محکمہ زراعت و لائیو سٹاک خیبرپختونخوا کی متاثر کن سالانہ کارکردگی 

محکمہ زراعت و لائیو سٹاک خیبرپختونخوا کی متاثر کن سالانہ کارکردگی 

  



پشاور (سٹاف رپورٹر)خیبرپختونخوا کے محکمہ زراعت، لائیو سٹاک و فشریز کی گزشتہ سال کی کارکردگی متاثر کن رہی جس پر وزیر اعظم عمران خان اور وزیراعلی خیبرپختونخوا محمود خان نے صوبائی وزیر زراعت، لائیو سٹاک و فشریز محب اللہ خان اور ان کی ٹیم کی تعریف کی ہے۔ محکمہ زراعت کا اپنے ترقیاتی منصوبوں کی تکمیل اور اہداف کے حصول میں تناسب نوے فیصد سے زائد رہا۔ صوبائی محکموں کی کارکردگی کے حوالے سے رپورٹ میں محکمہ زراعت کی سالانہ کارکردگی کو سراہا گیا ہے۔ محکمہ میں اصلاحات اور جدیدیت لاکر زراعت میں اضافے اور کسانوں کو سہولیات بہم پہنچانے کے حوالے سے بھی اہم اقدامات اٹھائے گئے ہیں۔ اس حوالے سے کیے جانے والے ایک سروے رپورٹ کے مطابق محکمہ زراعت لائیو سٹاک و فشریز نے گزشتہ سال کسانوں، مویشی پال حضرات اور ماہی پروری کے شعبوں میں آگاہی اور اصلاحات لاکر اسے فروغ دیا ہے جس سے صوبے کی آبادی کا بڑا حصہ مستفید ہوا ہے۔ صوبائی وزیر محب اللہ خان کی سربراہی میں کی جانے والی ان اصلاحات اور محکمانہ امور میں شفافیت سے عوام خصوصاً کسانوں کا محکمے پر اعتماد بحال ہوا ہے جو کہ صوبے میں زرعی انقلاب کی جانب ایک قدم ثابت ہوگا۔ گزشتہ کئی دہائیوں سے عدم توجہی کا شکار محکمہ فشریز پر بھی خصوصی توجہ دی جا رہی ہے۔ سوات میں کروڑوں روپے کی لاگت سے ماہی پروری کے حوالے سے جدید ریسرچ سنٹر قائم کیا جا رہا ہے جہاں اس شعبہ سے منسلک افراد کو آگاہی اور تربیت دی جائے گی۔ یہ تحقیق گاہ ملکی سطح پر ماہی پروری کے حوالے سے ایک منفرد سنٹر ہوگا جس سے نہ صرف صوبے میں ماہی پروری کو فروغ ملے گا بلکہ اس شعبہ سے منسلک افراد کے کاروبار کو تحفظ اور دوام حاصل ہوگا۔ لائیو سٹاک کے شعبہ میں جانوروں کو فربہ کرنے کے منصوبے کی منظوری بھی دی جا چکی ہے جبکہ مرغبانی کا منصوبہ کئی اضلاع میں کامیابی سے جاری ہے جس کا افتتاح خود وزیرِ اعلیٰ خیبر پختونخوا نے کیا تھا۔ مرغبانی کے اس منصوبے کے تحت کم آمدنی اور مستحق افراد کو رعایتی نرخوں پر ایک مرغا اور پانچ مرغیاں دی جا رہی ہے۔ اس کے علاوہ محکمہ زراعت لائیو سٹاک و ماہی پروری کے 2019-20 کے منصوبہ جات میں گندم، چاول تیل اور گنے کی پیداوار میں اضافے، گوشت کی پیداوار میں اضافے کے لیے بچھڑوں کے تحفظ اور سرد پانی کے مچھلی کے فروغ کے منصوبے شامل ہیں۔ صوبائی وزیر محب اللہ خان اور ان کی ٹیم نے گزشتہ سال میں زراعت، لائیوسٹاک اور ماہی پروری کے 15 نئے منصوبوں کے پی سی ون تیار کئے تھے جن میں سے 14 منصوبوں کی منظوری بھی حاصل کرلی جو کہ از خود ایک بڑی کامیابی ہے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر