جیو باز نہ آیا: آئی ایس آئی، وزارت دفاع، پیمرا سے سرعام معا فی کا مطالبہ

جیو باز نہ آیا: آئی ایس آئی، وزارت دفاع، پیمرا سے سرعام معا فی کا مطالبہ
جیو باز نہ آیا: آئی ایس آئی، وزارت دفاع، پیمرا سے سرعام معا فی کا مطالبہ

  



اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک)گذشتہ کچھ عرصہ سے یہ امید پیدا ہو گئی تھی کہ جنگ گروپ اور عسکری حکام کے درمیان معاملہ سلجھنے کو ہے لیکن ایک بار پھر میڈیا گروپ کی جانب سے ایسی حرکت کر دی گئی ہے کہ معاملہ سلجھنے کی بجائے بگاڑ کی جانب جا سکتا ہے۔میڈیا گروپ نے وزارت دفاع ، آئی ایس آئی اور پیمرا کو 50ارب روپے ہرجانے کا قانونی نوٹس جاری کر دیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ 14روز میں کھلے عام معافی مانگی جائے۔

میڈیا گروپ کے مطابق نوٹس میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ وزارت دفاع کی شکایت جیونیوز کے خلاف تھی مگر اس کی آڑ میں جیو کے تمام دیگر چینلز بھی بند کر دیئے گئے ہیںجس سے گروپ کو شدید مالی خسارہ ہوا ہے۔غدار اور پاکستان مخالف ہونے کا بے بنیادالزام عائد کرنے کے باعث میڈیا گروپ کے صحافیوں سمیت ہزاروں کارکنوں کی زندگی کو خطرات لاحق ہوگئے۔اس مہم کے باعث صحافیوں اور کارکنوں کو تشدد کانشانہ بنایا گیااور املاک کو نقصان پہنچایا گیا۔میڈیا گروپ ”جیو اور جنگ گروپ“ نے وزارت دفاع، آئی ایس آئی اور پیمرا کو پاکستان مخالف ایجنڈے پر کام کرنے کے الزامات لگا کر گروپ کو بدنام اور اسکی شہرت کو نقصان پہنچانے ، گروپ کے خلاف تشدد کو ہوا دینے ، جیو چینلز کے بلیک آﺅٹ کے لیے کیبل آپریٹرز پر دباﺅ ڈالنے اور جیو کے چینلز کی بحالی کے لیے سپریم کورٹ کے احکامات پر عملدرآمد میں پیمرا کی ناکامی پر قانونی نوٹس بھجوایا ہے اور اس میں تمام فریقین سے 14دن کے اندر کھلے عام معافی مانگنے اور نقصانات کے ہرجانے کے طور پر 50ارب روپے ادا کرنے کو کہا گیا ہے۔جیو اور جنگ گروپ اور گروپ کی اعلیٰ مینجمنٹ کی جانب سے یہ نوٹس وفاق پاکستان کو وزارت دفاع کے ذریعے، آئی ایس آئی کو وزارت دفاع کے ذریعے اور پیمرا کو دیا گیا ہے۔

مزید : قومی /اہم خبریں


loading...