ڈھاکہ حملہ ،دہشت گردوں نے ہوٹل کے باورچی سے مچھلی اور پاستا بنوا کر سحری کی ، یرغمال بنائے گئے ہوٹل کے اسسٹنٹ چیف شیف کا دعوی

ڈھاکہ حملہ ،دہشت گردوں نے ہوٹل کے باورچی سے مچھلی اور پاستا بنوا کر سحری کی ، ...
ڈھاکہ حملہ ،دہشت گردوں نے ہوٹل کے باورچی سے مچھلی اور پاستا بنوا کر سحری کی ، یرغمال بنائے گئے ہوٹل کے اسسٹنٹ چیف شیف کا دعوی

  

ڈھاکہ(مانیٹرنگ ڈیسک)بنگلہ دیشی دارالحکومت ڈھاکہ کے سفارتی ایریا کے معروف ریسٹورنٹ میں چند روز قبل ہونے والے دہشت گردوں کے حملے کی دلچسپ تفصیلات سامنے آئی ہیں ،ڈھاکہ کے اس ریستوران میں جہاں 7 دہشت گردوں نے تقریبا 12 گھنٹوں تک لوگوں کو یرغمال بنائے رکھا، وہیں ہوٹل کا ایک شیف (کک) دہشت گردوں کے کہنے پر مچھلی اور پاستا بناتا رہا۔

بھارتی نجی چینل ’’این ڈی ٹی وی‘‘ کے مطابق ڈھاکہ حملے میں زندہ بچ جانے والے ہوٹل کے اسٹنٹ چیف شیف (کک) کا کہنا تھا کہ دہشت گردوں نے زیادہ تر لوگ حملے کے پہلے چندمنٹ میں ہی مار دیے تھے،دہشت گردوں نے گیس سلنڈر کا استعمال کرتے ہوئے لوگوں کو مارا اور ان کے عضو کاٹ ڈالے، میں اپنے آٹھ ساتھیوں کے ساتھ باتھ روم کو اندر سے لاک کر کے چھپ گئے، وہ باتھ روم آٹھ آدمیوں کے چھپنے کے لئے چھوٹا تھا کیونکہ وہاں ہواکی آمدو رفت بھی ناکافی تھی، تقریبا آدھی رات کو دہشت گردوں کو ہمارے باتھ روم میں چھپنے کا پتا چل گیا،انہوں نے ہم سب کو باہر نکلنے کا حکم دیا ،دہشت گردوں کے ہاتھوں میں آٹو میٹک اسلحہ اور بڑا سا چاقو تھا ، انہوں نے ہماری تلاشی لی اور پوچھا کہ ہم میں سے کوئی غیر ملکی تو نہیں ہے،جبکہ ہمارا ساتھ غیر ملکی کک تو پہلے ہی فرار ہونے میں کامیاب ہو گیا تھا ،کسی غیر ملکی کو نہ پا کر انہوں نے ہمیں واپس باتھ روم کے اندر بھیج دیا اور دروازہ باہر سے بند کر دیا،باتھ روم میں بند رہنے کے گھنٹوں بعد جب وہاں سانس لینا مشکل ہو گیا، تب ہم نے مجبوری میں دروازہ پیٹنا شروع کر دیاتو پھر دہشت گردوں نے ہمیں باتھ روم سے نکلنے کی اجازت دے دی۔

ڈپٹی چیف شیف (کک) کا کہنا تھا کہ جب میں نے ایک آدمی سے لاشوں اور فلور پر پڑے خون کی طرف اشارہ کر کے پوچھا کہ کیا اس نے انہیں بچانے کے لئے کچھ کیا؟تو اس آدمی نے میری طرف دیکھا اور مسکراتے ہوئے کہا کہ وہ ان لوگوں میں سے ایک ہے جس نے ان کو مارا ہے۔ڈپٹی چیف شیف (کک) کا کہنا تھا کہ دہشت گردوں نے روزہ رکھنے کے لئے سحری میں ہم سے مچھلی اور پاستا بنوا کر بھی کھائی ۔یاد رہے کہ چند روز قبل ڈھاکہ کے سفارتی علاقے میں معروف ریستوران میں 7 دہشت گردوں نے تقریبا 12 گھنٹوں تک ملکی و غیر ملکی لوگوں کو یرغمال بنائے رکھااور20افراد کو موت کے گھاٹ اتار دیا تھا جن میں غیر ملکی سفارتی عملے کے اہلکار بھی شامل تھے ۔اس حملہ کی ذمہ داری عالمی دہشت گرد تنظیم ’’داعش ‘‘ نے قبول کی تھی جبکہ بنگلہ دیشی سیکیورٹی حکام کا کہنا ہے کہ تمام حملہ آور بنگلہ دیشی شہری اور کالعدم تنظیم کے رکن تھے اور ان میں سے کوئی بھی غیر ملکی شامل نہیں تھا ۔

مزید : بین الاقوامی