بنوں‘ بجلی مسائل اور ظالمانہ لوڈشیڈنگ کے حوالے سے کھلی کچہری

بنوں‘ بجلی مسائل اور ظالمانہ لوڈشیڈنگ کے حوالے سے کھلی کچہری

  



بنوں (بیورورپورٹ)ایس ای واپڈا پیسکو بنوں سرکل گوہر رحمن بنگش کی زیر صدارت المرکز الاسلامی بنوں میں سابقہ امیدوار قومی اسمبلی مولوی نسیم علی شاہ کی جانب سے بجلی مسائل اور ظالمانہ لوڈ شیڈنگ کے سلسلے میں یونین کونسل نار جعفر،یونین کونسل شمشی خیل اور یونین کونسل غوریوالہ کے عوام کیلئے کھلی کچہری کا انعقاد کیا گیا جس میں سابقہ بلدیاتی نمائندے اور معززین علاقہ واپڈا کے خلاف پھٹ پڑے سابق امیدوار قومی اسمبلی مولانا نسیم علی شاہ،سابق تحصیل ممبر جنان وزیر،مطیع اللہ شاہ،طاہر خان،علی شیر خان،ماسٹر سردرا،شاہد خان ودیگر مشران نے کہا کہ پاکستان کے ہر علاقے میں بجلی لوڈ شیڈنگ کیلئے شیڈول مقرر ہے لیکن ان تین یونین کونسلوں میں 48گھنٹے اور 72گھنٹے بجلی غائب رہتی ہے اسی طرح اڈے کاٹ کر لوڈ شیڈنگ کی جاتی ہے جبکہ سکارپ لائن پر12دن اور15دن لوڈ شیڈنگ کی جاتی ہے کاٹے گئے بجلی میٹرز پر سالوں سے بجلی بل بھجوائے جاتے ہیں تین تین دن بجلی بند رہنے کے باوجود ہر مہینے بجلی بل پہلے سے زیادہ آتے ہیں،کیونکہ نئے لگائے گئے ڈیجیٹل بجلی میٹر انتہائی تیز ہیں ڈائریکٹ کنڈے لگانے والے آزاد ہے جبکہ بجلی میٹر لگانے والوں کو 15سے25ہزار روپے کے جرمانے تھماکر کنڈے والوں کا حساب بھی میٹر والوں سے لیا جاتا ہے واپڈا اہلکار سب رشتہ داروں کو بھی کنڈوں کے ذریعے فری بجلی دیتے ہیں لہذا اگر حکومت یا واپڈا آفسران بجلی کا نظام بہتر بنانا چاہتے ہیں تو عوام کے ذمے ناجائز بجلی جرمانے ختم کردیں اور میٹر لگانے والوں کو لوڈ شیڈنگ میں ریلیف دیں بقایاجات پر بجلی ٹرانسفارمر لیجانے کے بجائے بقایاجات ادا نہ کرنے والوں کے خلاف کاروائی کریں اور بجلی چوروں کو پکڑیں کھلی کچہری سے خطاب کرتے ہوئے ایس ای واپڈا پیسکو گوہر رحمن بنگش نے اعلان کیا کہ عوام ایسے واپڈا اہلکاروں کی نشاندہی کریں جو اپنے رشتہ داروں کو مفت بجلی دیتے ہیں ہم انکے خلاف سخت ایکشن لیں گے آئندہ اڈے کاٹ کر لوڈ شیڈنگ نہیں کی جائیگی صرف فالٹ کی سورت میں لوڈ شیڈنگ اڈہ بند کیا جائیگا بقایاجات پر پورے علاقے کا ٹرانسفارمر نہیں اتارا جائیگا غلط بجلی جرمانے معاف کئے جائیں گے البتہ جائز جرمانے اور بقاجات قسطوں میں جمع کرائے جائیں گے جن علاقوں میں بجلی میٹر ہوں گے وہاں اوور لوڈ ہونے کی صورت میں واپڈا پیسکو دوسرا ٹرانسفرمار لگائے گا جبکہ خراب ٹرانسفارمر واپڈا کے اخراجات پر مرمت کیا جائیگا حکومت اور واپڈا پیسکو کے پاس بجلی کی کوئی کمی نہیں