ڈینگی امریکہ بھی پہنچ گیا

ڈینگی امریکہ بھی پہنچ گیا
ڈینگی امریکہ بھی پہنچ گیا

  



فلوریڈا (بیورورپورٹ ) امریکی ریاست فلوریڈا میں ڈینگی بخار اور چیکنگنیا کے کیس سامنے آنے پر محکمہ صحت نے مقامی آبادی کو حفاظتی تدابیر اختیار کرنے کی ہدایت جاری کردیں۔ محکمہ صحت کا کہنا ہے کہ مچھروں کے کاٹنے سے 42 افراد متاثر ہوئے، جن میں 24ڈینگی بخار جبکہ 18 چیکنگنیا کے مرض میں مبتلا ہیں۔ چیکنگنیا نامی مرض ڈینگی سے مماثلت رکھتا ہے، جس میں بخاری، جسم پر دھبوں کے نشان، پٹھوں میں درد اور متلی وغیرہ آتی ہے۔ ڈینگی اور چیکنگنیا کے موثر تدارک کے لئے کوئی موثر ویکسین دستیاب نیہں ہے، مگر اپنے ارد گرد کے ماحول کو صاف رکھ کر ان امراض سے بچا جا سکتا ہے۔ سرکاری ذرائع کا کہنا ہے کہ یہ امراض پھیلانے والے جراثیم شمالی امریکہ میں نہیں پائے جاتے بلکہ خیال یہ ہے کہ متاثرہ افراد جنوبی امریکہ اور کیربیئن علاقوں سے دوران سفر یہ جراثیم ہمراہ لائے ہیں۔ یوں لگتا ہے کہ یہ مرض پھیل رہا ہے۔ پین امریکن ہیلتھ آرگنائزیشن کے مطابق چیکنگنیا پورٹورتو سمیت 17 ممالک کو پہلے ہی اپنی لپیٹ میں لے چکا ہے۔ اس ضمن میں فلوریڈا میڈیکل اینٹومولوجیکل لیبارٹری کے ڈائریکٹر والٹر تباچنک کا کہنا ہے کہ تاحال کوئی ایسا کیس سامنے نہیں آیا، جس سے اندازہ لگایا جا سکے کہ یہ امراض مقامی طور پر پھیل رہے ہیں مگر ہو سکتا ہے کہ مرض میں مبتلا مریضوں کو کاٹنے کے بعد یہ وائرس مچھروں میں منتقل ہو گیا ہو، جو وبائی مرض کی شکل اختیار کر سکتا ہے۔ میں نے اپنی پوری زندگی میں اتنا بڑا خطرہ کبھی محسوس نہیں کیا، جلد یا بدیر یہ جراثیم مچھروں میں منتقل ہو کر بڑی مصیبت بن جائیں گے۔

مزید : تعلیم و صحت


loading...