250 سے زائد بچیوں کی لاشیں ملنے پر صوبائی حکومت حرکت میں آگئی

 250 سے زائد بچیوں کی لاشیں ملنے پر صوبائی حکومت حرکت میں آگئی

  



کراچی (کرائم رپورٹر) شہر قائد سے سال 2019ء کے دوران 250 سے زائد بچیوں کی لاشیں ملنے کے معاملے پر سندھ حکومت حرکت میں آگئی۔ سندھ حکومت کے محکمہ ہیومن رائٹس نے محکمہ صحت اور پولیس سے رپورٹ طلب کرلی ہے۔ محکمہ ہیومن رائٹس ذرائع کے مطابق شہر میں جگہ جگہ سی سی ٹی وی کیمرے نصب ہونے کے باوجود پولیس نے آنکھیں بند کرلی ہیں جبکہ سرکار کی مدعیت میں ایک بھی کیس درج نہیں ہوا ہے۔ منشیات کے خلاف متحرک پولیس انسانی لاشوں پر خاموش تماشائی بنی ہوئی ہے۔ ایدھی ذرائع کے مطابق سال 2019ء میں برآمد ہونے والی لاشوں کی تعداد 375 ہے جن میں 80 فیصد لاشیں نومولود بچیوں کی ہیں۔ ایدھی ذرائع کے مطابق بیٹی ہے یا بیٹا۔ حمل کے چوتھے یا پانچویں ماہ میں الٹراساؤنڈ کرایا جاتا ہے۔ بیٹی کی صورت میں ایبورشن کراکر لاش کچرا کنڈی میں پھینک دی جاتی ہے۔ 

مزید : صفحہ اول