ایون فیلڈ ریفرنس کیس ، عدالت نے تحریری فیصلہ جاری کر دیا

ایون فیلڈ ریفرنس کیس ، عدالت نے تحریری فیصلہ جاری کر دیا
ایون فیلڈ ریفرنس کیس ، عدالت نے تحریری فیصلہ جاری کر دیا

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن ) احتساب عدالت نے ایون فیلڈ ریفرنس میں نوازشریف اور مریم نواز کو سزائیں سنا دی ہیں اور اب تحریری فیصلہ بھی جاری کر دیا گیاہے جس میں نوازشریف کے قومی اسمبلی اور قوم سے خطاب کا حوالہ دیا گیاہے ۔

تفصیلات کے مطابق فیصلے میں وفاقی حکومت کو ایون فیلڈ اپارٹمنٹس ضبط کرنے کا حکم جاری کر دیا گیاہے جس کے مطابق مریم نواز اپنے والد نواز شریف کی جائیداد چھپانے کے لیے آلہ کار بنیں،مریم نواز نے جرم کے ارتکاب میں اپنے والد کی معاونت کی، ملزمان نے قطری خطوط کے ذریعے لندن جائیدادکاکبھی پہلے ذکرنہیں کیا،قطری خطوط سنی سنائی بات سے زیادہ کچھ نہیں،1993 میں مریم نواز کی عمر 18سال ، حسین نواز 20 ، حسن نواز17سال کے تھے، 1993 میں تینوں ملزمان کم عمرتھے ، اپارٹمنٹس خرید نے کے وسائل نہ تھے، عام طور پر بچے والدین کے ہی زیر کفالت ہوتے ہیں، نوازشریف یہ نہیں کہہ سکتے کہ انہوں نے بچوں کو رقم نہیں دی،حسن نوازکے انٹرویو کی مطابق بھی ایون فیلڈ اپارٹمنٹس ان کے زیر استعمال رہے،کیپٹن ریٹائرڈ صفدر نے بھی جرم کے ارتکاب میں معاونت کی،اپارٹمنٹس سے متعلق کوئی معاون دستاویز یا براہ راست ثبوت نہیں دیا گیا، نوازشریف کو 10سال قید بامشقت اور 8ملین پاو¿نڈ جرمانہ کیا جاتا ہے، نوازشریف کو ایک سال اضافی سزا بھی دی گئی،نوازشریف کو شیڈول ٹو کے تحت مزید ایک سال قید کی سزا دی گئی جبکہ ملزمہ مریم نواز انتخابات لڑنے کے لیے 10 سال کے لیے نااہل ہو گئیں ہیں ، مریم نواز کو 7 سال قید بامشقت سزا دی جاتی ہے۔مریم نواز کو 2 ملین پاو¿نڈ جرمانہ کیا جاتا ہے،

فیصلے کے مطابق حسین ، حسن نواز کے دائمی ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کردیے گئے،نوازشریف کی دونوں سزائیں ایک ساتھ شروع ہوں گی جبکہ کیپٹن(ر) صفدر کو ایک سال قید با مشقت کی سزا دی جاتی ہے۔

مزید :

قومی -