بل پر تنازعہ ، بنگلہ دیشی کی نعش سعودی ہسپتال میں پڑے پڑے گل گئی

بل پر تنازعہ ، بنگلہ دیشی کی نعش سعودی ہسپتال میں پڑے پڑے گل گئی
بل پر تنازعہ ، بنگلہ دیشی کی نعش سعودی ہسپتال میں پڑے پڑے گل گئی
کیپشن: HOspital

  

جدہ (نیوز ڈیسک) جدہ میں ایک بنگلہ دیشی تارک وطن کے بھائی نے محکمہ صحت کے پاس ایک نجی ہسپتال کے خلاف فرائض کی ادائیگی میں غفلت کی اپیل دائر کی ہے۔ ابوحسین نورزمان نامی 42 سالہ بنگلہ دیشی ہسپتال میں وفات پاگیا تھا لیکن وہاں پڑے پڑے صرف 10 روز میں اس کا قریباً 70 فیصد جسم گل گیا۔ درخواست کے مطابق ہسپتال انتظامیہ نے 5 ہزار ریال کی ادائیگی تک نورزمان کی میت اس کے رشتہ داروں کو دینے سے انکار کردیا تھا۔ اس کے بھائی محمد سراج کا کہنا ہے کہ انتظامیہ نے اسے نورزمان کی موت کی خبر ہی اس کے مرنے کے 4 روز بعد دی۔ پھر جب رشتہ داروں نے میت بنگلہ دیش بھیجنے کی کوشش کی تو بتایا گیا کہ سر کے علاوہ تمام جسم گل چکا ہے۔

قریباً دو ماہ قبل مریض کو ہسپتال داخل کیا گیا تھا۔ ابتدائی طور پر اس کے مرض کی درست تشخیص نہ ہوسکی لیکن علاج کیا جاتا رہا۔ بعد میں معلوم ہوا کہ نورزمان ایچ آئی ای کا مریض ہے اور مرض شدت اختیار کرگیا ہے۔ گزشتہ ماہ مریض کا انتقال ہوگیا۔ اس کے بھائی کا موقف ہے کہ نورزمان کے پاس 30 ہزار ریال کی انشورنس پالیسی تھی جبکہ علاج پر 17 ہزار ریال سے زائد خرچ نہ آیا اس کے باوجود ہسپتال انتظامیہ نے بل کا تنازعہ کھڑا کیا۔ مزید یہ کہ نور زمان کے مرض کی تشخیص اور علاج میں بھی غفلت برتی گئی۔

مزید :

انسانی حقوق -