بیرونی قرضوں پر بنایا گیا بجٹ عوام کو ریلیف نہیں دے سکتا ، فضل الرحمن

بیرونی قرضوں پر بنایا گیا بجٹ عوام کو ریلیف نہیں دے سکتا ، فضل الرحمن

  



اسلام آباد ،لاہور،کراچی(اے این این )جمعیت علماءاسلام(ف) کے سر براہ مو لا نا فضل الرحمن نے کہا ہے کہ بیرونی قرضوں پر بنایا گیا بجٹ عوام کو ریلیف نہیں دے سکتا ،سودی نظام کے خاتمے کے بغیر ملک ترقی نہیں کرسکتا ،آئی ایم ایف اور ورلڈ بنک سے چھٹکارہ حاصل کرنا ہو گا ،قرضوں لے کر معیشت کو چلانا اس کی پیٹھ میں چھرا گھونپنے کے مترادف ہے ۔وہ پارٹی وفود اور راہنماﺅں سے گفتگو کررہے تھے ۔اس مو قع پر مو لا نا عبد الغفور حیدری ،مو لا نا قمر الدین ،مو لا نا امیر الزمان ،مو لا نا قاری محمد یوسف ،مو لا نا سید عبد المجید ندیم شاہ ،مفتی ابرار احمد اور دیگر مو جو د تھے ۔مو لا نا فضل الرحمن نے کہا کہ اسلام کے نام پر بننے والے ملک میں اسلام کا معاشی نظام نافذ کر نے کے بجائے آج بیرو نی ہدا یا ت پر بجٹ بنا یا جا رہا ہے ، بیرو نی قرضوں میں سودکی لعنت نے آنے والی نسلوں کو بھی مقروض بنا دیا ہے ، اسلام کے نام پر بننے والے ملک میںاسلام کے عادلانہ نظام کے نفاذ کے لیئے اقدامات کر نے کے بجائے ار باب اقتدار بیرو نی پا لیسیوں پر عمل پیرا ہیں، آئی ایم ایف اور ورلڈبنک سے چھٹکا رہ حاصل کیئے بغیر عوام کو ریلیف نہیں مل سکتا ہے اورنہ ہی ملک تر قی کی شاہرہ پر چل سکتا ہے ۔انہوں نے کہا کہ سو دی قرضے معیشت کی پیٹھ میں بہت بڑا چھراہے ، سودکی نحوست سے بچنا مشکل ہی نہیں ناممکن ہے انہوں نے زور دیا کہ حکومت نئے قرضے سود سے پاک دے ورنہ ملکی معیشت مزید دلدل میں دھنستی جا ئے گی ، بجٹ میں عوام کو ریلیف نہیں دیا گیابلکہ صرف الفاظ کی ھیر پھیر کی گئی ہے ، عوام غربت کا خاتمہ مانگتے ہیں لیکن بجٹ میں ظاہری طور پر کوئی فوری قدم اٹھتا نظر نہیں آرہا ہے انہوں نے بجلی کے بحران نے عوام کا جینا دوبھر کر دیا ہے ہر گھنٹے بعد لوڈ شیڈنگ نے عوام کو ڈپریشن کا شکار کر دیا ہے ۔انہوں نے کہا کہ اسلام کے نفاذ کے بغیر ملک بحرانوں سے آزاد نہی ہو سکتا ہے ، مہنگائی اور لوڈ شیڈنگ کا جن حکمرانوں کے قابو میں آتا ہوا نظر نہیں آرہا ہے ۔انہوںنے کہا کہ داخلی ،معاشی ،خارجی محاذ پر بیرو نی ڈکٹیشن سے آزادی حاصل کیئے بغیر حقیقی آزادی ممکن نہیں ہے، 65برس کے بعد بھی وطن عزیز بیرو نی ہدایات پر چلا جا رہا ہے، جے یو آئی ملک میں اسلام کے نفاذ کے لیئے کوشاں ہے اور اپنی پر امن جدو جہد پار لیمنٹ کے اندر اور باہر جاری رکھے ہوئے ہے ، سودی نظام اللہ اور اس کے رسول سے جنگ کے مترادف ہے جس سے بچنا چاہیے۔ دریں اثناءجے یو آئی کے مر کزی سیکر ٹری جنرل مو لا نا عبد الغفور حیدری نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ بجٹ میں غریب عوام کو ریلیف دینے کے بجائے مزید تکلیف دیں گئی ہیں

مزید : صفحہ اول


loading...