اہل گوجرانوالہ کورونا سے محفوظ رہے

اہل گوجرانوالہ کورونا سے محفوظ رہے

  

ہمارے معاشرے میں بیورو کریسی کے بارے میں خیالات کچھ اچھے نہیں۔ اس بات سے انکار ممکن نہیں کہ بہت سے کاموں میں روڑے اٹکانے کا الزام خودبیوروکریسی پر عائدہوتا ہے۔انھیں سخت تنقید کا نشانہ بھی بنایا جا تا ہے لیکن ان کے اچھے کام کی تعریف نہ کرنا پیشہ ورانہ بددیانتی ہو گی۔ ملک پاکستان گزشتہ 6ماہ سے کورونا وباء کی وجہ سے سخت مشکلات کا شکار ہے تمام صوبے اور اضلاع کی انتظامیہ اس کے پھیلاؤ کی روک تھام کے لیے دن رات کو شاں ہے یہ ہی بیوروکریسی امن و امان، عوام کو درپیش مسائل کے حل ریونیو سمیت دیگر ٹارگٹ کے حصول کو بھی ممکن بنا نے کے لیے بھی کو شاں ہے۔ صوبہ پنجاب کے ضلع لاہورکی طرح گوجرانوالہ میں بھی کورونا وائرس کی وباء شروع ہوتے ہی یکدم شرح بلند یوں تک پہنچ گئی۔ ضلعی انتظامیہ کے علاوہ پنجاب حکومت سخت تشویش کا شکار تھی اور بار بار ضلعی انتظامیہ کو یہ پیغام دیا جا رہا تھا کہ گوجرانوالہ میں کورونا وبا ء کے پھیلاؤ کو روکا جائے کہ کہیں پنجاب کا کورونا کے حوالے سے یہ دوسرا بڑا ضلع نہ بن جائے۔ ڈپٹی کمشنر لیفٹیننٹ (ر)سہیل اشرف گو رائیہ نے پنجاب حکومت کی طرف سے دیے گئے چیلنج کو خندہ پیشانی سے قبول کیا اور اپنا دن کا سکون رات کا چین کورونا وائرس کے مریضوں کی دیکھ بھال اور حفاظتی اقدامات کے لیے وقف کر دیا اور کورونا وائرس کی لہر کا نہ صرف خاتمہ ہوا بلکہ اس وقت مختلف ہسپتالوں میں داخل سینکڑوں کورونا وائرس کے مریض صحت یاب ہو کر گھروں کو جا چکے ہیں۔ ایک اعلی انتظامی آفیسرہونے کی وجہ سے ڈپٹی کمشنر سمیت تمام سٹیک ہولڈروں نے ملکر یہ فیصلہ کیا کہ وہ کورونا وائرس کو گوجرانوالہ میں ہر گز پھیلنے کا موقع نہیں دیں گے اور عوام کے لیے آسانیاں پیدا کرتے ہوئے اس کا خاتمہ بھی کریں گے۔ کورونا کی وباء کے آغاز پر ہی ضلعی انتظامیہ جوکہ سٹیک ہولڈرز بھی ہیں نے فیصلہ کیا کہ عوام کے لیے پریشانی کا سبب بننے والا کوئی ایسا لاک ڈاؤن بھی نہیں کیا جائے گا بلکہ فوری طور پر مشکوک افراد کو قرنطینہ سنٹر پہنچا کر انکی دیکھ بھال کی گئی اور جو لوگ یورپ اور دیگر ممالک سے گو جرانوا لہ آئے تھے انہیں فوری طور پر مقامی ہسپتال بھجوایا گیا،ڈپٹی کمشنر اور اس کی ٹیم نے گلی گلی اور کوچہ کوچہ چھان مارا اور ایسے لوگوں کی تلاش میں رہے جو بیرون ملک سے واپس آئے تھے۔الحمد للہ ضلع گوجرانوالہ میں کافی حد تک اس کے پھیلاؤ کو روک لیا گیا ہے یہ سارا کارنامہ ڈپٹی کمشنر کی پیشہ وارانہ اور محب الوطنی کا نتیجہ ہے۔