مہنگائی ‘ مختلف بحرا ن ‘ عمران خان جلد اقتدار سے ہاتھ دھو بیٹھیں گے ‘ شیر علی گورچانی

مہنگائی ‘ مختلف بحرا ن ‘ عمران خان جلد اقتدار سے ہاتھ دھو بیٹھیں گے ‘ شیر ...

جام پور (نمائندہ خصوصی ) سابق ڈپٹی سپیکر پنجاب اسمبلی سردار شیر علی خان گورچانی نے کہاہے کہ کرائے کے اور ’’مہمان ممبران ‘‘ کے ووٹوں سے بنائی گئی موجودہ مصنوعی حکومت زیادہ دیر چلتی نہیں لگتی ٗ عمران خان کی حکومت کے حالیہ چار ماہ ضیاء الحق اور مشرف جیسے ڈکٹیٹروں سے بھی زیادہ جمہوریت پر بھاری گزرے ہیں ٗ جس طرح کا صاف میدان نیم سیاسی کپتان کو مہیا کیا گیا ہے اسی(بقیہ نمبر35صفحہ12پر )

طرح کا میدان عوام کے ووٹوں سے منتخب کسی بھی سیاسی حکومت کو مہیا کیا جاتا تو آج ملک ہر شعبہ میں خود کفیل ہوتا ٗ لیکن نیم سیاسی اور مکمل ڈکٹیٹر حکومت نے معاشی میدان میں ملک پچاس سال پیچھے دھکیل دیا ہے ٗ سردار شیر علی خان گورچانی نے کہاکہ یہ حکومت سات ماہ نکال لیتی ہے تو یہ بہت بڑا معجزہ ہوگا ۔ انہوں نے اپنے ان خیالات کا اظہاریونین کونسل کوٹ جانوں میں مقدم سردار اللہ یار خان کچھیلا کے کزن قدیر خان کچھیلا کے دعوت ولیمہ میں شرکت کے موقع پر صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔ انہوں نے کہاکہ پی ٹی آئی کی حکومت میں صرف فحش گوئی ٗ دشنام طرازی اور کہہ مکرنیوں میں ترقی ہوئی ہے جس کا خمیازہ قوم آئندہ بیس سال تک بھگتے گی ۔انہوں نے کہاکہ جو شخص اپنے فعلی کردار میں صادق و امین نہیں ہے ٗ علماء کرام سے کئے گئے عہد کی خلاف ورزی کرتا ہے‘ٗ جب اپنے ہی ملک کے بڑے بڑے سرمایہ دار غیر یقینی صورتحال میں اپنا سرمایہ بیرون ممالک منتقل کررہے ہیں تو پرائے ملکوں کے سرمایہ کار خاک پاکستان میں آکر سرمایہ کاری کریں گے ۔ پاکستانی قوم نے اصل سیاسی لیڈروں کے مقابلے میں لائے گئے مصنو عی لیڈر کو بری طرح مسترد کردیا اور کسی بھی وقت مصنوعی لیڈر کی ’’مانگے تانگے کی حکومت ‘‘ وزراء اور وزیر اعظم کی ناکامیوں کے بوجھ تلے خود بخودھڑام سے نیچے آگرے گی ۔ سردار شیر علی خان گورچانی نے کہاکہ عمران خان اپنی پہلی اور آخری حکومت سے بہت جلد ہاتھ دھو بیٹھیں گے ۔اس موقع پر کونسلر سردار زمان خان لاشاری ٗ سردار مقدم اللہ یار خان کچھیلا ٗ ملک فدا حسین کھوکھر ٗ فاروق خان گوپانگ ٗ سردار وزیر خان کچھیلا ٗ امین خان کچھیلا ٗملک غلام مصطفی ڈڈا ٗ حاجی صابر ضابر خان کچھیلا ٗمرزا فرحان خان مغل ٗ ضیاء خان بھٹی اور دیگر بھی موجود تھے۔

اقتدار

مزید : ملتان صفحہ آخر