ہے لیکن بجلی کمپنیاں بغیر پیسوں کے بجلی نہیں دیتی پانی کے بجائے اب تیل سے بجلی بنائی جاتی ہے جس کی وجہ سے بجلی کی قیمتوں میں اضافہ ہوا ہے دوسرا سکارف لائن منظور کیا ہے جس سے سکارپ فیڈر پر لوڈ شیڈنگ میں نمایاں کمی آئیگی،انہوں نے کہا کہ واپڈا عوام کی بجلی بند کرنے کیلئے نہیں بنا ہے بلکہ عوام وک بجلی دینے کیلئے بنا ہے لیکن بجلی لوڈ شیڈنگ کا خاتمہ اور بجلی کا نظام بہتر بنانا عوام کے اپنے ہاتھ میں ہے،بجلی امیر وغریب سب کی ضرورت ہے اور سب کیلئے ہے لیکن کسی کو بھی مفت بجلی نہیں دے سکتے انہوں نے کہا کہ جو صارفین بجلی بقایاجات جمع نہیں کرائیں گے اور جو لوگ ڈائریکٹ کنڈوں کے ذریعے بجلی کا ناجائز استعمال کرتے ہیں ان کے خلاف ایف آئی آر کاٹیں گے بجلی صارفین کیلئے میرے دفتر کے دروازے کھلے ہیں جن صارفین کے ساتھ زیادتی ہوئی ہے ان کا ہر قیمت پر ازالہ کریں گے انہوں نے کہا کہ واپڈا سمیت تمام سرکاری ادارے عوام کے ہیں اور عوام کی خدمت کیلئے ہیں کھلی کچہریوں کے انعقاد کا مقصد ہی یہی ہے کہ ہم عوام میں جاکر عوام کے مسائل معلوم کریں اور ان کو حل کریں کیونکہ دفتر میں ہر کوئی مسائل کے حل کیلئے نہیں آسکتا مسائل کے حل کیلئے کھلی کچہری ہی بہترین پلیٹ فارم ہے اور کھلی کچہری کے ذریعے عوام کے مسائل گھر کی دہلیز پر حل ہوتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ جب تک عوام بجلی میٹر نہیں لگاتے،بقاجات جمع نہیں کرتے اورکنڈا کلچر کا خاتمہ نہیں کرتے بجلی مسائل کا سو فیصد حل مشکل ہے۔انہوں نے منتخب نمائندوں،سابقہ بلدیاتی نمائندوں،سیاسی جماعتوں،علماء کرام،تاجر برادری اور عوام سے اپیل کی کہ وہ کنڈا کلچر کے خاتمے،بقایاجات کی ادائیگی اور عوام کوبجلی میٹر لگانے کیلئے مہم میں واپڈا پیسکو کا ساتھ دیں ضمانت دیتا ہوں کہ کنڈا کلچر کے خاتمے اور بجلی میٹر لگانے سے عوام کو24گھنٹے بجلی ملے گی اور لوڈ شیڈنگ کے عذاب سے نجات ملے گی۔اس موقع پر سابقہ امیدوار قومی اسمبلی مولانا نسیم علی شاہ کی درخواست پر ایس ای واپڈا پیسکو گوہر رحمن بنگش اور ایکسن سید رحمن نے موقع پر عوام کے بلوں میں بجلی جرمانوں میں کمی اور بقایاجات قسطوں میں ادا کرنے کیلئے بلوں پر دستخط کئے اور صارفین کے مسائل مسائل کے حل کیلئے موقع پر ہی احکامات جاری کئے۔کھلی کچہری میں ایکسن سید رحمن کے علاوہ ایس ڈی او مراد علی خان،آر او نصیب اللہ خان،ٹی اے امین اللہ شاہ ودیگر واپڈا آفسران بھی موجود تھے اور موقع پر73بجلی صارفین کے بلوں میں دو لاکھ54ہزار روپے کی درستگی اور ایک ڈینجت لوکیشن کو ٹھیک کرنے کی منظوری دیدی گئی۔ 

مزید : پشاورصفحہ آخر