چائلڈ لیبر کے خاتمہ کیلئے گرینڈ آپریشن کا فیصلہ ، رپورٹ وزیراعلی کو پیش کی جائیگی

چائلڈ لیبر کے خاتمہ کیلئے گرینڈ آپریشن کا فیصلہ ، رپورٹ وزیراعلی کو پیش کی ...

لاہور(لیاقت کھرل) چائلڈ لیبر کے مکمل خاتمے کے لئے 30جون سے شہر کے ہوٹلوں، ریسٹورنٹس، پٹرول پمپس، آٹو موبائل ورکشاپس اور کارخانوں پر چھاپے مارنے کے لئے پلان کو تیار کر لیا گیا ہے اور اسی میں بھٹوں پر بھی کم عمر کے بچوں سے مزدوری لینے پر چھاپے مارے جائیں گے وزیر اعلیٰ پنجاب کے حکم پر ایک این جی او نے سروے شروع کر دیا ہے جو کہ 30جون کو وزیر اعلیٰ کو سروے رپورٹ پیش کی جائے گی۔ جس کے لئے ڈی سی او لاہور کی نگرانی میں چار سپیشل سکواڈز تشکیل دے دیئے گئے ہیں، اس میں لاہور سے اس پلان کا آغاز کیا جا رہا ہے، جس میں پہلے مرحلہ میں آٹو موبائل ورکشاپوں میں آپریشن کیا جائے گا۔ دوسرے مرحلہ میں ہوٹلوں، ریسٹورنٹس ، کارخانوں اور دیگر ایسے مقامات جہاں چائلڈ لیبر لاز کی خلاف ورزی پائی جائے گی وہاں پر چھاپے مارے جائیں۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ اس میں بھٹوں پر آپریشن کو تیسرے مرحلہ میں رکھا گیا ہے ۔محکمہ لیبر کے ذرائع کا کہنا ہے کہ لاہور میں سب سے زیادہ آٹوز موبائل ورکشاپس میں چائلڈ لیبر لاز کی خلاف ورزی پائی جا رہی ہے۔ جبکہ اس کے ساتھ ہوٹلوں، ریسٹورنٹس اور کارخانوں میں خلاف ورزی کے حوالے سے 30جون تک سروے رپورٹ مکمل ہو جائے گی۔ جس کے بعد بڑے پیمانے پر آپریشن شروع کر دیا جائے گا۔جس میں سکول جانے والے بچوں کو سکولوں میں داخل کر وایا جائے گا۔ جس میں محکمہ سکولز ایجوکیشن اور لیبر ڈیپارٹمنٹ کی نگرانی میں مختلف این جی اوز اور ٹیوٹا سے معاہدے طے پا گئے ہیں، جس میں کم عمر کے بچوں کو سکولوں میں داخل کروایا جائے گا۔ جبکہ ہنرمندی کیلئے ٹیوٹا سے ٹیکنیکل ٹریننگ دلوائی جائے گا۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ سکول جانے والے بچوں سمیت ٹیوٹا سے ٹریننگ حاصل کرنے والے بچوں کے تعلیمی اخراجات پنجاب حکومت برداشت کرے گی اور اسی میں داخلہ فیس، کتابوں اور دیگر اخراجات سمیت یونیفارم تک بچوں کو مفت فراہم کی جائے گی۔ جبکہ بھٹوں سے برآمد ہونے والے بچوں کے والدین کو ماہانہ ایک ہزار الاؤنس دیا جائے گا، جس کیلئے خدمت کارڈ کا اجراء کیا جا رہا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ لاہور سے چائلڈ لیبر کا خاتمہ میں پیش رفت کے بعد اس پلان کا دائرہ کار پورے پنجاب تک بڑھایا جائے جس میں پہلے مرحلہ میں شیخوپورہ، اور قصور اور دوسرے مرحلہ میں فیصل آباد میں اس پلان کو کامیاب بنانے کیلئے آپریشن کیا جائے گا۔ جس کے بعد باقی اضلاع میں اس پلان پر عملدرآمد کیلئے آپریشن کیا جائے گا۔ اس حوالے سے محکمہ لیبر کے ایک اعلیٰ افسر چوہدری محمد نعیم نے بتایا کہ وزیر اعلیٰ پنجاب کے اس پلان سے چائلڈ لیبر کا مکمل خاتمہ ہو سکے گا اور اس سے شرح خواندگی بڑھے گی اور اس کے ساتھ ٹیکنیکل تربیت حاصل کرنے والے بچے مستقل طور پر پاؤں پر کھڑا ہو سکیں گے اس سے بے روزگاری بھی ختم ہو گی۔

مزید : میٹروپولیٹن 1