوقومی خزانے کیلئے نقصان کاباعث بنتے ہیں۔عدالت نے ڈی سی لاہوراور محکمہ ریونیوافسران کوطلب کرلیا۔دوسری جانب شہری کی اراضی پرقبضے کے ایک دوسرے مقدمے میں چیف جسٹس نے طیفی بٹ کو طلب کرلیا۔چیف جسٹس نے استفسار کیا یہ کون ہے طیفی بٹ ؟ درخواست گزار نے بتایا طیفی بٹ نے اندرون شہر میں3کنال زمین پر قبضہ کررکھا ہے، ایس پی سٹی نے کہا طیفی بٹ نے شہری حمیرا بٹ پر بہت ظلم کیا۔جس پر چیف جسٹس پاکستان نے کہا ایس پی سٹی آپ سوئے ہوئے ہیں؟کیوں نہیں پکڑا، طیفی بٹ کو پیش کریں یہاں کوئی بدمعاشی نہیں چلے گی۔

اراضی کیس

مزید : کراچی صفحہ اول