یہ ہی نہیں ڈپٹی کمشنر گوجرانوالہ نے عوام کو درپیش دیگر مسائل کا بھی بھر پورخیال رکھا،گرانفرشوں، اشیاء مہنگے داموں فروخت کرنے والوں، زخیرہ اندوزوں کے خلاف کریک ڈاؤن کا عمل بھی جاری رہا،،گندم کی غیر قانونی اسمگلنگ کو روکا گیا۔انسداد تمباکو نوشی۔ ڈینگی مچھر کی افزائش کی روک تھام، لاک ڈاؤن سمیت تمام ایس او پیز پر سختی سے عمل درآمد بھی کروایا گیاای۔پی۔آئی، پولیو اور کورونا وائرس کی موجودہ صورتحال بارے بھی محکمہ صحت حکام سے مسلسل بریفنگ لیتے رہے، کورونا وائرس کے متاثرین سمیت دیگر ضرورت مندوں میں راشن تقسیم کروانے کا سلسلہ بھی تاحال جاری ہے۔ سیلابی صورتحال سے نمٹنے کے لیے جامع اور مربوط پلان تیار کیا جا چکاہے۔کسان ممبران کو ٹڈی دل موبائل ایپ اور ٹڈی دل کنٹرول کے حوالے سے تربیت دی گئی۔ شہر میں جاری تمام ترقیاتی منصوبوں کو مکمل کرنے،محکمہ صحت کوتمام افراد کے سیمپلز کی سہولت کو یقینی بنانے کا حکم دیا گیا۔ زرعی انکم ٹیکس اور لینڈ بیس ٹیکس کا ہدف 6 کروڑ 60 لاکھ مقررہ تھا 10 کروڑ 23 لاکھ ریونیو اکٹھا کیا گیا جو مقررہ ہدف سے 55 فیصد اضافی ہے۔ اس کے علاوہ ایف بی آر کی فراہم کردہ زرعی انکم ٹیکس فہرست سے بھی 5 کروڑ سے زائد کی ریکوری کی گئی جو کہ مقررہ ہدف کا 54 فیصد ہے۔ نہری پانی پر آبیانہ فیس کی 8کروڑ 36لاکھ سے زائد ریکوری کی گئی جو مقررہ ہدف کا 69فیصد ہے۔میوٹیشن فیس کی ریکوری 34کروڑ36لاکھ سے زائد کی گئی جو کہ مقررہ ہدف کا 61فیصد ہے۔اس کے علاوہ سٹیمپ ڈیوٹی کی ریکوری 2ارب 95کروڑ 85لاکھ سے زائد کی گئی جو کہ مقررہ ہدف کا 70فیصد ہے۔اس طرح ضلع گوجرانوالہ میں مجموعی طور پر 3ارب 54کروڑسے زائد کے حکومتی ٹیکس اکٹھے کیے گئے۔موجودہ حکومت نے پائیدار اور حقیقی ترقی کے عمل اور عوامی ریلیف کے منصوبوں کو آگے بڑھانے کے لئے ہمہ نوعیت کے انتظامات اقدامات کئے ہیں جن میں ضلعی سطح پر باصلاحیت اور پر عزم افسران کی تعیناتی بھی شامل ہے تاکہ میرٹ کی بالادستی‘ قانون کی عملداری اور فرض شناسی کے کلچر کو مضبوط بنانے کے ساتھ ساتھ بددیانتی اور ہر قسم کی کرپشن کی سختی سے حوصلہ شکنی ہو سکے۔ اس ضمن میں ضلع گوجرانوالہ کے لئے ڈپٹی کمشنر گوجرانوالہ لیفٹیننٹ (ر)سہیل اشر ف کی تعیناتی حکومت پنجاب کا بہترین فیصلہ ہے جنہوں نے اپنے عہدے کا چارج سنبھالتے ہی جس متحرک انداز میں سرکاری فرائض انجام دینے شروع کئے اس سے ان کی عوامی خدمت و ضلعی ترقی میں گہری دلچسپی اور محکمانہ سروسز کے معیار میں اضافہ کرنے سے متعلق ان کا گرانقدر مشن صاف عیاں ہے۔ ڈپٹی کمشنر گوجرانوالہ لیفٹیننٹ (ر)سہیل اشرف 29نومبر2019 کو تعینات ہوئے،تعیناتی کے مختصر سات ماہ میں ان کی بہترین انتظامی صلاحیتیں سامنے آئی ہیں جو کہ اس ضلع کی انتظامی و ترقی کے لئے خوش قسمتی کی علامت ہیں۔ ڈپٹی کمشنر گوجرانوالہ لیفٹیننٹ (ر)سہیل اشرف عوامی خدمت و قومی ترقی کے سلسلے میں وزیر اعظم کے ویژن سے اچھی طرح واقف ہیں اوران میں پاکستانی قوم کو مسائل کے اندھیروں سے نکالنے اور ایک خوشحال و مہذب قوم بنانے کے سلسلے میں وزیر اعظم عمران خان کے نصب العین اور پختہ ارادوں پر عملدرآمد کرنے کی بھر پور صلاحیتیں اور عزم و ہمت موجود ہے۔ وہ مقامی سیاسی قیادت اور پریشر گروپس کو ساتھ لے کر چلنے کا بھی ہنر جانتے ہیں اور محکمانہ ورکنگ ریلیشن شپ قائم رکھنے میں بھی پر اعتماد ہیں یہی وجہ ہے کہ انتظامی و ترقیاتی امور میں صحیح سمت بڑھتے ہوئے قوموں کے اچھے نتائج حاصل ہونے کی توقع ہے۔ سرکاری ادارے اگر خلوص نیت اور ذمہ داری سے فرائض انجام دیں تو نہ صرف عوامی مسائل میں کمی آتی ہے بلکہ عوام کا ان اداروں پر اعتماد بھی مضبوط ہوتا ہے۔ مقامی سطح پر حکومتی اداروں کی اصلاح اور ان پر عوام کے اعتماد کی بحالی ضلعی انتظامیہ، انتظامی نگرانی کے فرائض انجام دینے پڑتے ہیں جن میں کامیابی کے لئے معاملہ فہم اور بہترین انتظامی صلاحیتوں کے حامل ضلعی سربراہ (ڈپٹی کمشنر) ناگزیر ہیں ملک اور صوبے کے تیسرے بڑے شہر گوجرانوالہ کے سرکاری و انتظامی معاملات چلانے کے لئے سہیل اشرف گورائیہ جیسے پرعزم اور باصلاحیت ڈپٹی کمشنر کی ضرورت ہوتی ہے جنہوں نے مختصر عرصہ میں نہ صرف گوجرانوالہ کے تہذہبی و ثقافتی کلچر کو سمجھا ہے بلکہ عوامی مسائل کے حل‘سرکاری اداروں کی کارکردگی کے معیار میں اضافہ اور ترقیاتی سرگرمیوں میں تیزی لانے کے لئے انتظامی معاملات کو نئی جہت دی ہے۔سرکاری فرائض کی ادائیگی میں ڈپٹی کمشنر گوجرانوالہ لیفٹیننٹ (ر)سہیل اشرف کے انداز خدمت کا اہم پہلو عوام سے مسلسل رابطہ ہے اس مقصد کے لئے وہ بلاناغہ روزانہ اپنے دفتر سے نکل کر ڈپٹی کمشنر آفس کے باہر میز کرسی لگا کر عوام کے مسائل سنتے اور ان کی درخواستیں وصول کرکے داد رسی کے لئے متعلقہ محکموں کو احکامات جاری کرتے ہیں جو ایک خدا ترس‘ہمدرد اورجذبہ خدمت سے سرشار آفیسر کی شاندار مثال ہے۔ عوامی خدمت کے لئے روزانہ دفتر سے باہر دستیاب رہنے کے علاوہ ڈپٹی کمشنر حکومت پنجاب کی پالیسی کے مطابق کررونا وائرس سے پہلے شیڈول کے مطابق آئے روزکھلی کچہری بھی لگاتے تھے جس میں لوگوں کی شکایات و مسائل سنے جاتے ان کا یقین ہے کہ ضلعی انتظامیہ کسی حد تک ایک عام سائل کی خدمت کرنے میں کامیاب ہو رہی ہے۔

