آزادی کے نام پر سڑکوں پر سرعام لوگوں کو شیشے کے ڈبے میں شرمناک کام پر اُکسانے والی نوجوان لڑکی کو گرفتار کرلیا گیا

آزادی کے نام پر سڑکوں پر سرعام لوگوں کو شیشے کے ڈبے میں شرمناک کام پر اُکسانے ...
آزادی کے نام پر سڑکوں پر سرعام لوگوں کو شیشے کے ڈبے میں شرمناک کام پر اُکسانے والی نوجوان لڑکی کو گرفتار کرلیا گیا

  

لندن (نیوز ڈیسک) جنسی بے راہ روی مغربی ممالک میں معمول کی بات بن چکی ہے لیکن لندن کے مشہور ٹیرفالگر سکوائر میں ایک بدنام زمانہ خاتون آرٹسٹ نے ایسی بے حیائی کا مظاہرہ کیا کہ اہل لندن بھی کانپ اٹھے اور پولیس کو بلوانا پڑگیا۔

حاملہ بیوی کو اچانک چھوڑ کر جانے والا شوہر 17 سال بعد واپس آگیا، لیکن پھر آتے ہی اپنی جوان بیٹی کے ساتھ ایسی شرمناک ترین حرکت کردی کہ سن کر انسانیت شرماجائے

اخبار ڈیلی میل کی رپورٹ کے مطابق سوئٹزرلینڈ سے تعلق رکھنے والی خاتون آرٹس مائلو موئر اپنے برہنہ جسم پر ایک چھوٹا سا شیشے کا ڈبہ چڑھا کر ٹریفالگرسکوائر میں آگئی اور اعلان کردیا کہ جو چاہے اس کے جنسی اعضاءکو چھوسکتا ہے اور انہیں محسوس کرسکتا ہے۔ آرٹسٹ کی پیشکش کا فائدہ اٹھاتے ہوئے متعدد مردوں نے اس کے اعضاءکو چھوا۔ وہ ہر شخص کو 30 سیکنڈ کے لئے خود کو چھونے کا موقع فراہم کرتی رہی۔ بے حیائی کا یہ کھیل طویل وقت تک جاری رہا اور اس دوران پرہجوم ٹریفالگر سکوائر میں سینکڑوں لوگ یہ بیہودہ تماشہ دیکھتے رہے۔ بالآخر اس شرمناک منظر کو دیکھنے والے کچھ لوگوں کا ضبط جواب دے گیا اور انہوں نے پولیس کو بلوالیا۔ پولیس موقع پر پہنچی اور بے حیا آرٹسٹ کو گرفتار کرکے لے گئی۔

واضح رہے کہ مائلو موئرکے لئے سرعام برہنگی اور گرفتاری کا یہ پہلا واقعہ نہیں تھا۔ وہ اس سے پہلے بھی کئی یورپی ممالک میں ایسی ہی پرفارمنس پیش کرچکی ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ امریکا اور برطانیہ کی نسبت یورپی مماکل کے لوگ بہت کھلے ذہن والے ہیں اور وہاں انہیں بہت کم مسائل پیش آتے ہیں۔ لندن کے لوگوں کے بارے میں ان کا کہنا تھا کہ وہ ان کی پرفارمنس میں دلچسپی لے رہے تھے البتہ پولیس بہت سختی سے پیش آئی۔ مائلو موئر کو عدالت میں پیش کیا گیا جہاں انہیں مجموعی طور پر 910 پاﺅنڈ کا جرمانہ کر دیا گیا۔

مزید : ڈیلی بائیٹس