دریاؤں میں پانی کی کمی کا سنگین مسئلہ

دریاؤں میں پانی کی کمی کا سنگین مسئلہ

ایک خبر میں بتایا گیا ہے کہ پانی کی شدید کمی کی وجہ سے فصلوں کے لئے پانی دستیاب نہیں اور کاشت کی گئی فصلیں سوکھنے لگی ہیں، نہروں میں صرف پینے کے لئے پانی چھوڑا جارہا ہے، پانی کی قلت کے خلاف مختلف علاقوں میں لوگ احتجاج کررہے ہیں، بتایا گیا ہے کہ سکھر، گدو اور کوٹری بیراج سے زرعی مقاصد کے لئے پانی نہیں چھوڑا جارہا ، بدین، نواب شاہ، میر پور خاص اور دیگر علاقوں میں صورت حال زیادہ خراب ہے، سیکرٹری آبپاشی سندھ کا کہنا ہے کہ 15 جون کے بعد پانی کے مسئلہ میں بہتری آئے گی، یہ صورت حال صرف سندھ کی نہیں، بلوچستان کے ساتھ ساتھ پنجاب میں بھی پانی کی کمی پر کاشتکاروں اور زمینداروں میں تشویش پائی جاتی ہے، دریائے ستلج کئی سال پہلے خشک ہوچکا ہے، چناب اور راوی کے بارے میں گزشتہ پانچ چھ برسوں سے یہ رپورٹ آچکی ہے، ان دریاؤں میں پانی بہت کم رہ گیا ہے، اور بیشتر اوقات یہ دریا نہیں نالے کی شکل میں بہتے ہیں، دریاؤں میں پانی کی کمی کی ایک وجہ تو یہ ہے کہ پچھلے کئی سال سے بارشیں بہت کم ہورہی ہیں، ہر سال منگلا اور تربیلا ڈیم کے ساتھ ساتھ دیگر چھوٹے ڈیموں میں پانی قبل از وقت ہی ڈیڈ لیول تک پہنچ جاتا ہے، جس سے ایک طرف تو بجلی کی پیداوار متاثر ہوتی ہے، دوسری جانب شہریوں کو پینے کے پانی کی قلت کا بھی سامنا کرنا پڑتا ہے۔ہمارے ہاں کئی عشروں سے نئے ڈیم نہیں بنائے گئے، پانی جمع کرنے کی نوبت ہی نہیں آتی اور جب پانی زیادہ مقدار میں دستیاب ہوتا ہے تو دریائے سندھ کے راستے سمندر میں پہنچ کر ضائع ہوجاتا ہے۔ حالت یہ ہے کہ زرعی مقاصد کے لئے 70 فیصدپانی دوران ترسیل ضائع ہوجاتا ہے، جدید ٹیکنالوجی کے حصول اور استعمال میں ہم بہت پیچھے ہیں، ہمارے ماہرین روائتی طریقوں سے پانی استعمال کرکے مطمئن بیٹھے رہتے ہیں، ملک میں تین ماہ کی بجائے صرف ایک ماہ کے لئے پانی ذخیرہ کرنے کی گنجائش ہے۔ اس وقت پانی کی قلت کا شکار ملکوں میں پاکستان کا تیسرا نمبر ہے، اس خوفناک صورت حال کی دوسری بڑی وجہ یہ بھی ہے کہ بھارت نے پاکستان کے لئے دریائی پانی کے بہاؤ کو اپنی حکمت عملی کے تحت بہت کم کردیا ہے، بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کئی بار پاکستان کو آبی جارحیت کی دھمکیاں دے چکے ہیں، پاکستان کی طرف سے بگلیہار ڈیم بنانے پر اعتراضات کئے جاتے رہے ہیں،مگر بات نہیں بن سکی۔

مزید : رائے /اداریہ

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...