ہمارے ایجنڈے پر آئے بغیر طاہر القادری سے اتحاد نہیں کرینگے،عمران خان

ہمارے ایجنڈے پر آئے بغیر طاہر القادری سے اتحاد نہیں کرینگے،عمران خان

  

                            لاہور(آئی این پی) تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ ہمارے ایجنڈے پر آئے بغیر طاہر القادری سے اتحاد نہیں کرینگے‘ وزےر داخلہ اور چوہدری نثار علی خان اور میری سوچ تقریبا ایک جیسی ہے‘ حکومت نے ایک ہفتہ میں عام انتخابات میں ہونیوالی دھاندلی کی تحقیقات کیلئے سپریم کورٹ کے تین ججز پر مشتمل کمیشننہ بنایا تو 14 اگست کے لانگ مارچ کا فیصلہ حتمی ہے‘ حکومت نے بہت سی سیاسی غلطیاں کیں اگر حکومت نے مجھے گرفتار کیا تو ن لیگ کی حکومت کو ختم ہونے سے کوئی نہیں بچا سکتا‘ (ن) لیگ اور پیپلز پارٹی میں اب بھی مک مکاﺅ ہے‘ میں( کل ) پیر کو کو آئندہ کے لائحہ عمل کا اعلان کروں گا۔ ہفتہ کے روز اپنے ایک انٹرویو کے دوران تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا کہ ہم چاہتے ہیں کہ طاہر القادری ہمارے ایجنڈے پر آجائیں کیونکہ جب ملک میں انتخابی اصلاحات ہو جائیں گی تو یہی ملک میں انقلاب کا آغاز ہو گا اور اس بات میں کوئی شک نہیں کہ انتخابی اصلاحات کے بغیر ملک آگے نہیں بڑھ سکتا۔ انہوں نے کہا کہ طاہر القادری کے ساتھ رابطے ضرور ہیں لیکن انہیں ہمارے ایجنڈے پر آنا ہو گا اگر وہ ہمارے ایجنڈے پر نہیں آتے تو ان کے ساتھ اتحاد نہیں ہو سکتا وہ اپنا انقلاب لائیں ہم اپنا سونامی مارچ کرینگے۔ ایک سوال کے جواب میں عمران خان نے کہا کہ پیپلز پارٹی اور ن لیگ میں آج بھی مک مکاﺅ ہے اور آج بھی دونوں جماعتیں ایک دوسرے کی کرپشن اور لوٹ مار کو تحفظ دینے میں مصروف ہیں اور دھاندلی سے اقتدار میں آنیوالی ن لیگ کے پاس حکومت کرنے کا کوئی اخلاقی جواز نہیں رہا۔ انہوں نے کہا کہ اگر ہم ان چار حلقوں میں ووٹوں کی تصدیق کا مطالبہ کر رہے ہیں اگر ان حلقوں میں دھاندلی ثابت ہو جائے تو پھر 2013ءکے انتخابات کی کوئی حیثیت نہیں رہے گی اور پھر اس کے بعد جو آئینی اور قانونی طریقہ ہو گا وہی اپنایا جانا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے کبھی بھی کوئی غیر آئینی اقدام اٹھانے اور جمہوریت کو ڈی ریل کرنے کی بات نہیں کی لیکن دھاندلی کےخلاف احتجاج ہمارا آئینی اور جمہوری حق ہے جس سے ہمیں کوئی نہیں روک سکتا۔ انہوں نے کہا کہ میں جیل میں جانے سے خوفزدہ نہیں لیکن اگر حکومت نے ہمیں لانگ مارچ سے روکنے کیلئے گرفتار کیا اور پولیس کے ذریعے کارکنوں پر تشدد کروایا تو دنیا کی کوئی طاقت ن لیگ کی حکومت کو رخصت ہونے سے نہیں بچا سکے گی۔

مزید :

صفحہ اول -