ڈاکٹر رفیق احمدکی خدمات کے اعتراف میں تقریب کا اہتمام

ڈاکٹر رفیق احمدکی خدمات کے اعتراف میں تقریب کا اہتمام

  



لاہور(ایجوکیشن رپورٹر)ڈاکٹر رفیق احمدکی خدمات کے اعتراف میں انہیں ’’پسرِ پاکستان‘‘کا خطاب دیا ، انہوں نے یہ خطاب قبول کر کے ہم پر احسان کیا ہے ان خیالات کااظہار تحریک پاکستان کے سرگرم کارکن و آبروئے صحافت ڈاکٹر مجید نظامی نے ایوان کارکنان تحریک پاکستان،شاہراہ قائداعظمؒ لاہور میں ممتاز دانشور،ماہر تعلیم و اقتصادیات ، کارکن تحریک پاکستان پروفیسر ڈاکٹر رفیق احمد کو’’پسرِ پاکستان‘‘کا خطاب دئیے جانے کی تقریب سے صدارتی خطاب کے دوران کیاتقریب کااہتمام مجلس کارکنان تحریک پاکستان نے کیا تھا اس موقع پر مجلس کارکنان تحریک پاکستان کے صدر کرنل(ر) جمشید احمد ترین، سی پی این ای (CPNE) کے صدر مجیب الرحمن شامی،سابق وفاقی وزیر قانون ایس ایم ظفر،معروف ادیبہ و کالم نگار بیگم بشریٰ رحمن،بیگم مہناز رفیع،کرنل(ر)اکرام اللہ خان،میجر جنرل (ر)راحت لطیف،پروفیسر ڈاکٹر پروین خان، ڈاکٹر اجمل نیازی،پیر اعجاز ہاشمی،قیوم نظامی، فرزانہ نذیر،میاں ابراہیم طاہر،مولانا محمدشفیع جوش،عزیز ظفر آزاد،جسٹس(ر)منیر احمد مغل،حنیف شاہدسمیت مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد کثیر تعداد میں موجود تھے۔ ڈاکٹر مجید نظامی نے کہا کہ میں اور ڈاکٹر رفیق احمداسلامیہ کالج ریلوے روڈ،لاہور میں دو سال کلاس فیلو رہے ہیں۔بعدازاں ڈاکٹر رفیق احمدآکسفورڈ یونیورسٹی چلے گئے اور واپس آکراستاد بن گئے۔میں انہیں استادوں کا بھی استاد کہتا ہوں۔ انہوں نے تحریک پاکستان میں سرگرمی سے حصہ لیا۔اب نظریۂ پاکستان ٹرسٹ کے پلیٹ فارم سے پاکستان کے اساسی نظریہ کے تحفظ اور فروغ کیلئے کوشاں ہیں۔ڈاکٹر مجید نظامی نے کہا کہ ہم اپنے پلیٹ فارم سے تحریک پاکستان کے کارکنوں کی پذیرائی جاری رکھیں گے۔کرنل(ر)جمشید احمد ترین نے کہا کہ میں ڈاکٹر رفیق احمد کو یہ خطاب ملنے پر مباکرباد پیش کرتاہوں ۔انہوں نے تحریک پاکستان کے حوالے سے خاصا کام کیا ہوا ہے، وہ تحریک پاکستان میں لاہور کا کردار کے موضوع پر بھی ایک کتاب تصنیف کریں۔مجیب الرحمن شامی نے ڈاکٹر رفیق احمد کو مبارکباد پیش کرتے ہوئے کہا کہ اللہ تعالیٰ انہیں سلامت رکھے اور مزید کام کرنے کی ہمت عطا فرمائے۔بیگم بشریٰ رحمن نے کہا کہ ڈاکٹر رفیق احمد کیلئے پسر پاکستان ہونا دنیا کا سب سے بڑا اعزاز ہے۔ان کے ماضی وحال کی کارکردگی اور مستقبل کے عزائم کو دیکھتے ہوئے انہیں ہی پسر پاکستان ہونا چاہئے۔کسی شخص کو اس کی کارکردگی کے اعتراف میں اعزاز سے نوازاجانا بڑے فخر کی بات ہے۔ میں نے اپنی زندگی میں تین انسانوں حکیم محمد سعید،مجید نظامی اورڈاکٹر رفیق احمدسے بہت کچھ سیکھا ہے۔ایس ایم ظفر نے کہا کہ میری ڈاکٹر رفیق احمد سے عقیدت آج محبت میں بدل گئی ہے۔میری ان سے محبت کی وجہ یہ ہے کہ یہ قائداعظمؒ سے محبت کرتے ہیں۔ڈاکٹر رفیق احمد بڑے سے بڑے کام کو بھی نہایت احسن انداز سے انجام دیتے ہیں۔انہیں اپنی سوانح عمری لکھنی چاہئے۔شاہدرشید نے کہا کہ زندہ قومیں اپنے محسنوں کو کبھی فراموش نہیں کرتی ہیں۔یہ تقریب اپنی نوعیت کی منفرد تقریب ہے کہ اس میں قوم کے سچے رہنما کا اعتراف خدمت اس کی زندگی میں ہی کیا جارہا ہے۔تحریک پاکستان کے مقاصد کو آگے بڑھانے کی خاطر خدمات انجام دینے والوں کا بھی اعتراف خدمت کیا جانا چاہئے۔انہوں نے کہا کہ پروفیسر ڈاکٹر رفیق احمد تحریک پاکستان کے نامور کارکن اور وطن عزیز کے بین الاقوامی شہرت یافتہ ماہر تعلیم اور ماہر معاشیات ہیں۔ آپ پنجاب یونیورسٹی لاہور اور اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور کے وائس چانسلر کے عہدہ ہائے جلیلہ پر فائز رہ چکے ہیں۔پروگرام کے دوران جناب ڈاکٹر مجید نظامی نے ڈاکٹر فیق احمد کوپسر پاکستان کا گولڈ میڈل پہنایا۔ آخر میں جسٹس(ر)منیر احمد مغل نے دعا کروائی۔

مزید : میٹروپولیٹن 4


loading...