دوسروں کو داعش میں شامل کروانے والے اس شخص نے خود تنظیم میں شمولیت کیلئے شام جانے سے انکار کیوں کردیا؟ وجہ ایسی کہ جان کر آپ کی حیرت کی بھی انتہا نہ رہے گی

دوسروں کو داعش میں شامل کروانے والے اس شخص نے خود تنظیم میں شمولیت کیلئے شام ...
دوسروں کو داعش میں شامل کروانے والے اس شخص نے خود تنظیم میں شمولیت کیلئے شام جانے سے انکار کیوں کردیا؟ وجہ ایسی کہ جان کر آپ کی حیرت کی بھی انتہا نہ رہے گی

  

سڈنی (مانیٹرنگ ڈیسک) مغربی ممالک کے نوجوانوں کو داعش کے لئے بھرتی کرکے شام بھیجنے والے ایک آسٹریلوی شخص نے خود محض اس وجہ سے شام جانے کا ارادہ ترک کردیا کہ وہاں بیت الخلاءمیں ٹوائلٹ پیپر دستیاب نہ تھا۔

ویب سائٹ 9نیوز کی رپورٹ کے مطابق حمدی القدسی نامی شخص نے درجن بھر نوجوانوں کو داعش میں شمولیت کے لئے تیار کیا اور انہیں جنگ کے شعلوں میں جھلسنے کے لئے شام بھیج دیا۔ اس کے بھیجے گئے افراد میں کانر تیمل اور مہمت بائبر نامی دو نوجوان بھی شامل تھے۔ حمدی القدسی خود بھی شام جانے کا ارادہ رکھتا تھا لیکن شام پہنچنے سے پہلے اس نے تیمل اور بائبر سے وہاں کے حالات کے بارے میں تفصیلی معلومات لیں۔ کینیڈین سپریم کورٹ میں پیش کی گئی دستاویزات میں انکشاف ہوا کہ جب شام میں موجود تیمل اور بائبر نامی نوجوانوں نے حمدی القدسی کو بتایا کہ وہاں بیت الخلاءمیں جسم کی صفائی کے لئے پانی استعمال ہوتا ہے، جبکہ ٹوائلٹ پیپر کا کوئی وجود نہیں، تو اسے یہ بات اتنی ناگوار گزری کہ اس نے شام جانے کا ارادہ ہی ترک کردیا۔

اس نوجوان لڑکی سے یہودی دنیا میں سب سے زیادہ نفرت کرتے ہیں کیونکہ۔۔۔ انتہائی حیران کن وجہ جانئے

جب شام میں موجود نوجوانوں نے اصرار کیا کہ وہ ان کے پاس جلد پہنچے تو اس نے جواب میں لکھا، ”میرے باپ کا گھٹنے کا آپریشن ہونے والا ہے، میری ماں کو کینسر ہوگیا ہے اور چھوٹا بھائی ذہنی بیماری میں مبتلا ہے۔ جونہی یہ سب صحت مند ہوجائیں گے تو میں بھی آپ کے پاس پہنچ جاﺅں گا۔“

عدالتی دستاویزات کے مطابق دوران تفتیش انکشاف ہوا کہ حمدی القدسی کو جب معلوم ہوا کہ شام میں بیت الخلاءمیں ٹوائلٹ پیپر دستیاب نہیں ہو گا تو اس نے شام جانے کا ارادہ ترک کردیا تھا،البتہ وہاں بھیجے گئے نوجوانوں کو فریب دینے کے لئے اپنے گھر والوں کی بیماری کا جھوٹا بہانہ گھڑ لیا تھا۔

مزید : ڈیلی بائیٹس