گوجرانوالہ کے تشخص‘ تہذیب و ثقافت اور تاریخی ورثہ کواجاگر کرنے کے لئے بہتر منصوبہ بندی زیر عمل ہے اس مقصد کے لئے گوجرانوالہ کی تاریخی عمارتوں و دیگر ثقافتی ورثہ کا دورہ کرکے ماہرین آثار قدیمہ کے ساتھ مشاورت جاری ہے۔ انسداد کررونا، ڈینگی‘ انسداد سموگ و متعدی امراض پر قابو پانے‘ شعبہ صحت و تعلیم کی کارکردگی چیک کرنے‘ محنت کشوں‘ تاجروں کے مسائل حل کرنے‘ امن کمیٹیوں کو متحرک رکھنے‘ میڈیا سے رابطہ‘ امن و امان برقرار رکھنے‘ ترقیاتی سکیموں کی منظوری اور تعمیراتی پیش رفت کا جائزہ لینے اور دیگر ہمہ نوعیت کے انتظامی امور اور محکمانہ کارکردگی کا جائزہ لینے کے لئے اجلاس منعقد کرنے کے علاوہ عوامی بہبود و ترقی کے لئے حکومت پنجاب کی ہمہ جہت پالیسیوں پر عملدآمد کرانے کے لئے ہمہ وقت متحرک رہتے ہیں اور کوئی لمحہ بھی ضائع کئے بغیر عوام کی خدمت کے لئے سرگرم رہنے والے ڈپٹی کمشنر کو ضلع گوجرانوالہ کے لئے بہترین انتخاب کہا جا سکتا ہے جنہیں انتظامی معاملات پر مکمل کمانڈ اور کنٹرول حاصل ہے۔ ان کی شاندار کامیابی کے لئے دعا گو ہیں۔ صوبے کے دوسرے افسران پر لازم ہے کہ وہ بھی ان کی کاپی کریں اور اپنے ذہن کا دائرہ وسیع کریں اور اپنے مقامی حالات کے مطابق پیش قدمی کریں۔عوامی خدمت کی ایک اچھی روش ڈپٹی کمشنرگوجرانوالہ نے قائم کی ہے۔ وہ سماجی کاموں میں بھی پیش پیش رہتے ہیں۔ اگر کسی مستحق یا مریض کو بے یارو مدد گار دیکھیں توسرکاری گاڑی میں اسے گھر پہنچادیتے ہیں ایسا ہی اگرسبھی افسران میں عوامی خدمت اور اپنی ذمہ داریاں دیانت سے ادا کرنے کا جذبہ پیدا ہو جائے تو یہ دھرتی جنت بن جائے۔ڈپٹی کمشنر سہیل اشرف کا کہنا ہے کہ اس کی کامیابی کا رازاس کی ٹیم کی آپس میں کوارڈی نیشن ہے وہ جو بھی کام کرتے ہیں ٹیم ممبران کو ساتھ لیکر اور ان کی مشاورت سے کرتے ہیں اس کی ٹیم میں شامل اور مایہ ناز تمام اداروں کے افسران ہیں بالخصوص وہ ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر (ریونیو) علی اکبر بھنڈر، ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر (جنرل)انجم ریاض سیٹھی،ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر فنانس و پلاننگ ڈاکٹر صفدر،اسسٹنٹ کمشنر ز(جنرل تنویر یاسین،سٹی عثمان سکندر،صدر ساریہ حیدر)،سی او کارپوریشن امجد ڈھلوں،سی ای او ہیلتھ اتھارٹی ڈاکٹر فرجاد بٹ سمیت دیگر متعلقہ محکموں کے افسران کے بہت زیادہ مشکور ہیں کہ ان سب نے کورونا وباء کے پھیلاؤ کو روکنے میں ان کی بہت زیادہ مدد کی ہے۔

٭٭٭

مزید :

ایڈیشن 1 -